قوم کا عمران خان سے خطاب


ammar masoodمیرے عمران خان …. سنو …. سنو…. میری بات غور سے سنو…. اس قوم نے آپ سے بہت پیار کیا ہے۔ بہت محبت کی ہے آپ سے۔ آپ جب کرکٹ کھیلتے تھے تو ایک بال پر پوری قوم کے دل دھڑکتے تھے۔ ایک، ایک شاٹ پر دعائیں ہوتی تھیں۔ آپ کی تصویروں کے پوسٹر بلیک میں بکتے تھے۔ میگزینز میں ٓپ کے انٹرویو لاکھوں کی تعداد میں چھپتے تھے۔ آپ نے ورلڈ کپ جیتا، پوری قوم نے اس فتح کا سارا کریڈٹ آپ کو دیا۔ باقی چودہ کھلاڑیوں کا نام تک آج تک کسی کی زبان پر نہیں آتا ہے۔ آپ ہی ہمارے ہیرو، ہمارے فاتح قرار پائے۔ آپ نے پھر کینسر ہسپتال کی مہم کا آغاز کیا۔ ہماری ماﺅں، بہنوں نے اپنے زیور بیچ ڈالے۔ بچوں نے اپنی جیب خر چ چندے میں دے ڈالی۔ لوگوں نے اپنی زمینیں آپ کے نام کر دیں۔ کینسر ہسپتال اس قوم نے بنایا اور اس کا سارا کریڈٹ آپ کو دیا۔ آپ کی محبت میں اپنا سب کچھ وار دیا۔ پھر آپ سیاست میں آگئے۔ لوگوں کا ایک بار پھر عمران خان کی دھن لگ گئی۔ ایک نیا جذبہ، نئی لگن پیدا ہو گئی۔ عورت، مرد، بچے، بوڑھے، جوان سب نے آپ کی آواز پر لبیک کہا اور دو ہزار تیرہ کا الیکشن آ گیا۔ وہ جماعت جو کبھی ایک سیٹ سے زیادہ نہ جیت سکی تھی اس قوم کی محبت نے اس جماعت کو ایک بہت بڑی جماعت بنا دیا۔ اسمبلی میں کمال نمائندگی دی۔ اس ملک کے غیور عوام نے سب سے زرخیز صوبہ آپ کی جماعت کو جتوا دیا۔ اب لوگوں کو امید ہوئی کہ وہ صوبہ بقعہ نور بن جائے گا۔ ملک میں درست اپوزیشن کا وجود سامنے آئے گا۔ مسائل کی نشاندہی ہو گی۔ لوگوں کی مشکلات کا حل سامنے آئے گا۔ اور دو ہزار اٹھارہ کے الیکشن میں یہ پورا ملک آپ کے نام ہو جائے گا۔ لیکن خان صاحب آپ نے اس قوم کو اس مرحلے پر مایوس کیا۔

