’را‘ کے ایجنٹ کا معاملہ اقوام متحدہ میں اٹھایا جائے گا: دفتر خارجہ


daftrayدفتر خارجہ کا کہنا ہے کہ ہندوستانی نیول افسر کل بھوشن یادیو کی گرفتاری کے بعد مزید ثبوت اور شواہد اکٹھے کیے جا رہے ہیں جبکہ پی فائیو اور یورپی یونین کے سفیروں کو اس حوالے سے بریف کیا گیا ہے اور تفصیلی دستاویزی ثبوتوں کے ساتھ یہ معاملہ اقوام متحدہ کے ساتھ اٹھایا جائے گا۔
اسلام آباد میں ہفتہ وار میڈیا بریفنگ کے دوران ترجمان دفتر خارجہ نفیس زکریا کا کہنا تھا کہ ہندوستانی خفیہ ایجنسی را کے حاضر سروس افسر کی گرفتاری نہایت اہم پیشرفت ہے اور پاکستان دنیا کی توجہ ہندوستانی سرکاری اداروں کی تخریبی کارروائیوں کی طرف دلانا چاہتا ہے۔
ان کا کہنا تھا کہ کل بھوشن نے اپنے بیان میں پاکستان میں تخریبی کارروائیوں کے لیے را سے مالی امداد حاصل کرنے کااعتراف کیا ہے اور ایسا ہی ایک بیان ماضی میں افغانستان میں چک ہیگل نے بھی دیا تھا۔
ترجمان دفتر خارجہ نے کہا کہ دنیا بھر نے را افسر کا اعترافی بیان دیکھا ہے.’کل بھوشن یادیو کی گرفتاری کے بعد ہندستانی ہائی کمشنر کو طلب کیا گیا تھا’۔
نفیس زکریا نے بتایا کہ ہندوستان نے کل بھوشن یادیو تک قونصلر رسائی کی درخواست کی ہے، جس کا جائزہ لیا جارہا ہے۔ترجمان دفتر خارجہ نے کہا کہ پاکستان میں ‘را’ کی سرگرمیوں کا معاملہ ایرانی صدر کے ساتھ اٹھایا گیا تھا۔
پاکستان کل بھوشن یادیو اور را کی پاکستان مخالف سرگرمیوں پر ایران سے رابطے میں ہے، ایرانی حکام نے ایرانی سرزمین پاکستان کے خلاف استعمال نہ ہونے کی یقین دہانی کرائی ہے۔
اس سے قبل پاکستان نے بلوچستان سے گرفتار ہندوستانی خفیہ ایجنسی ‘را’ کے ایجنٹ کل بھوشن یادیو کی سرگرمیوں سے متعلق معلومات کے حصول اور ان کے ساتھی ‘را’ ایجنٹ سب انسپکٹر راکیش عرف رضوان کی گرفتاری کے لیے ایران سے تحریری رابطہ کرلیا ہے۔
خیال رہے کہ پاکستانی سکیورٹی اداروں نے رواں ماہ کے آغاز میں ایران سے بلوچستان میں داخل ہونے والے ہندوستانی نیول افسر کل بھوشن یادیو کو گرفتار کیا تھا تاہم ان کی گرفتاری کو گزشتہ ہفتے اس وقت سامنے لایا گیا تھا جب ایرانی صدر پاکستان کے دو روزہ دورے پر اسلام آباد میں موجود تھے۔
دو روز قبل اسلام آباد میں فوج کے شعبہ تعلقات عامہ آئی ایس پی آر ڈائریکٹر جنرل لیفٹیننٹ جنرل عاصم باجوہ اور وفاقی وزیر اطلاعات پرویز رشید نے میڈیا بریفنگ کے دوران ہندوستانی را ایجنٹ کے اعترافی بیان کی ویڈیو جاری کی تھی۔
مذکورہ ویڈیو میں کل بھوشن یادیو نے ہندوستان کے حاضر سروس نیول افسر ہونے اعتراف کرتے ہوئے کہا تھا کہ وہ بلوچستان اور کراچی میں تخریب کاری کی سرگرمیوں میں ملوث رہے ہیںجبکہ ان کا کام بلوچ علیحدگی پسندوں کو رقم اور اسلحہ فراہم کرنا تھا۔


Comments

FB Login Required - comments