’کم جونگ ان اپنے لوگوں، خاندان اور اپنے لیے کچھ مثبت کر سکتے ہیں: صدر ڈونلڈ ٹرمپ


ٹرمپ

Getty Images

امریکی صدر ڈونلڈ ٹرمپ کا کہنا ہے کہ شمالی کوریا کے سربراہ کم جونگ ان سے آئندہ ہفتے ملاقات ’امن کا واحد موقع ہے۔‘

کم جونگ ان اور صدر ڈونلڈ ٹرمپ کے درمیان یہ اہم ملاقات منگل کو سنگاپور میں ہوگی۔

امریکی صدر ڈونلڈ ٹرمپ نے اس ملاقات کو ’امن کا مشن‘ قرار دیا اور کہا کہ دونوں سربراہان کے لیے ’صحیح معنوں میں پہلی بار ہے۔‘

کم جونگ ان سنگاپور کیسے جائیں گے

امریکہ شمالی کوریا سربراہی ملاقات وقت پر ہو گی: ٹرمپ

’کِم جونگ کو امریکہ آنے کی دعوت دے سکتا ہوں‘

کینیڈا میں جی سیون سربراہی اجلاس میں شرکت کے بعد امریکی صدر وہاں سے روانہ ہو گئے ہیں۔

روانگی سے قبل میڈیا کے نمائندوں سے بات کرتے ہوئے صدر ٹرمپ نے کہا کہ شمالی کوریا کے سربراہ ’اپنے لوگوں، اپنے خاندان اور اپنے لیے کچھ مثبت کر سکتے ہیں۔‘

امریکہ کو امید ہے کہ اس ملاقات سے ایک ایسے مرحلے کا اغاز ہوگا جس میں کم جونگ ان آخرکار اپنے جوہری ہتھیاروں پر کام بند کر دیں گے۔

گذشتہ 18 ماہ کے دوران ان دونوں سربراہان کے درمیان تعلقات میں زبردست اتار چڑھاؤ آئے ہیں۔

تاہم گذشتہ دنوں امریکی صدر ڈونلڈ ٹرمپ کا کہنا تھا کہ اگر ان کی شمالی کوریا کے رہنما کِم جونگ سے اگلے ہفتے سنگا پور میں طے شدہ ملاقات اچھی رہی تو وہ انھیں امریکہ آنے کی دعوت دے سکتے ہیں۔

دوسری جانب کینیڈا میں جاری جی سیون سربراہی اجلاس میں امریکی صدر ڈونلڈ ٹرمپ نے محصولات ختم کرنے کی تجویز دی ہے۔ ان کا کہنا ہے کہ بڑے صنعتی ممالک کو تجارت پر اختلافات کو حل کرنے میں مشکل ہوتی ہے۔

صدر ٹرمپ نے کہا کہ سٹیل اور الومینیئم کی درآمدات پر محصول لگانے کے فیصلے پر تناؤ کے باوجود ان کی دیگر سربراہوں کے ساتھ بات چیت ’انتہائی سود مند‘ رہی ہے۔

ان کے اس فیصلے پر امریکی اتحادی کافی برہم ہیں اور عالمی تجارتی جنگ شروع ہونے کے خدشات پیش کر رہے ہیں۔

امریکی صدر کم جونگ ان سے اہم ملاقات کے لیے جی سیون سربراہی اجلاس سے جلد ہی روانہ ہوگئے۔

image_pdfimage_print
Comments - User is solely responsible for his/her words


اگر آپ یہ سمجھتے ہیں کہ ”ہم سب“ ایک مثبت سوچ کو فروغ دے کر ایک بہتر پاکستان کی تشکیل میں مدد دے رہا ہے تو ہمارا ساتھ دیں۔ سپورٹ کے لئے اس لنک پر کلک کریں

بی بی سی

بی بی سی اور 'ہم سب' کے درمیان باہمی اشتراک کے معاہدے کے تحت بی بی سی کے مضامین 'ہم سب' پر شائع کیے جاتے ہیں۔

british-broadcasting-corp has 6015 posts and counting.See all posts by british-broadcasting-corp