مشرف کی تاحیات نااہلی معطل،’سپریم کورٹ کا حکم بہت حد تک آئین سے ماورا‘

شہزاد ملک - بی بی سی اردو ڈاٹ کام، اسلام آباد


مشرف

جمعرات کو عدالت عظمیٰ نے سابق فوجی صدر پرویز مشرف کی تاحیات نااہلی کا فیصلہ معطل کر دیا تھا

پاکستان کے سابق وفاقی وزیر قانون اور آئینی ماہر ایس ایم ظفر نے کہا ہے کہ سابق فوجی صدر پرویز مشرف کو اگلے ماہ ہونے والے انتخابات میں حصہ لینے کی اجازت دینے کا سپریم کورٹ کا حکم بہت حد تک آئین سے ماورا ہے۔

جمعے کو بی بی سی سے بات کرتے ہوئے اُنھوں نے کہا کہ ان کے خیال میں سپریم کورٹ اور سوسائٹی کا ماحول بھی تبدیل ہو چکا ہے اور لوگ چاہتے ہیں کہ مختلف مسائل کے حل کے لیے سپریم کورٹ مداخلت کرے اور سپریم کورٹ کی مداخلت کو اب لوگ کسی حد تک تسلیم بھی کر رہے ہیں کہ وہ اس طرح کے احکامات جاری کرے۔

سابق فوجی آمر صدر ایوب خان کے دور میں ایس ایم ظفر وزیر قانون تھے۔

ان کا کہنا تھا کہ پاکستان کی سوسائٹی میں ایسے حالات پیدا ہو گئے ہیں جن کی وجہ سے عدالت عظمیٰ بھی اپنے اختیارت سے باہر جانے کی مجبوری ہو گئی ہے۔

اُنھوں نے کہا کہ سوسائٹی کا ماحول تبدیل کرنے میں میڈیا کا بہت بڑا ہاتھ ہے اور میڈیا کو قانونی معاملات کو اپنے ہاتھ میں نہیں لینا چاہیے اور یہ معاملات عدالتوں میں ہی طے ہونے چاہیے۔

جب ان سے یہ سوال کیا گیا کہ سابق فوجی صدر کو انتخابات میں حصہ لینے کی اجازت کے معاملے پر حساس اداروں کا سپریم کورٹ پر کوئی دباو تو نہیں تھا، ایس ایم ظفر کا کہنا تھا کہ خلائی مخلوق یاکسی ادارے کی پشت پناہی کا بغیر ثبوت فراہم کیے ذکر کرنا ملک کے بدنام کرنے کے علاوہ اور کچھ نہیں ہے۔

اُنھوں نے کہا کہ یہ بھی ہو سکتا ہے کہ سپریم کورٹ نے انسانی حقوق کو سامنے رکھتے ہوئے سابق فوجی صدر کو انتخابات میں حصہ لینے کی اجازت دی ہو لیکن سپریم کورٹ کے اس اقدام سے وہ ماتحت عدالتیں متاثر نہیں ہوں گی جہاں پر پرویز مشرف کے خلاف مختلف مقدمات زیر سماعت ہیں۔

نواز شریف

نواز شریف نے پرویز مشروف کی تاحیات نااہلی کو معطل کرنے کے سپریم کورٹ کے فیصلے پر تنقید کی ہے

سابق فوجی صدر کے خلاف آئین شکنی اور سابق وزیر اعظم بےنظیر بھٹو کے قتل کے مقدمے جیسے سنگین مقدمات کے باوجود اُنھیں انتخابات میں حصہ لینے کی اجازت کے سوال پر ایس ایم ظفر کا کہنا تھا کہ عدالت کی طرف سے ان مقدمات میں ملزم کی پاکستان میں جائیداد کی ضبطگی کا عمل اس لیے ہوتا ہے تاکہ وہ ملزم کو مجبور کرے کہ وہ اپنے خلاف دائر مقدمات کا سامنا کرنے کے لیے مختلف عدالتوں میں پیش ہوں۔

ایس ایم ظفر جو نگراں وفاقی وزیر قانون علی ظفر کے والد بھی ہیں، کا کہنا تھا کہ اگر مختلف عدالتوں نے ملزم پرویز مشرف کی جائیداد کی قرقی کے احکامات بھی جاری کر رکھے ہیں تو یہ احکامات ملزم کے پیش ہونے کی صورت میں واپس بھی لیے جا سکتے ہیں۔

پاکستان آنے کی صورت میں سابق فوجی صدر کا نام ایگزٹ کنٹرول لسٹ میں شامل کرنے کے بارے میں اُنھوں نے کہا کہ عدالتیں بھی ایسا کر سکتی ہیں لیکن یہ اختیار نگران وفاقی حکومت کے پاس بھی یہ اختیار ہے کہ وہ ملزم کا نام ای سی ایل میں شامل کر سکتی ہے۔

پرویز مشرف

پرویز مشرف آئین شکنی اور سابق وزیراعظم بینظیر بھٹو کے قتل کے مقدمے سمیت چار مقدمات میں اشتہاری ہیں۔ مختلف عدالتوں نے ان مقدمات میں پرویز مشرف کی جائیداد قرق کرنے کے احکامات بھی جاری کر رکھے ہیں

واضح رہے کہ چیف جسٹس میاں ثاقب نثار کی سربراہی میں پاکستان کی عدالت عظمی نے سابق فوجی صدر کو 13 جون کو ذاتی حیثیت میں سپریم کورٹ کی لاہور رجسٹری برانچ میں پیش ہونے کا حکم دیا ہے۔ سپریم کورٹ نے اپنے حکم میں یہ بھی کہا ہے کہ اگر پرویز مشرف عدالت میں پیش ہوں تو اُنھیں گرفتار نہ کیا جائے۔

سابق وزیر اعظم میاں نواز شریف کی تجویز پر لاہور ہائی کورٹ کا جج تعینات ہونے والے پاکستان کے موجودہ چیف جسٹس میاں ثاقب نثار اعلی عدلیہ کے ان ججز میں شامل ہیں جنھوں نے سابق فوجی صدر پرویز مشرف کے پہلے پی سی او یعنی عبوری آئینی حکم نامے کے تحت حلف اُٹھایا تھا۔

image_pdfimage_print

Comments - User is solely responsible for his/her words

اگر آپ یہ سمجھتے ہیں کہ ”ہم سب“ ایک مثبت سوچ کو فروغ دے کر ایک بہتر پاکستان کی تشکیل میں مدد دے رہا ہے تو ہمارا ساتھ دیں۔ سپورٹ کے لئے اس لنک پر کلک کریں

بی بی سی

بی بی سی اور 'ہم سب' کے درمیان باہمی اشتراک کے معاہدے کے تحت بی بی سی کے مضامین 'ہم سب' پر شائع کیے جاتے ہیں۔

british-broadcasting-corp has 4185 posts and counting.See all posts by british-broadcasting-corp