میرے عمران خان …. سنو…. سنو…. میری بات غور سے سنو…. سیاست کرکٹ کا میدان نہیں کہ اپنی مرضی کی فیلڈ کھڑی کی اور بیٹسمین کو باونسر سے ڈرا دھمکا کر ایک ہی یارکر سے اس کا ٹخنہ تو ڑ دیا۔ سیاست چندہ جمع کرنے کی مہم نہیں کہ ایک آواز لگائی اور اور سب نے اپنے گھروں سے جمع پونجی اٹھائے اپ کے در پر حاضر ہو گئے۔ سیاست صرف جلسہ نہیں کہ چند جوشیلے نعرے لگائے اور اپوزیشن کا کردار ادا ہو گیا۔ سیاست صرف دھرنا نہیں کہ ایک ہی بات پر مصر ہو گئے اور ایک سو چھبیس دن اسی کو دھراتے رہے۔ سیاست کوئی پریس کانفرنس نہیں کہ جس میں جوش خطابت میں بلند بانگ دعوے کر لیئے، رپورٹر سے ڈانٹ پھٹکار کر لی۔ سیاست کوئی شادی نہیں کہ اچانک آج کر لی اور کل اچانک ہی ناطہ توڑ لیا۔ سیاست کسی ہسپتال کاکوئی ہنگامی دورہ نہیں کہ مریضوں کی دلجوئی کی اور عوام کی جانب ہاتھ ہلاتے، نعروں کی گونج میں واپس لوٹ آئے۔ سیاست کوئی سانحہ نہیں کہ جس کے لیئے صرف ایک تعزیتی بیان سے کام چل جائے گا۔ سیاست کوئی دھمکی نہیں کہ جس سے لوگ ڈرجائیں گے۔ سیاست کوئی تماشہ نہیں کہ لوگ تالیاں بجاتے رہیں گے۔ خوشنودی کے نعرے لگاتے رہیں گے۔ بے وجہ آپ کی کارکردگی کو سراہتے رہیں گے۔ آپ کی شخصیت کو بڑا بناتے رہیں گے۔ یقین کریں گے ہر اس بات پر جو آپ فرماتے رہیں گے۔

میرے عمران خان …. سنو…. سنو…. میری بات غور سے سنو…. اس ملک کے عوام کے مسائل آپ کی لاابالی طبیعت کے مقابلے میں بہت گھمبیر ہیں۔ غربت دہائیوں سے یہاں رقص کر رہی ہے۔ مفلسی کا عوام پر مدتوں سے راج ہے۔ لاقانونیت اس خطے کاخاصہ ہے۔ بے انصافی ہمیں ورثے میں ملی ہے۔ تھانہ کچہری ہمارے لیئے دہشت کا سبب ہیں ۔ بد امنی ہماری قسمت بن گئی ہے۔ دہشت گردی کا عفریت ہمیں چاٹ رہا ہے۔ تعلیم کی زبوں حالی ہم پر ہنس رہی ہے۔ کرپشن ہمیں کھا گئی ہے۔ انصاف ہمارے لیئے خواب بن گیا ہے۔ روزگار کے دروازے بند ہو گئے ہیں۔ دولت چند ہاتھوں میں ہی تھم گئی ہے۔ صحت عامہ کے معاملات ابتر ہو گئے ہیں۔ سرکاری ہسپتال، بیماریوں کی آماہ جگاہ بن گئی ہیں۔ ملکی ترقی خواب ہو گئی ہے۔ پکی سڑک اور پکا سکول بہت سے علاقوں میں سوچا بھی نہیں جا سکتا۔ عزت کی روٹی کا حصول ناممکن ہوتا جا رہا ہے۔ لڑکیوں کی تعلیم کے راستے میں اب بھی بہت رکاوٹیں کھڑی ہیں۔ اقلیتوں کو اب بھی ان کا حق نہیں دیا جا رہا۔ بہت سے علاقوں میں خواتین کو اب بھی ووٹ ڈالنے کی اجازت نہیں ہے۔ اختیارات کی منتقلی ضلعی حکومتوں کو اب بھی ممکن نظر نہیں آ رہی۔ عوامی نمائندے اب بھی عوامی خدمت سے بہت دور ہیں۔ خان صاحب اس ملک کے عوام کے مسائل بہت گھمبیر ہیں۔

