جلیانوالہ باغ کی چیختی روحیں


inam-rana-3پنجاب ہمیشہ سے خطہ رہا ہے میلوں ٹھیلوں کا۔ اور بہار تو کسان کے لئے فصل پر کی محنت کی وصولی اور ممکنہ خوشحالی کے تصور میں ڈوبنے کا موسم ہے۔ سو اسی فصل اور سردی سے جان چھوٹنے کا جشن وہ بسنت اور وساکھی (بیساکھی) کے میلے کی صورت مناتا ہے۔ یہ جشن صرف اس کسان مرد کا ہی نہیں ہوتا جو سارا وقت موسم کی سختی اپنے بدن پر برداشت کر کے زمین کو اپنا پسینہ پلاتا رہا اور لہلاتی کھیتی کا انعام پایا۔ یہ جشن تو اس عورت کا بھی ہوتا ہے جو اس سارے وقت اس مرد کو اخلاقی قوت پہنچاتی رہی، اس کے لئے شا ویلے کی روٹی لے کر جاتی رہی، خود آدھی روٹی کھا کر اس کو اور بچوں کو پوری روٹی دیتی رہی؛ اب اس کے پوری روٹی کھانے کا موسم ہے، وہ زیور جو گروی رکھ کر بوائی کرائی تھی اسے چھڑانے کا ویلا ہے۔ اور رہے بچے، تو ہر موسم ہی ویسے تو ان کا میلہ ہے مگر جب ماں اور باپ کبھی اکٹھے خوش ہو رہے ہوں تو وہ وقت واقعی میلے کا ہے۔ اس روز، تیرہ اپریل سن انیس کو باغ جلیانوالہ میں اکٹھے ہوئے کئی ہزار بھی دراصل قریبی دیہاتوں سے شہر امبرسر (امرتسر) وساکھی کا جشن منانے ہی آئے تھے جسے سکھ دھرم نے ایک مذہبی تہوار بنا دیا تھا۔ مگر وہ نہیں جانتے تھے کہ جو فصلیں انھوں نے بوئیں تھیں، انھیں کاٹنا انھیں نصیب نہ ہو گا۔

jallianwala-bagh-signشہر کی فضا خراب تھی۔ جنگ عظیم اوّل کے کیے جھوٹے وعدے جب پورے نہ ہوے تو جنگ میں بہتر تعلقات کی امید لیے شریک پنجابیوں نے اسے وعدہ خلافی جانا۔ رولٹ ایکٹ نے پورے ہندوستان میں ردعمل پیدا کیا مگر پنجاب نے تو اسے دل پر لیا۔ گورنر ڈائر کو لگتا تھا کہ “ستاون کے غدر” جیسی ایک اور بغاوت فضا میں ہے اور ابھی کچھ ہی دن قبل پورا لاہور سڑکوں پہ تھا جب بیس ہزار لوگ انارکلی میں جمع تھے۔ گیارہ اپریل کو جب چند شرپسندوں نے ایک انگریز خاتون مارسیلا شیروڈ کی مبینہ آبروریزی کی تو کرنل ڈائر نے پوری آبادی سے بدلہ لینے کا فیصلہ کیا۔ دفعہ چتالیس (144) لگی اور اجتماع ممنوع پایا۔ ہر ہندوستانی کو اس گلی سے پیٹ کے بل گزرنا حکم قرار پایا کہ ڈائر کے بقول “ہندوستانی اپنی دیویوں کے سامنے یونہی رینگتے ہوے جاتے ہیں اور میں یہ بتانا چاہتا تھا کہ ایک انگریز خاتون کی حرمت دیوی کے برابر ہے”۔ شہر امرتسر میں جاری اس کشمکش سے وہ دیہاتی واقف نہ تھے جو وساکھی منانے گردوارہ گولڈن ٹیمپل آئے تھے۔ جب پولیس نے وساکھی کی عبادات وقت سے پہلے ہی ختم کرا دیں تو یہ سب باغ میں آ گئے جو تفریح کا مقام تھا۔ شاید وہ واقف بھی نہ تھے کہ ڈاکٹر بشیر اور دیگر کانگرسیوں کی ایما پر آج کچھ لوگ اسی باغ میں رولٹ ایکٹ اور سیف الدین کچلو کی گرفتاری کے خلاف اجلاس کریں گے۔ کرنل(عارضی برگیڈئیر) ڈائر جانتا تھا کہ پندرہ بیس ہزار کا یہ مجمع مکمل سیاسی نہیں۔ مری میں پیدا ہونے والا ڈائر بخوبی واقف تھا کہ بیساکھی کیا ہوتی ہے مگر وہ تو ہندوستان کو
capture_1428913465پیغام دینا چاہتا تھا، کہ راج قائم رہنے کے لئے ہے۔ اپنے پینسٹھ گورکھا اور پینتیس پٹھان اور بلوچی سپاہیوں کے ساتھ جب اس نے دس منٹ تک اس اجتماع پر گولیاں برسائیں تو افسوس ایک ہاتھ بھی گولی چلاتے ہوے نہ کانپا۔ چرچل کی الفاظ میں “گولیاں سیدھی چلیں، وہ دائیں بائیں تتر بتر ہوے تو گولیاں بھی دائیں بائیں چلیں، وہ لیٹ گئے تو گولیاں زمین کی طرف چلنے لگیں”۔ ایک کنواں تھا اس باغ میں، سنا ہے جان بچانے کو کودنے والوں سے اتنا بھر گیا کہ لوگ اس پر بھاگنے لگے۔ پندرہ سو کے قریب لوگ مارے گئے جن میں بچے بھی تھے، عورتیں بھی اور مرد تو تھے ہی۔ وہ بھی تھے جو احتجاج کو آئے تھے اور وہ بھی جو فقط بیساکھی کا میلہ دیکھنے آئے مگر خود تماشا بن گئے۔

