قصہ دامن یوسف اور باوضو فرشتوں کا۔۔۔


ramish-fatimaراحیل شریف صاحب کو کریڈٹ دینا تو بنتا ہی ہے کہ جو فضولیات لوگ ہمیشہ سے بول رہے تھے اور صلواتیں سن رہے تھے صاحب کے ایک قدم نے ان سب فضولیات کے سچ ہونے کا ثبوت دے دیا۔ اگر اب بھی کوئی نہ مانتا تو ہم کیا کر سکتے تھے۔ دوسرا یہ کہ کرپشن ثابت ہونے پہ گھر بھیج دیئے جانے سے متاثر ہو کر ہمارے پیارے وزیراعظم نے بھی خود کو قوم کے سامنے احتساب کے لئے پیش کر دیا کہ ثابت ہوا تو میں گھر چلا جاوں گا۔ دونوں صاحبان کی بات سے کچھ کم عقلوں کو اختلاف ہے لیکن مجھ سمیت بہت سے لوگ جنہوں نے ہاسٹل میں زندگی گزاری ان سب کو حوصلہ ہوا کہ دیکھو اپنی مرضی کی زندگی گزارنے کے بعد کسی کو گھر جانے سے بڑی سزا کوئی کسی کو کیا دے سکتا ہے کیونکہ سات سال کی ہاسٹل کی زندگی کے بعد ہم نے بھی گھر جانا ہے تو اسی لیے بڑے لوگوں نے سزا دینے کا نیا طریقہ سوچا ہے کہ چلو شاباش بہت ہو گئی، اب گھر جاؤ۔

راحیل شریف صاحب کی مدح سرائی جس طور جاری ہے مجھے عزت مآب جناب جسٹس افتخار چوہدری اور قابل احترام کیانی صاحب کا وقت یاد آ گیا۔

ایک زمانے میں افتخار چوہدری صاحب کے قصے مشہور کر کے یہ تاثر دیا گیا کہ قرون اولیٰ کا دور بس آیا ہی چاہتا ہے۔

کیانی صاحب کے آنے پہ ان کے حق میں قصیدے پڑھے گئے پھر دیکھتی آنکھوں نے چڑھتے سورج کو سلام کرنے کے بعد ڈھلتی شام بھی دیکھی کہ برادرِان یوسف کی داستانیں کیانی صاحب کی رخصتی کے بعد دبی ہوئی سرگوشیوں سے کان پھاڑتی آوازوں میں تبدیل ہو گئیں۔

جب صاحب کی رخصتی کا وقت آیا اور نئے چیف صاحب آئے تو لوگ لکھنے لگے وہ انٹیلیجنس کے بندے تھے کچھ کام ان سے ہو ہی نہیں سکتے تھے یہ سب کام ایک پروفیشنل سولجر ہی کر سکتا ہے اس لیے مجھے راحیل شریف سے ہمدردی ہے کہ ابھی جو انہیں رہبر کہہ رہے ہیں کل یہی راہزنی کا گلہ کرتے دکھائی دیں گے اور کرپشن کی انہی ضرب عضب اور غیظ و غضب داستانوں سے عجب نکتے دریافت کریں گے۔

شاید ہمیں رہبر کی اس شدت سے تلاش ہے کہ جہاں کہیں امید کی ہلکی سی کرن بھی نظر آئے ہم اسے خالی نہیں جانے دیتے ایک موہوم سی امید کو گلی گلی لئے پھرتے ہیں کہ جناب دیکھیئے تھا جس کا انتظار وہ شاہکار آ گیا اور پھر ہمارے ہی ڈالے شور کی گرد بیٹھتی ہے تو پھر گلی گلی میں شور ہے، یہ والا بھی چور ہے کا نعرہ لگاتے ہیں اور پھر سے انتظار میں بیٹھ جاتے ہیں۔