میرے عمران خان …. سنو…. سنو…. میری بات غور سے سنو…. دکھ اس قوم کو اس بات کا نہیں کہ آپ نے عوامی خواہشات کی ترجمانی نہیں کی ۔ افسوس تو اس بات کا ہے کہ آپ کو اپنی کوتاہیوں کا احساس تک نہیں۔ سانحہ یہ نہیں کہ آپ نے عوام کے خوابوں کو توڑ کر چکنا چور کر دیا المیہ تو یہ کہ ان کرچیوں پر پاوں رکھ کر آپ گزرتے ہی رہے اور اپ کو ان کے تلے دبی خواہشوں کا ملال تک نہ ہوا۔ جمہوریت صرف وزیر اعظم بننا نہیں ہے۔ قوم سے خطاب کرنا نہیں ہے۔ واسکٹ کے ساتھ سفید شلورقمیص زیب تن کرنا نہیں ہے۔ عوام کی خدمت بھی کرنا پڑتی ہے۔ مسائل کو حل کرنا پڑتا ہے۔ ان کو سننا پڑتا ہے۔ تحمل سے فیصلے کرنے پڑتے ہیں۔ آپ سے مایوس عوام صرف خیبر پختوں خواہ میں نہیں یہ لوگ پورے ملک میں پھیلے ہوئے ہیں۔ کراچی میں تحریک انصاف کے ساتھ جو ہو رہا اور جو سلوک تحریک انصاف کی مقامی قیادت وہاں کے لوگوں کے ساتھ کر رہی اس کا خمیازہ آپ کو دہ ہزار اٹھارہ سے بہت پہلے بھگتنا پڑ رہا ہے۔ پنجاب میں جن جن لوگوں کو آپ ٹکٹ تھما رہے ہیں وہ آپ کے اس منشور کی نفی کرتے ہیں جس کی بنیاد پر آپ نے ووٹ لیئے تھے۔ آپ کی پارٹی شکست و ریخت کا شکار ہے۔ گروپ بن رہے ہیں۔ محلاتی سازشیں ہو رہی ہیں۔ پارٹی کا اپنا الیکشن ایک طعنہ بن گیا ہے۔ جن لوگوں پر انٹرا پارٹی میں دھونس اور دھاندلی کا الزام لگا وہی لوگ اب ٹکٹیں تقسیم کر رہے ہیں۔ آپ کو سمجھنا ہو گا کہ خیبر پختون خواہ میں کیا ہو رہا ہے۔ آپ کو وزیر اعظم کی بتی کے پیچھے لگا کر کرپشن کے کون کون سے کھیل کھیلے جا رہے ہیں۔ منصفانہ سوچ کے لوگ آپ کو چھوڑتے جا رہے ہیں۔ حق بات کرنے والوں کی جگہ اب خوشامدی ٹولہ لے رہا ہے۔ ٹمبر مافیا آپ کو ہر جگہ ایک ارب درختوں کا نعرہ لگانے کو کہ رہا ہے۔ نیب کا سربراہ کے پی کے میں دستبردار ہو چکا ہے۔ انصاف کی امید مٹی میں مل چکی ہے

میرے عمران خان …. سنو…. سنو…. میری بات غور سے سنو….

اس قوم نے آپ سے بہت پیار کیا ہے۔ اب اس قوم کے لیئے کام کریں۔ خیبر پختو ن خواہ کو بہتر بنائیں۔ عوام کی امنگوں پر پورا اتریں۔ اور اگر یہ سب ممکن نہیں تو بس اس قوم کی ایک درخواست ہے۔ کہ فرضی وزیر اعظم بن کر اپنا مذاق نہ بنوائیں ۔ اپنے چاہنے والوں کا تمسخر نہ اڑوائیں۔


Comments

FB Login Required - comments

عمار مسعود

عمار مسعود ۔ میڈیا کنسلٹنٹ ۔الیکٹرانک میڈیا اور پرنٹ میڈیا کے ہر شعبے سےتعلق ۔ پہلے افسانہ لکھا اور پھر کالم کی طرف ا گئے۔ مزاح ایسا سرشت میں ہے کہ اپنی تحریر کو خود ہی سنجیدگی سے نہیں لیتے۔ مختلف ٹی وی چینلز پر میزبانی بھی کر چکے ہیں۔ کبھی کبھار ملنے پر دلچسپ آدمی ہیں۔

ammar has 42 posts and counting.See all posts by ammar