ڈرائیونگ پر پابندی ختم: سعودی خواتین کا سڑکوں پر جشن

حمیرا کنول - بی بی سی اردو ڈاٹ کام


سعودی عرب

جدہ میں خواتین کو ڈرائیونگ کی تربیت دینے کے لیے موجود سینٹر میں موجود خواتین ڈرائیونگ پر عائد پابندی ختم ہونے کی منتظر

آج سعودی تاریخ کا ایک بڑا دن ہے۔ دارالحکومت ریاض سمیت مختلف شہروں میں ہر عورت نہ صرف اپنی گاڑی لے کر باہر آنے کا حق حاصل کر چکی ہے بلکہ وہ اب ایک ڈرائیور کی حیثیت سے یہ پیشہ بھی اپنا رہی ہے۔ سعودی عرب کے مقامی وقت کے مطابق شب بارہ بج کر ایک منٹ پر یعنی کیلنڈر پر 24 جون آتے ہیں خواتین پر کئی دہائیوں سے عائد پابندی ختم ہو گئی۔ ریاض اور جدہ سمیت مختلف شہروں میں خواتین نے اپنی گاڑی خود چلائی۔ سعودی خواتین اور نوجوان لڑکیوں نے ڈرائیونگ کرتے ہوئے اپنی تصاویر اور ویڈیوز بھی سوشل میڈیا ویب سائٹس پر اپ لوڈ کیں اور خوشی کا اظہار کیا۔

بغیر قانون کے پابندی

زیادہ پرانی نہیں یہ نومبر 2016 کی بات ہے جب سعودی شہزادے ولید بن طلال نے ٹوئٹر پر لکھا کہ ‘بحث بند کیجیے، یہ وقت ہے کہ عورتیں ڈرائیونگ کریں۔’ مگر تب شہزادہ محمد بن سلمان نے کہا کہ سعودی معاشرہ ابھی عورت کی ڈرائیونگ کے لیے قائل نہیں ہو سکا۔ لیکن گذشتہ برس جون میں محمد بن سلمان کے ولی عہد کا عہدہ حاصل کرنے کے چند ہی ماہ بعد جو بڑی تبدیلیاں سامنے آئیں ان میں سے ایک عورت کو اپنی گاڑی چلانے کا حق دینے کی اجازت بھی تھی۔

لیکن ایسا کیا تھا کہ وہاں عورت اپنے ہی گھر کے پورچ میں کھڑی گاڑی چلا نہیں سکتی تھی۔ ہم جب سعودی عرب کی بات کرتے ہیں تو وہاں کے سخت اسلامی قوانین کی بات کرنا بھی ضروری ہے۔ اگر چوری کی تو ہاتھ کاٹ دیا جائے گا۔ منشیات کی سمگلنگ کی تو سر قلم ہوگا وغیرہ وغیرہ۔

ثمر المقرین

ثمر المقرین ریاض میں ڈرائیونگ کرتے ہوئے

حیرت کی بات ہے کہ اس ملک کے کسی قانون میں یہ کہیں نہیں لکھا گیا تھا کہ عورت ڈرائیونگ نہیں کر سکتی لیکن پھر بھی دہائیوں تک عوامی مقامات پر کسی عورت کو گاڑی چلانے کی اجازت نہیں ملی۔ ایسا نہیں ہے کہ کبھی کسی نے اس کی جرات اور کوشش نہیں کی لیکن جس نے بھی ایسا کیا اسے جیل کی سلاخوں اور علما کے فتوں کا سامان کرنا پڑا۔

گرفتاریاں اور فتوے

یہ چھ نومبر سنہ 1990 کی بات ہے جب 47 خواتین کو اس وقت گرفتار کیا گیا جب انھوں نے ایک کارواں کی صورت میں ریاض کی سڑکوں پر اپنی اپنی گاڑیاں دوڑائیں۔ انھیں اپنے مرد سرپرست کی اس یقین دہانی پر چھوڑا گیا کہ وہ اب کبھی ڈرائیونگ نہیں کریں گی۔ بہت سی ایسی تھیں جنھیں بطور سزا نوکری چھوڑنی پڑی۔ یہ وہ وقت تھا جب سعودی عرب میں موجود امریکی اڈے میں رہنے والی خواتین ڈرائیونگ کرتی تھیں۔

لیکن سعودی خواتین کی اس پہلی بغاوت کے بعد بھی ملک میں اس سے متعلق کوئی قانون نہیں لکھا گیا قانون تب بھی نہیں بنا کہ عورت گاڑی نہیں چلا سکتی نہ ہی اس کی کوئی سزا تھی لیکن یہ غیر اعلانیہ پابندی پالیسی کا حصہ بن گئی۔ اس وقت گرفتار ہونے والی ان خواتین میں فوزیہ البکر بھی شامل ہیں جنھوں نے سعودی خواتین کے نام پیغام میں انھیں مبارکباد کے ساتھ کہا کہ ‘تمھارے پیچھے کوئی گارڈ یا تمھارے آگے کوئی ڈرائیور نہیں ہوگا۔’

یہ وہ عرصہ تھا جب ارامکو کمپنی کے کمپاؤنڈ اور کنگ عبدالعزیز یونیورسٹی کی حدود میں ہی کوئی خاتون گاڑی چلا سکتی تھی۔ جب آنے والے کئی برس خاموشی سے گزر گئے کوئی عورت بیمار ہے، شوہر گھر سے باہر ہے یا کوئی بھی پریشانی ہے وہ سفر کرنے سے قاصر ہی رہی۔

