ﻣﮩﻨﮕﺎ ﺧﺪﺍ


ﻣﯿﮟ ﺍﯾﮏ ﻣﻠﺤﺪ ﮨﻮﮞ۔ ﻟﯿﮑﻦ ﻣﯿﺮﯼ ﺷﺎﺩﯼ ﮨﻮ ﮔﺌﯽ ﮨﮯ۔ ﺑﯿﻮﯼ ﮐﮩﺘﯽ ﮨﮯ ﮐﮧ ﺳﺐ ﻟﻮﮔﻮﮞ ﮐﮯ ﮔﮭﺮ ﻣﯿﮟ ﺧﺪﺍ ﮨﮯ، ﮨﻤﺎﺭﮮ ﮔﮭﺮ ﻣﯿﮟ ﮐﯿﻮﮞ ﻧﮩﯿﮟ؟

تو ﺑﮭﺎﺋﯽ ﮐﻮﺋﯽ ﺍﭼﮭﺎ ﺳﺎ ﺧﺪﺍ ﺩﮐﮭﺎ ﺩﻭ۔۔ ” ﻣﯿﮟ ﻧﮯ ﺩﮐﺎﻧﺪﺍﺭ ﺳﮯ ﻓﺮﻣﺎﺋﺶ ﮐﯽ۔ “

ﮐﻮﻥ ﺳﮯ ﻣﺬﮨﺐ ﮐﺎ ﺧﺪﺍ ﭼﺎﮨﯿﮯ؟ ﯾﮩﻮﺩﯾﺖ، ﻣﺴﯿﺤﯿﺖ، ﮨﻨﺪﻭﻣﺖ، ﺍﺳﻼﻡ؟ ” ﺩﮐﺎﻧﺪﺍﺭ ﻧﮯ ﺳﻮﺍﻝ ﮐﯿﺎ۔ “

ﮐﯿﺎ ﺍﻥ ﺳﺐ ﮐﺎ ﺧﺪﺍ ﺍﻟﮓ ﺍﻟﮓ ﮨﮯ؟ ” ﻣﯿﮟ ﻧﮯ ﺳﺮ ﮐﮭﺠﺎ ﮐﮯ ﭘﻮﭼﮭﺎ۔

“ ﮨﺎﮞ، ﮨﺮ ﻣﺬﮨﺐ ﮐﺎ، ﺑﻠﮑﮧ ﮨﺮ ﻓﺮﻗﮯ ﮐﺎ، ﮨﺮ ﻗﻮﻡ ﮐﺎ، ﮨﺮ ﺯﺑﺎﻥ ﮐﺎ، ﮨﺮ ﻧﺴﻞ ﮐﺎ، ﮨﺮ ﺑﺮﺍﺩﺭﯼ ﮐﺎ، ﮨﺮ ﻋﻼﻗﮯ ﮐﺎ ﺧﺪﺍ ﺍﻟﮓ ﮨﮯ۔ ” ﺩﮐﺎﻧﺪﺍﺭ ﻧﮯ ﻣﻌﻠﻮﻣﺎﺕ ﻓﺮﺍﮨﻢ ﮐﯽ۔

ﻣﺠﮭﮯ ﺍﻟﺠﮭﻦ ﻣﯿﮟ ﭘﮍﺍ ﺩﯾﮑﮫ ﮐﺮ ﺍﺱ ﻧﮯ ﮐﮩﺎ، “ ﺗﻢ ﺭﮨﺘﮯ ﮐﮩﺎﮞ ﮨﻮ؟ ﺍﭘﻨﺎ ﭘﻮﺳﭧ ﮐﻮﮈ ﺑﺘﺎﺅ۔ ”