ڈائر نے یہ ظلم۔ فقط دہشت کا پیغام پھیلانے کو کیا۔ ایک کو سزا دو تاکہ سب محتاط ہو جائیں۔ حیرت ہے کہ جس کے اپنے ملک میں آزادی اظہار کے لئے ہائیڈ پارک تھا وہی اس باغ میں اس حق کو برداشت نہ کر سکا۔ سن اکیس میں “گلوب” میں اس نے لکھا کہ آزادی اظہار ہدایت یافتہ لوگوں کے لئے ہے جو ہندوستانی نہیں ہیں۔ ہندوستان کے لئے ایک گیارہویں کمانڈمنٹ (موسوی حکم) کی ضرورت ہے، “تم احتجاج نہیں کرو گے”۔ چرچل کی تحریک پر کرنل ڈائر کو قبل از وقت ریٹائر کیا گیا مگر جب وہ برطانیہ پہنچا تو اس کو “عوام ” کی طرف آج کے مطابق دس bagh1لاکھ پاؤنڈ کا عطیہ دیا گیا اور خواتین کی طرف سے ایک تلوار اس خطاب کے ساتھ کہ ڈائر پنجاب کا نجات دہندہ ہے۔ مارننگ پوسٹ سے اسے “یورپی خواتین کی عصمت کا محافظ” لکھا۔ افسوس ایک قوم کا نجات دہندہ اکثر دوسری قوم کا قصائی نکلتا ہے۔ سن ستائیس میں یہ قصائی یوں مرا کہ نفسیاتی مریض بن چکا تھا۔ نائجل کولٹ نے “امرتسر کا قصائی” میں لکھا ہے کہ وہ باقی کی عمر اپنے اس عمل کو درست قرار دینے کی کوشش یوں کرتا رہا کہ جیسے خود کو مناتا رہا ہو۔ اک دوست سے اس نے کہا کہ چھ ماہ ہو گئے میں سو نہیں پاتا کہ سوتے کی وہ واقعہ دوبارہ بیتنے لگتا ہے۔ بستر مرگ پر اس نے کہا کہ بہت سے لوگ اسے درست یا غلط کہتے ہیں۔ میں صرف مرنا چاہتا ہوں تاکہ خدا مجھے بتائے کہ میں نے درست کیا یا غلط۔ افسوس ایسے لوگ اکثر مذہب میں تاویل ڈھونڈتے ہیں، سنا ہے جنرل ضیا بھی بہت نمازیں پڑھتا تھا۔ ڈائر سمرسٹ میں مرا اور مجھے یقین ہے کہ خدا کے حضور ان تمام روحوں پر کے آزادی اظہار پر کوئی قدغن نہ ہو گی جنھیں اس جرم میں اس نے مار ڈالا۔

