کنور مہندر سنگھ بیدی، زندگی کے میلے اور محبت کا جادُو


حدِ نظر تک سبز لان کی وسعتیں اور جابجا رنگارنگ سٹالز۔ ایک میلے کا سا منظر۔ میں ان دنوں برٹش کونسل کے سکالرشپ پر یونیورسٹی آف مانچسٹر میں پڑھ رہا تھا اور یونیورسٹی آف لنکاسٹر ایک انٹرنیشنل کانفرنس میں شرکت کے لیے آیا تھا۔ مختلف سیشنز کے درمیان وقفے میں کانفرنس کے شرکا کتابوں کے اس میلے میں گھومتے رہتے۔ اسی میلے میں میری ملاقات اُرملا سے ہوئی۔ شاید یہی نام تھا اس کا یا شاید اس سے ملتاجلتا کوئی نام۔ باتوں باتوں میں اس نے بتایا اُس کا تعلق اردو کے معروف ادیب اور شاعر کنور مہندر سنگھ بیدی کے خاندان سے ہے۔ میںنے کہا ”واقعی؟‘‘۔ وہ بولی: کیا آپ ان کے نام سے واقف ہیں؟ میں نے اسے بتایا کہ اردو ادب سے محبت کرنے والا ہرشخص ان کے نام سے واقف ہے۔ اس کی آنکھوں میں تفاخرکی ایک کرن جگمائی‘ پھر وہ اداس لہجے میں بولی: کاش میں اردو پڑھنا جانتی اور ان کی تحریروں کو پڑھ سکتی۔ یہ میری اس سے پہلی اور آخری ملاقات تھی۔

اس واقعے کو گزرے تین دہائیاں بیت گئیں۔ ایک مدت بعد آج اسلام آباد میں یونیورسٹی کا لٹریچر کارنیوال دیکھا۔ سبز لان کی وسعتوں میں رنگا رنگ سٹالز اور شرکا کی چہل پہل دیکھ کر مجھے یوں لگا جیسے یہ منظر پہلے بھی دیکھا ہے۔ کہاں دیکھا تھا اس طرح کا منظر؟ بعض اوقات کوشش کے باوجود بیتے منظروں سے دھند نہیں چھٹتی۔ لٹریچر کارنیوال میں پاکستان کے معروف ادیب آئے ہوئے تھے۔ بالکل میلے کا سا سماں تھا۔ اسی میلے میں کتابوں کا رسیا رئوف کلاسرا بھی تھا۔ کتابوں کی کشش اتنی تھی کہ وہ صبح کے چار پانچ بجے سونے والا اور سہ پہر کو بیدار ہونے والا آج جلدی جاگ گیا تھا۔ کتابوں کے مختلف سٹالز کا مشاہدہ کرتے اور کتابیں خریدتے ہوئے آخر ہم ایک بک سٹال پر رکے اور وہاں سے ڈھیر ساری کتابیں خریدیں۔ وہیں سے رئوف نے ایک ضخیم کتاب اٹھائی‘ اس پر کچھ لکھا اور میری طرف بڑھا دی۔ میں نے دیکھا‘ خوبصورت لکھائی میں میرا نام لکھا تھا ”شاہد صدیقی کیلئے جن سے کسی پرانے جنم کا رشتہ محسوس ہوتا ہے‘‘ کتاب کے تحفے سے بڑھ کر کوئی تحفہ نہیں۔ میں نے جلدی سے کتاب بند کرکے اس کا سرورق دیکھا۔ یہ کنور مہندر سنگھ بیدی کی خود نوشت”یادوں کا جشن‘‘ تھی‘ جسے گگن شاہد نے بڑے اہتمام سے اپنے مکتبہ سے شائع کیا تھا۔ کنورمہندر سنگھ بیدی کے نام سے دور کہیں گھنٹیاں سی بج اٹھیں‘ جیسے منظرکا دھندلا پن ختم ہو گیا ہو۔ اب مجھے معلوم ہوا یہ منظر مجھے مانوس سا کیوں لگ رہا تھا۔ لنکاسٹر کانفرنس اور، کنور مہندر سنگھ بیدی کے خاندان کی اُرملا۔