ﻣﯿﮟ ﻧﮯ ﭘﻮﺳﭧ ﮐﻮﮈ ﺑﺘﺎﯾﺎ۔ ﺍﺱ ﻧﮯ ﺍﭘﻨﮯ ﮐﻤﭙﯿﻮﭨﺮ ﻣﯿﮟ ﮈﺍﻝ ﮐﺮ ﺩﯾﮑﮭﺎ۔ ﭘﮭﺮ ﻣﻄﻠﻊ ﮐﯿﺎ، “ ﺗﻤﮭﯿﮟ ﻣﺴﻠﻤﺎﻧﻮﮞ ﮐﺎ ﺧﺪﺍ ﻟﯿﻨﺎ ﭘﮍﮮ ﮔﺎ۔ ﺷﯿﻌﻮﮞ ﮐﺎ ﺧﺪﺍ ﺷﺎﺭﭦ ﮨﮯ۔ ﺗﻢ ﺳﻨﯿﻮﮞ ﮐﺎ ﺧﺪﺍ ﻟﮯ ﺳﮑﺘﮯ ﮨﻮ۔ ” ﻣﯿﮟ ﻧﮯ ﮐﻨﺪﮬﮯ ﺍﭼﮑﺎﺋﮯ۔ ﻭﮦ ﺍﯾﮏ ﮈﺑﺎ ﭘﯿﮏ ﺧﺪﺍ ﻟﮯ ﺁﯾﺎ۔ “ ﯾﮧ ﻏﺮﯾﺒﻮﮞ ﮐﺎ ﺧﺪﺍ ﮨﮯ۔ ﮨﺮ ﻭﻗﺖ ﻏﺼﮯ ﻣﯿﮟ ﺭﮨﺘﺎ ﮨﮯ۔ ﺁﺗﮯ ﺟﺎﺗﮯ ﮈﺍﻧﭩﺘﺎ ﺭﮨﺘﺎ ﮨﮯ۔ ﺍﺳﮯ ﻣﻄﻤﺌﻦ ﮐﺮﻧﮯ ﮐﮯ ﻟﯿﮯ ﺩﻥ ﻣﯿﮟ ﭘﺎﻧﭻ ﺑﺎﺭ ﻧﻤﺎﺯ ﺍﻭﺭ ﺍﯾﮏ ﺳﭙﺎﺭﮦ ﭘﮍﮬﻨﺎ ﭘﮍﺗﺎ ﮨﮯ۔ ﺭﻣﻀﺎﻥ ﮐﮯ ﺗﯿﺲ ﺭﻭﺯﮮ ﻻﺯﻣﯽ ﮨﯿﮟ۔ ﺍﭘﻨﮯ ﺳﺮ ﭘﺮ ﭨﻮﭘﯽ ﺍﻭﺭ ﺑﯿﻮﯼ ﮐﮯ ﺳﺮ ﭘﺮ ﭨﻮﭘﯽ ﻭﺍﻻ ﺑﺮﻗﻌﮧ ﺭﮐﮭﻨﺎ ﭘﮍﺗﺎ ﮨﮯ۔ ﺍﺱ ﮐﯽ ﺟﻨﺖ ﭼﮭﻮﭨﯽ ﮨﮯ، ﺟﮩﻨﻢ ﺑﮩﺖ ﺑﮍﺍ ﮨﮯ۔ ﺍﺱ ﮐﮯ ﺳﺎﺗﮫ ﺩﻭ ﭼﺎﺭ ﻣﻮﻟﻮﯼ ﻟﮯ ﺟﺎﻧﺎ ﭘﮍﯾﮟ ﮔﮯ۔ ” ﺩﮐﺎﻧﺪﺍﺭ ﻧﮯ ﺭﭨﮯ ﺭﭨﺎﺋﮯ ﺟﻤﻠﮯ ﺑﻮﻟﮯ۔ “

ﺍﻭ ﺑﮭﺎﺋﯽ ! ﻣﺠﮭﮯ ﺍﺗﻨﮯ ﺯﯾﺎﺩﮦ ﻓﻨﮑﺸﻨﺰ ﻭﺍﻻ ﺧﺪﺍ ﻧﮩﯿﮟ ﭼﺎﮨﯿﮯ۔ ﺗﮭﻮﮌﺍ ﻣﮩﻨﮕﺎ ﺧﺪﺍ ﺩﮐﮭﺎﺅ۔ ” ﻣﯿﮟ ﻧﮯ ﻓﺮﻣﺎﺋﺶ ﮐﯽ۔

