خود غرض اور محدود تجارتی پالیسوں کے بجائے آزاد عالمی معیشت ہو: چین


امریکہ سے تجارتی تنازعے کے بعد چین کے صدر شی چنگ پینگ نے ‘خود غرض اور محدود’ تجارتی پالیسیوں کو مسترد کرتے ہوئے پابندیوں سے آزاد عالمی معیشت بنانے پر زور دیا ہے۔

چین کے ساحلی شہر چینگ داؤ میں علاقائی سکیورٹی سے متعلق شنگھائی تعاون تنظیم کے اجلاس میں اپنے خطاب کے دوران چین کے صدر نے امریکہ کی جانب سے عائد کی گئی تجارتی پابندیوں کا براہ راست ذکر نہیں کیا لیکن انھوں نے امریکی اقدام پر کڑی تنقید کی۔

انھوں نے کہا کہ ‘ہم خود غرض، محدود اور بند پالیسوں کو مسترد کرتے ہیں۔ عالمی تجارتی تنظیم کے قوانین کو برقرار رکھا جائے اور ملٹی لیٹرل تجارتی نظام کی حمایت کرتے ہوئے عالمی معیشت کو ایسا بنایا جائے جہاں سب کو آزادی ہو۔’

اس بارے میں جاننے کے مزید پڑھیے

تجارتی جنگ پر چین کی امریکہ کو سخت تنبیہ

’امریکہ نے پابندیاں لگا کر تجارتی جنگ کا اعلان کیا ہے‘

چین اور امریکہ کی تجارتی جنگ، چین کا جوابی اقدام

چین کے ناقد امریکی تجارتی کونسل کے سربراہ مقرر

امریکہ اور چین ایک دوسرے پر ایک سو پچاس ارب ڈالر مالیت کی تجارتی ڈیوٹیز عائد کرنے کی دھمکی دے رہے ہیں۔

امریکی صدر ٹرمپ نے چین پر زور دیا ہے کہ وہ امریکی مصنوعات کے لیے اپنے دروازے کھولے کیونکہ امریکہ اور چین کے مابین تجارتی خسارہ بڑھ رہا ہے۔

چین کے صدر کا یہ خطاب ایک ایسے موقع پر ہوا جب چند گھنٹے قبل کی دنیا کی سات بڑی معشیت جی سیون کے سربراہوں کے اجلاس میں صدر ٹرمپ نے مشترکہ اعلامیہ سے لاتعلقی کا اظہار کیا ہے۔

ٹرمپ کے اس اقدام سے وانشگٹن اور اس کے قریبی اتحادیوں کے تعلقات پر اثر پڑے گا۔

ایس سی او اجلاس سے خطاب میں چین کے صدر نے کہا کہ ‘ہمیں سرد جنگوں اور گروہوں کی لڑائی کی سوچ سے باہر نکلنا ہے اور ہم دوسروں کی قیمت پر اپنی سکیورٹی کے اقدامات کی مخالفت کرتے ہیں۔‘

چین کے صدر شی جن پینگ نےایس سی او ممالک میں فریم ورک بنانا کے لیے چار ارب 70 کروڑ ڈالر کا قرضہ دینے کی پیشکش بھی کی۔

شنگھائی تعاون تنظیم کی بنیاد سنہ 2001 میں رکھی گئی تاکہ چین، روس اور وسطیٰ ایشیائی ممالک میں تشدد پسند اسلام اور سکیورٹی خدشات کا مقابلہ کیا جا سکے۔

گذشتہ سال ایس سی اور میں پاکستان اور ایران کو بھی شامل کیا گیا اور توقع ہے کہ آئندہ سال تک ایران بھی شنگھائی تعاون تنظیم کا رکن بن جائے گا۔

image_pdfimage_print
Comments - User is solely responsible for his/her words


اگر آپ یہ سمجھتے ہیں کہ ”ہم سب“ ایک مثبت سوچ کو فروغ دے کر ایک بہتر پاکستان کی تشکیل میں مدد دے رہا ہے تو ہمارا ساتھ دیں۔ سپورٹ کے لئے اس لنک پر کلک کریں

بی بی سی

بی بی سی اور 'ہم سب' کے درمیان باہمی اشتراک کے معاہدے کے تحت بی بی سی کے مضامین 'ہم سب' پر شائع کیے جاتے ہیں۔

british-broadcasting-corp has 4930 posts and counting.See all posts by british-broadcasting-corp