اس روز میں گھر آیا تو بیدی کی یادوں کے جشن میں کھو گیا۔ یہ ایک ایسے شخص کی کہانی ہے جو منٹگمری (ساہیوال) میں پیدا ہوا۔ ایچی سن اور گورنمنٹ کالج لاہور سے تعلیم حاصل کی اور متحدہ ہندوستان کے کئی شہروں میں اعلیٰ عہدوں پر فائز رہا۔ تقسیم کے بعد وہ ہندوستان چلا گیا لیکن پاکستان کی محبت کبھی دل سے نہ نکال سکا۔ بیدی کی کتاب کیا ہے ایک طلسمِ ہوشرُبا ہے جسے پڑھتے ہوئے وقت کا احساس نہیں رہتا۔ جب میں نے کتاب ختم کی تو صبح کے آثار نمودار ہو رہے تھے۔ مجھے کتاب پڑھتے ہوئے جابجا احساس ہوا حسنِ اخلاق، محبت اور شفقت سے کیسی کیسی منزلیں سر ہو جاتی ہیں۔ میری زندگی کا بڑا حصہ ٹیچر ایجوکیٹر کے طور پر گزرا۔ ایک سوال جس کا اکثر مجھے سامنا کرنا پڑتا ”اچھے استاد کی خصوصیات کیا ہوتی ہیں؟‘‘ میرا خیال ہے کہ اچھے استاد کے لیے علم اور طریقۂ تدریس کے ساتھ اس کا رویہ اس کی مہربانی، اس کا شاگردوں کی بات سننا، انہیں اہمیت دینا ان کی عزت کرنا بھی بہت اہم ہے۔ یہ ساری باتیں مجھے پھر سے یاد آئیں جب میں نے مہندر سنگھ بیدی کے بچپن کا یہ قصہ پڑھا۔ آئیے بیدی کی زبانی سنتے ہیں:

”گورنمنٹ ہائی سکول منٹگمری میں میری تعلیم کا آغاز ہوا۔ پانچویں جماعت تک میں نے وہیں تعلیم حاصل کی لیکن میری یہ ابتدائی تعلیم کا زمانہ میری زندگی پر گہرا نقش چھوڑ گیا۔ اردو زبان سے مجھے جو محبت ہوئی اور تادم حیات رہے گی اس کی ابتدا بھی یہیں سے ہوئی۔ بعض اوقات معمولی سے واقعات بھی زندگی کی تربیت پر اثرانداز ہوتے ہیں۔ اسی سکول میں ایک ماسٹر تھے جن کا نام بشمبرداس تھا۔ یہ ہمیں حساب پڑھاتے تھے۔ مولوی عبدالمجید صاحب بھی اسی سکول میں ٹیچر تھے‘ جو ہمیں اردو پڑھاتے تھے۔ دونوں کی عادت اور برتائو میں زمین آسمان کافرق تھا۔ ماسٹر بشمبرداس تو خود دھوپ سینکا کرتے تھے مگران کاایک اپاہج لڑکا ان کی جگہ ہمیں پہاڑے رٹایا کرتا تھا۔ اس کے منہ میں سے ہروقت رالیں ٹپکتی رہتی تھیں اوربعض اوقات ایسی حرکتیں کرتاتھا کہ لڑکوں کوبے ساختہ ہنسی آجاتی تھی۔ اس پروہ بگڑ کراپنے والدسے شکایت کرتاتھا اوروہ بغیر پوچھ توچھ کئے لڑکوں کو بید سے پیٹنا شروع کردیتے تھے۔ ادھر مولوی عبدالمجید صاحب اس قدر شریف اورمشفق تھے کہ بچوں کوبڑے پیارسے پڑھاتے تھے۔ سبق کوموثربنانے کے لیے اچھی اچھی مثالیں دیتے اورکہانیاں سنایاکرتے تھے۔ اپنے شاگردوں کااس قدر خیال کیاکرتے کہ اگرکوئی لڑکا سکول نہیں آتاتو اگلے روز اس کے گھرجاکرخیریت دریافت کیاکرتے۔ ان کی والہانہ شفقتوں کی وجہ سے لڑکے ان سے محبت کیا کرتے تھے۔ مجھے بھی ان سے بے پناہ عقیدت تھی اورعقیدت کی وجہ سے اردوزبان سے بھی محبت ہوگئی‘‘۔

بیدی اسی طرح کا تجربہ ایچی سن کالج کے دو استادوں کے حوالے سے لکھتے ہیں۔ دیکھئے کیسے ایک استاد اپنے شفقت اورمحبت سے اپنے شاگردوں کے دلوں میں گھرکرجاتا ہے ”میری طالب علمی کے زمانے میں کیلی صاحب چیفس کالج کے پرنسپل تھے اور آر جی رائٹ نائب پرنسل۔ دونوں کی عادات اوررویے میں زمین آسمان کافرق تھا۔ کیلی صاحب نہایت شریف، ملنسار، سادہ مزاج اور خدا ترس آدمی تھے۔ رائٹ صاحب خودپسند، خودبیں،تنک مزاج اور قدامت پسند تھے۔ مسٹرکیلی ہمیشہ سائیکل پرگھوما کرتے تھے۔ ان کاکتا روری بھی ساتھ بھاگاکرتاتھا۔ جب وہ پڑھاتے تھے تو بھی کلاس روم میں ساتھ ہی آتاتھا۔ مسزکیلی بھی ایک نہایت ہی شریف خاتون تھیں جوطلباء کوبالکل اپنی اولاد کی طرح سمجھتی تھیں۔ اس کی ایک وجہ یہ بھی ہوسکتی ہے کہ وہ خود بے اولادتھیں۔اگرکوئی لڑکابیمار ہوتاتو اس کی دیکھ بھال کرتی تھیں بلکہ ایسابھی ہوا کہ وہ بیمار لڑکے کواپنی کوٹھی میں لے گئیں تاکہ ہروقت اس کی تیمارداری کریں۔ طلبا بھی ان سے بے حدمحبت کرتے‘‘۔