1336780_Wallpaper2مگر کچھ روحیں آج بھی کنویں میں بند چیخ رہیں ہیں۔ سوال کرتی ہیں۔ وہ اس جنگ آزادی کے متوالوں کو روحیں ہیں جو پاکستان یا موجودہ ہندوستان کی نہیں بلکہ ہم سب کے ہندوستان کی آزادی کی جنگ لڑ رہے تھے۔ آج جب جلیانوالہ دنیا بھر میں استعارہ بن چکا، جب وہ ساری دنیا کا مشترکہ اثاثہ بن چکے تو وہ سوال کناں ہیں کہ امرتسر سے کچھ کلومیٹر دور لاہور والے اب ان کو یاد کیوں نہیں کرتے۔ کیوں وہ بھلا دئیے گئے صرف اس وجہ سے کہ امرتسر اب پاکستان میں نہیں۔  امرتسر بھلے ہندوستان میں ہو، جیلیانوالہ باغ تو ہر اس دل میں ہے جو آزادی کی قدر جانتا ہے۔


Comments

FB Login Required - comments

انعام رانا

انعام رانا لندن میں مقیم ایک ایسے وکیل ہیں جن پر یک دم یہ انکشاف ہوا کہ وہ لکھنا بھی جانتے ہیں۔ ان کی تحاریر زیادہ تر پادری کے سامنے اعترافات ہیں جنہیں کرنے کے بعد انعام رانا جنت کی امید لگائے بیٹھے ہیں۔ فیس بک پر ان سے رابطہ کے لئے: https://www.facebook.com/Inamranawriter/

inam-rana has 35 posts and counting.See all posts by inam-rana

13 thoughts on “جلیانوالہ باغ کی چیختی روحیں

  • 13-04-2016 at 7:30 pm
    Permalink

    آزادی ہند کی تاریخ کا ایک المناک باب، بہت عمدگی کے ساتھ اپنے احساسات و جذبات کا اظہار ہی نہیں کیا بلکہ اس موقع پر شہید ہونے والے بے گناہ معصوم افراد کی روحوں کو خوبصورت نذرانہ عقیدت پیش کیا گیا ہے، قابل تحسین تحریر ہے

    • 14-04-2016 at 4:39 pm
      Permalink

      رانا صاحب جی،
      ظلم کِتے وی ہووے، کوئی وی کرے، اوہ ظلم اے۔ بے شک جلیانوالے چ انگریز حاکم بڑی دھرت مکائی، بہت مندا کم ہویا۔
      پر پائی جان، ایس واقعے نوں لے کے اپنی قوم نوں مندا کہنا ٹھیک نئیں۔ کیوں جے واہگیوں پار وسن آلے ہندوؤاں سکھاں آپ جلیانوالے نوں بُھلا دتّا اے۔ ہاں نرندر مودی ورگے وڈے قاتل، تے گاندھی دے دشمناں دے چیلے،،، اپنا سیاسی الّو سدھا کرن لئی ایس قتل عام نوں ورتن تے ہور گل اے۔ عام طور تے بھارتی لوکائی نوں ایہدے نال کوئی دلچسپی نئیں۔ لوکی روزی روٹی دے ہور وی مشکل ہوندے جارئے شکنجے چ گرفتار نیں۔ نویں پیڑھی دے آئیڈیل ہن گورے، اوہناں دا کلچر تے اوہناں دی بولی اے۔ جد اوہناں آپ ایس واقعے نوں بھلا دتا اے تے کتھوں دا عالمی استعارہ تے کیہڑا عالمی اثاثہ؟
      موتیآں آلیو، ایس حالات چ تہاڈے ولوں اپنی قوم نوں کوسنے دینا کجھ جچیا نئیں۔
      اک دو ہور گلّاں۔
      وکیپیڈیا تے ادھوری معلومات دین آلے نے تہانوں ڈائر دے 90 فوجیاں چوں گورکھے، پٹھان تے بلوچی فوجیاں دی ٹھیک ٹھیک تعداد تے دس دتی پر سکھ رجمنٹ ولوں آئے ہندواں سکھاں دا ذکر گول کر گیا۔ ذرا اونھاں غداراں دے کالے کرتوتاں تے وی تھوڑا چانن پاؤ۔ غلام تے غلام ہوندا اے۔ غلامی کردیاں اونہوں دین مذہب سمیت بوہت کجھ بُھلانا پیندا اے، جیویں میرے دیس پنجاب دے شینہہ جوان مسلمان فوجیآں نے ترکاں، عرباں تے ہور مسلمان قوماں دے خلاف انگریزاں ولوں لڑدیآں بُھلا دتا سی۔
      اک ہور گل ایہہ دسو کہ ڈائر دے ایس عظیم کارنامے دے دو چار ہفتیآں بعد دربار صاحب امرتسر دے وڈے پیاریآں نے اونھوں اعزازی سکھ دے لافانی عزت کیوں دتّی سی؟
      تھلے ویکھو بھارت دیش چ جلیانوالے دی یاد بُھلائی جان دا اک تازہ تے مضبوط حوالہ اوتھوں دے وڈیرے دیش بھگت پتر کار کلدیپ نائر دے قلم توں۔ کلدیپ سیالکوٹی اے تے بٹوارے ویلے اودھدے پریوار نوں سب کچھ چھڈ کے اودھر جاناں پیا سی۔ لکھاں مسلماناں دی طراں جیہڑے لُٹ پٹ کے اودھروں ایدھر آئے کیوں جے ہندوواں سکھاں آپ دیس پنجاب،،، نالے بنگال،،، دی دھرتی ماتا دی ونڈ دی اِچھا کیتی سی۔
      Have We Forgotten Jallianwala Bagh?
      Kuldip Nayar
      Sunday, August 30,2015
      I am disappointed with my countrymen. The 69th anniversary of independence was celebrated with the usual enthusiasm. The national flags were hoisted even in private homes. But there was no mention of the atrocities the British committed during their 200-year-long rule. Nor did I find any recall of Jallianwalla Bagh where the British-led soldiers killed hundreds of peaceful protestors after sealing all the exits of the Bagh. 