مثال خواجہ علقمہ کی بھی دی جا سکتی ہے کہ جب تک کرسی رہی تب تک شہ کے مصاحب بنے رہنے والے کرسی کے جاتے ہی انہیں ہتھکڑی لگنے پہ سب کچے چٹھے کھولنے لگے۔

تو عزیز ہم وطنو! یہی داستانیں جو آج تم سنا رہے ہو کل ماضی کا حصہ ہوں گی اور تم لوگ ہی قصیدہ گوئی کے بعد یاوہ گوئی۔۔۔  اوہ معاف کیجیئے، راست گوئی۔۔۔ یعنی میں یہ کہنا چاہتی ہوں کہ “پچھلے والا چور ہے” کا نعرہ بلند کرنے پہ اتر آو گے۔ ایک ہم ہیں تو ہم اپنی حالت بیان کرنے کے لئے فیض صاحب کا سہارا لیتے ہیں

ہم نہ اس صف میں تھے اور نہ اُس صف میں تھے

راستے میں کھڑے اُن کو تکتے رہے

رشک کرتے رہے

اور چُپ چاپ آنسو بہاتے رہے

لوٹ کر آ کے دیکھا تو پھولوں کا رنگ

جو کبھی سُرخ تھا زرد ہی زرد ہے

اپنا پہلو ٹٹولا تو ایسا لگا

دل جہاں تھا وہاں درد ہی درد ہے

 


Comments

FB Login Required - comments

9 thoughts on “قصہ دامن یوسف اور باوضو فرشتوں کا۔۔۔

  • 25-04-2016 at 1:47 am
    Permalink

    Well done g.aj tou waqyee daad banti hy.bohat khoobsoorat akasi ki jnab apny qoam ki with the words
    شاید ہمیں رہبر کی اس شدت سے تلاش ہے کہ جہاں کہیں امید کی ہلکی سی کرن بھی نظر آئے ہم اسے خالی نہیں جانے دیتے ایک موہوم سی امید کو گلی گلی لئے پھرتے ہیں کہ جناب دیکھیئے تھا جس کا انتظار وہ شاہکار آ گیا اور پھر ہمارے ہی ڈالے شور کی گرد بیٹھتی ہے تو پھر گلی گلی میں شور ہے، یہ والا بھی چور ہے کا نعرہ لگاتے ہیں اور پھر سے انتظار میں بیٹھ جاتے ہیں

  • 25-04-2016 at 9:28 am
    Permalink

    شکریہ شکریہ آخر کچھ پسند آ ہی گیا آپکو

  • 25-04-2016 at 10:58 am
    Permalink

    MashaAllah, impressive writing and deep thoughts as always

  • 25-04-2016 at 12:19 pm
    Permalink

    شکریہ

  • 25-04-2016 at 2:32 pm
    Permalink

    Hahahha.Ni G apkay asloob-e-zaban k tou hum qayal hain mgr tanqeed b tou apki tareef hi hy k apki tehreer ko itnay ghore o fikr sy parha jata hy.anywaz aik bar phir sy g k boht achi tehreer hy

  • 25-04-2016 at 8:18 pm
    Permalink

    شکریہ صاحب
    تعریف کا شکریہ
    تنقید کیلیے ہزار بار شکریہ

  • 25-04-2016 at 9:20 pm
    Permalink

    رامش بہت اچھا لکھا… فیض صاحب کی شاعری کا انتخاب لاجواب تھا.. جیسے شکرقندی پر کسی نے مالٹا نچوڑ دیا ہو…

  • 25-04-2016 at 11:11 pm
    Permalink

    شکریہ رؤف صاحب

  • 27-04-2016 at 1:53 pm
    Permalink

    بہت عمدہ تجزیہ ، اور اچھی خاصی پیش گوئ، اچھی تحریر اور اوپر سے فیض صاحب کا عمدہ کلام،
    تمام لوازمات پورے ہیں آج کی تحریر کے ،،،

Comments are closed.