وزیر داخلہ احسن اقبال کا آپریشن کامیاب: پیٹ سے گولی نکال لی گئی


تازہ ترین اطلاعات کے مطابق وزیر داخلہ احسن اقبال کو لاہور کے سروسز اسپتال میں منتقل کر دیا گیا ہے جہاں کامیاب آپریشن کے بعد ان کے پیٹ سے گولی نکال لی گئی ہے۔

یہ واقعہ نارووال کے علاقے قصبہ کنجروڑ میں پیش آیا جہاں وزیر داخلہ احسن اقبال ایک کارنر میٹنگ میں شریک تھے۔ ایم پی اے رانا منان کے ڈیرے پر کارنر میٹنگ کا انعقاد کیا گیا تھا، کارنر میٹنگ کے اختتام پر احسن اقبال جب ڈیرے سے باہر آرہے تھے کہ اس دوران مجمع میں شریک ایک مسلح شخص نے ان پر فائرنگ کردی ایک گولی احسن اقبال کے بازو میں لگی جو کہنی کو چیرتے ہوئے پیٹ میں گھس گئی۔

احسن اقبال کو زخمی حالت میں فوری طور پر ڈسٹرکٹ ہیڈ کوارٹر اسپتال لایا گیا بعد ازاں انہیں وزیر اعلیٰ پنجاب کی ہدایت پر ہیلی کاپٹر کے ذریعے لاہور کے سروسز اسپتال منتقل کردیا گیا۔ سروسز اسپتال کے ڈاکٹروں کے مطابق احسن اقبال کے دائیں بازو کی ہڈی فریکچر ہوئی، ایک گولی دائیں کہنی پر لگی جو آر پار ہوتے ہوئے پیٹ میں جا گھسی اسے آپریشن کے ذریعے نکال لیا گیا ہے اب مریض کی حالت تسلی بخش ہے۔

اسپتال منتقل ہونے کے بعد احسن اقبال نے ٹوئٹ کیا جس میں انہوں نے کہا ہے کہ اللہ تعالیٰ بہت مہربان ہے میں اپنے تمام دوستوں اور خیر خواہوں سے درخواست کرتا ہوں کہ مجھے اپنی خاص دعاؤں میں یاد رکھیں۔

پولیس نے دعویٰ کیا ہے کہ فائرنگ کرنے والے شخص کو گرفتار کرکے نامعلوم مقام پر منتقل کردیا گیا ہے، ملزم کا نام عابد حسین ہے اور اس کی عمر 21 سال ہے۔ ڈی پی او کے مطابق گولی احسن اقبال کے دائیں بازو میں لگی، ملزم نے 30 بور کے پستول سے فائرنگ کی جسے تحویل میں کرلیا گیا ہے۔ ملزم کا تعلق اسی گاؤں کنجروڑ سے ہے، پولیس تحقیقات کررہی ہے کہ ملزم کا تعلق کس گروہ یا کس سیاسی جماعت ہے، احسن اقبال کی حالت خطرے سے باہر ہے۔ وہ ہوش میں ہیں اور لوگوں سے باتیں کررہے ہیں، پولیس نے بتایا ہے احسن اقبال پر کارنر میٹنگ سے باہر نکلتے ہوئے حملہ ہوا۔ حملہ آور میٹنگ میں موجود نہیں تھا بلکہ باہر کھڑا تھا۔

image_pdfimage_print

Comments - User is solely responsible for his/her words

اگر آپ یہ سمجھتے ہیں کہ ”ہم سب“ ایک مثبت سوچ کو فروغ دے کر ایک بہتر پاکستان کی تشکیل میں مدد دے رہا ہے تو ہمارا ساتھ دیں۔ سپورٹ کے لئے اس لنک پر کلک کریں