مریم نواز سوشل میڈیا سیل کے حوالے سے صحافی محمد مالک کا تہلکہ خیز انکشاف


شاہد خاقان عباسی کی وزیراعظم کی حیثیت سے نواز شریف کی آخری میٹنگ میں ایسی کیا گفتگو ہوئی کہ مریم نواز شدید ناراض ہو گئیں؟ محمد مالک نے تہلکہ خیز انکشاف کر دیا، ایسی بات کہہ دی کہ ہر پاکستانی کا منہ کھلا کا کھلا رہ جائے گا

نجی ٹی وی کے پروگرام میں گفتگو کرتے ہوئے انہوں نے کہا کہ ”ابھی یہ فیصلہ ہو رہا تھا کہ نگران وزیراعظم کون ہو گا، اس سلسلے میں وزیراعظم شاہد خاقان عباسی جاتی امراءآئے جہاں شہباز شریف کو بلایا گیا جبکہ ایک اور بہت زیادہ بااعتماد آدمی بھی اس میٹنگ میں تھے۔

وہاں پر شاہد خاقان عباسی نے کہا کہ ہمیں دو ریاستی اداروں کی جانب سے بڑی شکایات آئی ہیں جن کا کہنا ہے کہ آپ کی سوشل میڈیا ٹیم نے فوج اور عدلیہ کو بہت زیادہ بے عزت کرنا شروع کیا ہوا ہے۔ ہم نے ٹریک ڈاﺅن بھی کیا ہے اور وہ ساری چیزیں مریم نواز شریف کیساتھ جڑتی ہیں جو اس سیل کو چلا رہی ہیں۔

میرے ذرائع کے مطابق اس بات پر نواز شریف نے کہا کہ ہم مریم نواز شریف کو بلا لیتے ہیں تاکہ ان کے سامنے بات ہو جائے مگر شاہد خاقان عباسی اس کیلئے کچھ زیادہ رضامند نہیں تھے مگر مریم نواز شریف کو بلا لیا گیا جنہوں نے کہا کہ میری ٹیم میں اتنے لوگ ہیں اگر اس میں سے کوئی ہے تو میں کیا کر سکتی ہوں۔

مریم نواز کی اس بات پر شائد پھر شاہد خاقان عباسی نے کہا کہ ان چیزوں کے سنجیدہ نتائج ہوتے ہیں اور یہ ہمیں سیاسی نقصان پہنچا رہی ہیں۔ برائے مہربانی ایسی چیزیں نہ کریں جو پارٹی کو نقصان پہنچائیں اور ہمارے آنے والے الیکشن میں ہماری پوری سیاست کو نقصان پہنچائیں۔ میرے ذرائع کے مطابق شاہد خاقان عباسی کی اس بات پر مریم نواز شریف ناراض ہو کر کمرے سے اٹھ کر چلی گئیں۔“

محمد مالک نے اپنی بات جاری رکھتے ہوئے کہا کہ یہ تھا اس میٹنگ کا حال کہ جہاں پر اس ملک کے وزیراعظم، تین مرتبہ رہنے والے وزیراعظم، تین دفعہ کے وزیراعلیٰ بیٹھے تھے اور بحث ہو رہی تھی نواز شریف کی غیر منتخب بیٹی کے سوشل میڈیا سیل کی جو ریاستی اداروں کے ساتھ پوری پارٹی کا اور پورے نظام کا ٹکراﺅ کروا رہا تھا۔

۔۔۔ویڈیو دیکھیں۔۔۔

image_pdfimage_print
Comments - User is solely responsible for his/her words


اگر آپ یہ سمجھتے ہیں کہ ”ہم سب“ ایک مثبت سوچ کو فروغ دے کر ایک بہتر پاکستان کی تشکیل میں مدد دے رہا ہے تو ہمارا ساتھ دیں۔ سپورٹ کے لئے اس لنک پر کلک کریں