ﺩﮐﺎﻧﺪﺍﺭ ﻏﺮﯾﺒﻮﮞ ﮐﺎ ﺧﺪﺍ ﺍﭨﮭﺎ ﮐﺮ ﻟﮯ ﮔﯿﺎ۔ ﺩﻭﺳﺮﺍ ﺧﺪﺍ ﻟﮯ ﺁﯾﺎ۔ “ ﯾﮧ ﻣﮉﻝ ﮐﻼﺳﯿﻮﮞ ﮐﺎ ﺧﺪﺍ ﮨﮯ۔ ﺍﺳﮯ ﺗﮭﻮﮌﺍ ﮐﻢ ﻏﺼﮧ ﺁﺗﺎ ﮨﮯ۔ ﺩﻥ ﻣﯿﮟ ﺍﯾﮏ ﺁﺩﮪ ﺑﺎﺭ ﮈﺍﻧﭩﺘﺎ ﮨﮯ۔ ﺻﺮﻑ ﺟﻤﻌﮧ ﮐﯽ ﻧﻤﺎﺯ ﺍﻭﺭ ﻓﺎﺗﺤﮧ ﺳﮯ ﻣﻄﻤﺌﻦ ﮨﻮﺟﺎﺗﺎ ﮨﮯ۔ ﺭﻭﺯﻭﮞ ﮐﮯ ﺑﺠﺎﺋﮯ ﺧﺎﻟﯽ ﺍﻓﻄﺎﺭﯼ ﭘﺮ ﺛﻮﺍﺏ ﺩﮮ ﺩﯾﺘﺎ ﮨﮯ۔ ﻟﯿﮑﻦ ﺑﻘﺮﻋﯿﺪ ﭘﺮ ﺟﺎﻧﻮﺭ ﮐﯽ ﻗﺮﺑﺎﻧﯽ ﻣﺎﻧﮕﺘﺎ ﮨﮯ۔ ﭨﻮﭘﯽ ﺍﻭﺭ ﺑﺮﻗﻌﮯ ﮐﯽ ﺷﺮﻁ ﻧﮩﯿﮟ ﻟﮕﺎﺗﺎ۔ ﺑﯿﻮﯼ ﮐﮯ ﺩﻭﭘﭩّﮯ ﮐﻮ ﮐﺎﻓﯽ ﺳﻤﺠﮭﺘﺎ ﮨﮯ۔ ﺍﺱ ﮐﯽ ﺟﻨﺖ ﺍﻭﺭ ﺟﮩﻨﻢ ﺍﯾﮏ ﺳﺎﺋﺰ ﮐﯽ ﮨﯿﮟ۔ ﺍﺳﮯ ﺧﺮﯾﺪﻭ ﮔﮯ ﺗﻮ ﺍﯾﮏ ﻣﻮﻟﻮﯼ ﺳﺎﺗﮫ ﻟﮯ ﺟﺎﻧﺎ ﭘﮍﮮ ﮔﺎ۔ ” ﺍﺱ ﻧﮯ ﮈﺑﮯ ﭘﺮ ﺩﺭﺝ ﻋﺒﺎﺭﺕ ﭘﮍﮬﯽ۔ “

ﻧﮩﯿﮟ ﺑﮭﺎﺋﯽ ‘ ﺑﮭﺌﯽ، ﻣﯿﮟ ﺑﺰﻧﺲ ﻣﯿﻦ ﮨﻮﮞ۔ ﺳﺐ ﺳﮯ ﺑﮩﺘﺮ ﮐﻮﺍﻟﭩﯽ ﻭﺍﻻ ﺧﺪﺍ ﺧﺮﯾﺪﻧﺎ ﭼﺎﮨﺘﺎ ﮨﻮﮞ۔ ” ﻣﯿﮟ ﻧﮯ ﺟﮭﻨﺠﻼ ﮐﺮ ﮐﮩﺎ۔

ﺩﮐﺎﻧﺪﺍﺭ ﻧﮯ ﻭﮦ ﮈﺑﺎ ﮐﺎﺅﻧﭩﺮ ﮐﮯ ﻧﯿﭽﮯ ﺭﮐﮭﺎ ﺍﻭﺭ ﺍﺳﭩﻮﺭ ﺳﮯ ﺑﮍﺍ ﮈﺑﺎ ﺍﭨﮭﺎ ﻻﯾﺎ۔ “ﯾﮧ ﭘﻮﺵ ﻋﻼﻗﻮﮞ ﮐﺎ ﺧﺪﺍ ﮨﮯ۔ ﺍﺳﮯ ﺑﺎﻟﮑﻞ ﻏﺼﮧ ﻧﮩﯿﮟ ﺁﺗﺎ۔ ﻋﯿﺪ ﮐﯽ ﻧﻤﺎﺯ ﭘﺮ ﺧﻮﺷﯽ ﺳﮯ ﻧﮩﺎﻝ ﮨﻮﺟﺎﺗﺎ ﮨﮯ۔ ﻋﯿﺪ ﮐﯽ ﺷﺎﭘﻨﮓ ﭘﺮ ﺭﻭﺯﻭﮞ ﮐﺎ ﺛﻮﺍﺏ ﺩﮮ ﺩﯾﺘﺎ ﮨﮯ۔ ﻟﯿﮑﻦ ﺑﻘﺮﻋﯿﺪ ﭘﺮ ﺳﯿﻠﯿﺒﺮﭨﯽ ﺟﺎﻧﻮﺭ ﻣﺎﻧﮕﺘﺎ ﮨﮯ۔ ﭨﻮﭘﯽ ﺍﻭﺭ ﺩﻭﭘﭩّﮯ ﺳﮯ ﺍﺳﮯ ﮐﻮﺋﯽ ﻏﺮﺽ ﻧﮩﯿﮟ۔ ﯾﮧ ﺳﺎﺗھ ﺑﯿﭩھ ﮐﺮ ﺷﺮﺍﺏ ﺑﮭﯽ ﭘﯽ ﻟﯿﺘﺎ ﮨﮯ۔ ﺍﺱ ﮐﮯ ﭘﺎﺱ ﺻﺮﻑ ﺟﻨﺖ ﮨﮯ، ﺟﮩﻨﻢ ﺑﺠﮭﺎ ﺑﯿﭩﮭﺎ ﮨﮯ۔ ﺍﺱ ﺧﺪﺍ ﮐﻮ ﺧﺮﯾﺪﻧﮯ ﭘﺮ ﻣﻮﻟﻮﯼ ﺳﺎﺗﮫ ﻧﮩﯿﮟ ﺁﺗﺎ۔ ” ﺩﮐﺎﻧﺪﺍﺭ ﻧﮯ ﺗﻔﺼﯿﻞ ﺑﯿﺎﻥ ﮐﯽ۔ “