  • 13-04-2016 at 7:50 pm
    Permalink

    رانا انعام بھائی بہت ہی خوبصورت انداز میں آپ نے اس تاریخی بربریت کا واقعہ قلمبند کیا ہے۔

  • 13-04-2016 at 7:57 pm
    Permalink

    بہت عمدہ جناب، کمال ضبط کے ساتھ شدتِ غم بیان کیا ہے، خدا مزید توفیق کی ارزانی کرے۔

  • 13-04-2016 at 9:25 pm
    Permalink

    thanks a lot sirs

  • 13-04-2016 at 11:41 pm
    Permalink

    Last lines are heart rendering, we have shamefully neglected and negated many things which were our common legacy

  • 14-04-2016 at 6:26 am
    Permalink

    shaandaar!

  • 14-04-2016 at 12:34 pm
    Permalink

    آزادی گورے سے لی نفرت انڈیا سے کرتے هیں

  • 14-04-2016 at 5:31 pm
    Permalink

    وں مندا کہنا ٹھیک نئیں۔ کیوں جے واہگیوں پار وسن آلے ہندوؤاں سکھاں آپ جلیانوالے نوں بُھلا دتّا اے۔ ہاں نرندر مودی ورگے وڈے قاتل، تے گاندھی دے دشمناں دے چیلے،،، اپنا سیاسی الّو سدھا کرن لئی ایس قتل عام نوں ورتن تے ہور گل اے۔ عام طور تے بھارتی لوکائی نوں ایہدے نال کوئی دلچسپی نئیں۔ لوکی روزی روٹی دے ہور وی مشکل ہوندے جارئے شکنجے چ گرفتار نیں۔ نویں پیڑھی دے آئیڈیل ہن گورے، اوہناں دا کلچر تے اوہناں دی بولی اے۔ جد اوہناں آپ ایس واقعے نوں بھلا دتا اے تے کتھوں دا عالمی استعارہ تے کیہڑا عالمی اثاثہ؟
    موتیآں آلیو، ایس حالات چ تہاڈے ولوں اپنی قوم نوں کوسنے دینا کجھ جچیا نئیں۔
    اک دو ہور گلّاں۔
    وکیپیڈیا تے ادھوری معلومات دین آلے نے تہانوں ڈائر دے 90 فوجیاں چوں گورکھے، پٹھان تے بلوچی فوجیاں دی ٹھیک ٹھیک تعداد تے دس دتی پر سکھ رجمنٹ ولوں آئے ہندواں سکھاں دا ذکر گول کر گیا۔ ذرا اونھاں غداراں دے کالے کرتوتاں تے وی تھوڑا چانن پاؤ۔ غلام تے غلام ہوندا اے۔ غلامی کردیاں اونہوں دین مذہب سمیت بوہت کجھ بُھلانا پیندا اے، جیویں میرے دیس پنجاب دے شینہہ جوان مسلمان فوجیآں نے ترکاں، عرباں تے ہور مسلمان قوماں دے خلاف انگریزاں ولوں لڑدیآں بُھلا دتا سی۔
    اک ہور گل ایہہ دسو کہ ڈائر دے ایس عظیم کارنامے دے دو چار ہفتیآں بعد دربار صاحب امرتسر دے وڈے پیاریآں نے اونھوں اعزازی سکھ دے لافانی عزت کیوں دتّی سی؟
    تھلے ویکھو بھارت دیش چ جلیانوالے دی یاد بُھلائی جان دا اک تازہ تے مضبوط حوالہ اوتھوں دے وڈیرے دیش بھگت پتر کار کلدیپ نائر دے قلم توں۔ کلدیپ سیالکوٹی اے تے بٹوارے ویلے اودھدے پریوار نوں سب کچھ چھڈ کے اودھر جاناں پیا سی۔ لکھاں مسلماناں دی طراں جیہڑے لُٹ پٹ کے اودھروں ایدھر آئے کیوں جے ہندوواں سکھاں آپ دیس پنجاب،،، نالے بنگال،،، دی دھرتی ماتا دی ونڈ دی اِچھا کیتی سی۔
    Have We Forgotten Jallianwala Bagh?
    Kuldip Nayar
    Sunday, August 30,2015
    I am disappointed with my countrymen. The 69th anniversary of independence was celebrated with the usual enthusiasm. The national flags were hoisted even in private homes. But there was no mention of the atrocities the British committed during their 200-year-long rule. Nor did I find any recall of Jallianwalla Bagh where the British-led soldiers killed hundreds of peaceful protestors after sealing all the exits of the Bagh.

