افغان طالبان کا حکومت کے خلاف بڑے حملوں کا اعلان


\"taliban\"افغان طالبان نے موسم بہار کے آمد کے ساتھ ہی امریکی حمایت یافتہ حکومت کے خلاف بڑے آپریشن کا اعلان کیا ہے۔
امریکی خبر رساں ایجنسی ’اے پی‘ کے مطابق میڈیا کو بھیجی گئی ای میل میں کہا گیا ہے کہ موسم بہار کے آپریشن کا نام سابق طالبان امیر ملا عمر کے اعزاز میں ’ع±مری آپریشن‘ کا نام دیا گیا ہے۔بیان میں کہا گیا ہے کہ امریکا کے خلاف جہاد مسلمانوں کا مذہبی فریضہ ہے۔
بیان کے مطابق رواں سال اس آپریشن میں دشمن کے حوصلے کو کمزور کرنے کے لیے تمام حربے استعمال کیے جائیں گے جبکہ جن علاقوں میں ہمارا کنٹرول ہے وہاں اچھی طرز حکومت کا طریقہ کار وضع کیا جائے گا تاکہ ہمارے لوگ پرامن اور معمول کی زندگی گزار سکیں۔
واضح رہے کہ افغانستان کے کئی دیہی اضلاع پر طالبان کا قبضہ ہے، جبکہ گزشتہ سال انہوں نے جنوبی شہر قندوز پر بھی تین روز تک قبضہ جمائے رکھا تھا۔
طالبان کے بیان میں مزید کہا گیا کہ اپنے اس آپریشن میں وہ عام شہریوں کو مارنے اور ان کے انفرااسٹرکچر کو تباہ کرنے سے بچنے کی کوشش کریں گے، جبکہ دشمن کی صفوں میں موجود اپنے ہم وطنوں کے ساتھ مذاکرات کے ذریعے انہیں اپنے ساتھ شامل کرنے کی کوشش کی جائے گی۔اقوام متحدہ کی رپورٹ کے مطابق گزشتہ سال افغانستان میں شدت پسندی کے واقعات میں 11 ہزار سے زائد شہری ہلاک و زخمی ہوئے تھے۔
یاد رہے کہ ملا عمر کی ہلاکت کی خبر منظر عام پر آنے کے بعد گزشتہ ایک سال سے افغان طالبان کی قیادت ملا عمر کے نائب ملا اختر منصور کر رہے ہیں۔
تاہم ا±ن کے امیر بننے کے بعد طالبان میں اختلافات پھوٹ پڑے اور وہ مختلف دھڑوں میں تقسیم ہوگئے، جن میں سے ایک بڑا دھڑا طالبان کا حامی اور دوسرا مخالف ہے۔طالبان کے کئی چھوٹے گروپس شام اور عراق کے بعد افغانستان میں قدم جمانے والی دہشت گرد تنظیم داعش میں بھی شامل ہوچکے ہیں۔

اسی بارے میں: ۔  حکومت اور تحریک انصاف کو 2 نومبر کو اسلام آباد بند کرنے سے روک دیا گیا

Comments

'ہم سب' کا کمنٹس سے متفق ہونا ضروری نہیں ہے۔ کمنٹ کرنے والا فرد اپنے الفاظ کا مکمل طور پر ذمہ دار ہے اور اس کے کمنٹس کا 'ہم سب' کی انتظامیہ سے کوئی تعلق نہیں ہے۔