محبت کے کرداروں کا ذکرہوتو کیسے ممکن ہے ماں کا ذکر نہ آئے ماں جو دنیا میں بے لوث محبت کا استعارہ ہے۔ بیدی صاحب لکھتے ہیں کہ ایک روز وہ اپنی کوٹھی میں حسبِ معمول سائلوں سے ملاقات کر رہے تھے کہ ایک ضعیف عورت آئی اور دہاڑیں مار مار کر رونے لگی۔ پوچھنے پراس نے بتایا کہ اس کے بیٹے نے بہو کے ورغلانے پر اسے مارا ہے۔ بیدی صاحب نے ڈاکٹر کو بلا کر اُس کی مرہم پٹی کرائی۔ وہ یہ کہتی تھی کہ جس طرح مجھے پیٹا گیا ہے اُسی طرح جب تک اس کے بیٹے کی کھال نہیں اُدھیڑی جائے گی اسے چین نہیں آئے گا۔ اس سے آگے کا احوال بیدی صاحب کی زبانی سنیے ”میں نے تھانیدار کو فون کیا کہ اُس کے بیٹے کو میرے سامنے پیش کیا جائے۔ دو تین گھنٹے کے بعد تھانیدار اُس کے بیٹے کو لے کر میری کوٹھی آیا۔ اُس کودیکھتے ہی پھر بڑھیا نے رونا چیخنا شروع کردیا اور کہا کہ یہی وہ ظالم ہے جس نے مجھے اِس بے رحمی سے پیٹا ہے‘ اس کا بھی وہی حال کر دیا جائے جو میرا ہے۔ میں نے تھانیدار سے کہا کہ اس کو مرغا بنایا جائے تھانیدار نے شہ پاتے ہی اُس کو لٹا لیا اور جوتے برسانے شروع کئے۔ دوسرے تیسرے جوتے پر ہی وہ چیخ اٹھا۔ بڑھیا پاس ہی کھڑی تھی۔ فوراً شیرنی کی طرح جھپٹی اوراُس کے اوپر لیٹ گئی اورکہنے لگی کہ یہ میرا بچہ ہے معاف کردیجیے۔ تھانیدار نے اُسے اورپیٹنا چاہا لیکن بڑھیا اُس سے لپٹ گئی اورجوتے اُس کے ہاتھوں سے چھین لئے‘‘۔

ماسٹر عبدالمجید، پرنسپل کیلی، اور ماں۔ یہ سب محبت کے استعارے ہیں جو زمانے کی بھیڑ میں سب سے ممتاز ہیں جو زندگی کے میلے میں کہیں کھو گئے لیکن دل کے نہاں خانوں ابھی تک لو دے رہے ہیں۔ محبت بھی کیسا جذبہ ہے جو ہر منطق اور منفعت سے بے نیاز ہے۔ جسے چاہیں بھی تو بیان نہیں کر سکتے۔ اسے تو بس محسوس کیا جا سکتا ہے۔ یہ تو خوش رنگ پھولوں میں بسی خو شبو کا جھونکا ہے، سرسبز وادیوں میں بہنے والا جھرنا ہے، زندگی کے تاریک جنگلوں میں اترتی کرن ہے۔ آج مہندر سنگھ بیدی کی مشکبار یادوں نے میرے گردوپیش کو مہکا دیا ہے۔

بشکریہ روز نامہ دنیا

image_pdfimage_print
Comments - User is solely responsible for his/her words


اگر آپ یہ سمجھتے ہیں کہ ”ہم سب“ ایک مثبت سوچ کو فروغ دے کر ایک بہتر پاکستان کی تشکیل میں مدد دے رہا ہے تو ہمارا ساتھ دیں۔ سپورٹ کے لئے اس لنک پر کلک کریں

ڈاکٹر شاہد صدیقی

Dr Shahid Siddiqui is an educationist. Email: [email protected]

shahid-siddiqui has 61 posts and counting.See all posts by shahid-siddiqui