  • 14-04-2016 at 6:01 pm
    Permalink

    Subah kazib may Ranj tha kitna Munir

    Jab Rail ki seti baji tu Dil Lahu sy bahar gya

  • 14-04-2016 at 11:45 pm
    Permalink

    ابھی پڑھا ہے جناب۔ کیا خوب لکھا ہے۔ جلیانوالہ باغ کا سانحہ مذہب یا سرحد میں قید نہیں ہو سکتا۔ مرنے والے صرف انسان تھا۔ یہ سانحہ بھی ایک ہولوکاسٹ تھا، جس کو بھلا دیا گیا۔ لیکن افسوس ایسے سانحے اب بھی وقتاً فوقتاً ہو رہے ہیں۔ کشمیر ہو یا افغانستان، بوسنیا ہو یا چیچنیا، تاجکستان ہو یا کردستان ، شام ہو یا یمن ہر جگہ معصوم انسان مر رہے ہیں اور بے تحاشا مر رہے ہیں۔ اور مرنے والوں کے جو لواحقین بچ رہے ہیں اُن کا بھی صرف شمار زندوں میں ہوتا ہے ورنہ زندگی وہ مُردوں سے بھی بدتر گزار رہے ہیں۔ شام کے مہاجرین کے ساتھ جو کچھ ہو رہا ہے اللہ معاف فرمائے شاید یہ ہجرت 1947ء کے بعد سب سب زیادہ جان لیوا ہجرت ہے۔ مسلمان ہر جگہ پِس رہے ہیں، مر رہے ہیں لیکن افسوس کہ جن کے ہاتھ میں طاقت ہے وہ اُس کے نشے میں دُھت ہیں۔ معلوم نہیں اللہ کی کیا مصلحت ہے مسلمانوں کی اس بربادی میں۔

  • 15-04-2016 at 8:13 pm
    Permalink

    ہندوستان کے مزہبی لائنز پر ٹوٹنے سے اس کی نسلوں‌پر نہایت منفی اثرات مرتب ہوئے ہیں۔ ساؤتھ کوریا، نارتھ کوریا، ٹوٹسی اور ہوتھو کی طرح جنوب ایشائی بھی سب ایک ہی لوگ ہیں‌۔ یہ بر صغیر پاک و ہند کی جین کی سٹڈی سے ثابت ہے کہ 98% لوگ خونی رشتہ دار ہیں۔ لیکن تقسیم اور فاصلہ بڑھتا گیا۔ لوگ اپنے ہی علاقائی ماضی سے کٹ گئے اور تاریخ اور اس کے صدمے کو انسانیت کے نقطہء نظر سے نہیں‌بلکہ اپنی اور پرائی کرکے پڑھنے لگے۔ اس سے بہت بڑا نقصان ہوگا۔ تاریخ خود کو دوبارہ دہرائے گی۔

  • Pingback: صاحب ضمیر « جریدہ | Jaridah

Comments are closed.