ﮨﺎﮞ ﭨﮭﯿﮏ ﮨﮯ۔ ﯾﮧ ﻣﻨﺎﺳﺐ ﻟﮓ ﺭﮨﺎ ﮨﮯ۔ ﺍﯾﺴﮯ ﺩﻭ ﺧﺪﺍ ﭘﯿﮏ ﮐﺮﺩﻭ۔ ” ﻣﯿﮟ ﻧﮯ ﮐﺮﯾﮉﭦ ﮐﺎﺭﮈ ﺩﮮ ﮐﺮ ﮐﮩﺎ۔ “

ﻣﯿﺎﮞ ﺑﯿﻮﯼ ﮐﮯ ﻟﯿﮯ ﺍﯾﮏ ﺧﺪﺍ ﮐﺎﻓﯽ ﮨﮯ۔ ﺩﻭ ﮐﺎ ﮐﯿﺎ ﮐﺮﻭ ﮔﮯ؟ ” ﺩﮐﺎﻧﺪﺍﺭ ﻧﮯ ﺣﯿﺮﺍﻥ ﮨﻮ ﮐﺮ ﭘﻮﭼﮭﺎ۔ “

 ﺍﯾﮏ ﭼﯿﻨﯽ ﮐﻤﭙﻨﯽ ﻣﯿﮟ ﮐﺎﻡ ﮐﺮﺗﺎ ﮨﻮﮞ۔ ﻣﯿﺮﺍ ﺑﺎﺱ ﺍﭘﻨﯽ ﭘﺎﮐﺴﺘﺎﻧﯽ ﺳﯿﮑﺮﯾﭩﺮﯼ ﺳﮯ ﺷﺎﺩﯼ ﮐﺮ ﺭﮨﺎ ﮨﮯ۔ ﻣﯿﮟ ﯾﮧ دوسرا ﺧﺪﺍ ﺍﺳﮯ ﺗﺤﻔﮯ ﻣﯿﮟ ﺩﯾﻨﺎ ﭼﺎﮨﺘﺎ ﮨﻮﮞ۔ ” ﻣﯿﮟ ﻧﮯ ﻣﺴﮑﺮﺍ ﮐﮯ ﮐﮩﺎ۔

ﺩﮐﺎﻧﺪﺍﺭ ﻧﮯ ﺁﻭﺍﺯ ﻟﮕﺎﺋﯽ، “ ﺍﻭ ﭼﮭﻮﭨﮯ ! ﺩﻭﻧﻮﮞ ﮈﺑﮯ ﺻﺎﺣﺐ ﮐﯽ ﮔﺎﮌﯼ ﻣﯿﮟ ﺭﮐﮭﻮﺍ ﺩﻭ۔

image_pdfimage_print

Comments - User is solely responsible for his/her words

اگر آپ یہ سمجھتے ہیں کہ ”ہم سب“ ایک مثبت سوچ کو فروغ دے کر ایک بہتر پاکستان کی تشکیل میں مدد دے رہا ہے تو ہمارا ساتھ دیں۔ سپورٹ کے لئے اس لنک پر کلک کریں

مبشر علی زیدی

مبشر علی زیدی جدید اردو نثر میں مختصر نویسی کے امام ہیں ۔ کتاب دوستی اور دوست نوازی کے لئے جانے جاتے ہیں۔ تحریر میں سلاست اور لہجے میں شائستگی۔۔۔ مبشر علی زیدی نے نعرے کے عہد میں صحافت کی آبرو بڑھانے کا بیڑا اٹھایا ہے۔

mubashar-zaidi has 97 posts and counting.See all posts by mubashar-zaidi