21 سال بعد 19 مئی 2011 کو ارامکو کمپنی میں ملازمت کرنے والی منال الشریف نے اس پابندی کے خلاف احتجاج کیا اور خوبر کی ایک معروف شاہراہ پر چند منٹ ڈرائیونگ کی۔ جس کی سزا میں انھیں سات دن جیل میں گزارنے پڑیں اور یہ لکھ کر دینا پڑا کہ وہ اب ڈرائیونگ نہیں کریں گی۔ لیکن سعودی حکام سوشل میڈیا اور یوٹیوب پر منال اور اس کے ساتھ اپنے حق کے لیے اٹھنے والی آواز کو خاموش نہیں کر سکے۔

منال اور ان کی طرح ڈرائیونگ کا حق حاصل کرنے کے لیے اکھٹے ہونے والی خواتین نے منال کے ساتھ ٹوئٹر پر شروع کی جانے والی مہم women2 drive کو جاری رکھا۔ 17 جون کو جب ریاض، جدہ اور خوبر میں تین درجن کے لگ بھگ سعودی خواتین نے تقریباً گھنٹے تک ڈراییونگ کی۔ لیکن اس بار 1990 کی طرح ان سب کو گرفتار کر کے جیل میں نہیں ڈالا گیا۔ کچھ کو ٹریفک پولیس نے نظر انداز کیا اور کچھ کو یہ کہہ کر جانے دیا کہ گھر جائیں اور اب ڈرائیونگ نہیں کرنی۔

ہیومن رائٹس واچ کے مطابق اس وقت کچھ خواتین کو مقدمات کا سامنا بھی کرنا پڑا لیکن انھیں دی جانے والی دس کوڑوں کی سزا کو معطل کر دیا گیا۔ یہ وہ عرصہ تھا جب مشرق وسطیٰ میں ’عرب بہار‘ جاری تھا یعنی مختلف ممالک میں بادشاہت اور ڈکٹیٹر شپ کے خلاف آواز اٹھ رہی تھی اور عوام بنیادی حقوق کا مطالبہ کر رہے تھے۔

اس مہم کو چلانے والی منال شریف کو اپنے پانچ سالہ بیٹے کے بغیر ملک چھوڑ کر جانا بیرون ملک سکونت اختیار کرنا پڑی کیونکہ ملک بھر میں ان کے خلاف دیے جانے والے فتوں اور مبینہ طور پر چلنے والی میڈیا مہم کے بعد انھوں نے ان خدشات کا اظہار کیا کہ ان کی جان کو خطرہ ہے۔ لیکن منال کی جانب سے بین الاقوامی سطح پر اس مسئلے کو اجاگر کرنے کا سلسلہ جاری رہا۔

منال الشریف

منال الشریف نے گذشتہ برس ’ڈیرنگ ٹو ڈرائیو‘ کتاب میں اپنی زندگی اور خاص طور پر ڈرائیونگ کا حق حاصل کرنے کے لیے کی جانے والی کوشش کی تفصیل بیان کی

صرف منال ہی نہیں سعودی عرب کے اندر ایسی خواتین کی ایک اچھی خاصی تعداد موجود رہی جس نے سوشل میڈیا پر اپنی مہم کو چلایا۔ چاہے وہ ڈرائیونگ کے لیے ہو، ووٹ کے حق کے لیے ہو، انتخابات میں حصہ لینے کے لیے یا میل گارڈیئن شپ کا معاملہ ہو۔ ایسا نہیں کہ ملک میں کوئی بھی مرد یا اعلیٰ شخصیت ایسی نہیں تھی جس نے اس پابندی کو بے جا نہیں کہا۔

سنہ 2013 میں شیخ عبدالطیف جو کہ سعودی عرب کی مذہبی پولیس کے سربراہ رہ چکے ہیں نے ایک بیان میں کہا کہ اسلامی شریعت عورتوں کو ڈرائیونگ سے نہیں روکتی لیکن جواب میں سعودی عالم شیخ الوہائدن نے فتوی دے دیا کہ ڈرائیونگ کرنے سے عورت کی بیضہ دانی کو نقصان پہنچ سکتا ہے۔ لیکن اگلے برس ہی ایک اور خاتون لجين هذلول الهذلول کو بھی ڈرائیونگ کرنے کے جرم میں گرفتار کیا گیا اور 70 دن تک پابند سلاسل کیا گیا۔

چار برس بعد یہ پابندی ختم کرنے کا اعلان ستمبر 2017 میں کیا گیا۔

پابندی ختم مگر مہم چلانے والی خواتین قید

ڈرائیونگ سکولز کھولے گئے اور لائسنس دیے جانے کا سلسلہ شروع ہوا لیکن 24 جون یعنی آج اس کے عملی طور پر پابندی ختم ہونے ایک ماہ پہلے لجين هذلول الهذلول، عزیزہ الا یوسف اور ایمان الا نجفان سمیت درجن بھر انسانی حقوق کے کارکنان کو گرفتار کر لیا گیا۔ سعودی عرب کے سرکاری ٹی وی کے مطابق ان خواتین کو غیر ملکی طاقتوں کے ساتھ روابط کی وجہ سے گرفتار کیا گیا ہے۔ انسانی حقوق کی تنظیمیں ایک بار پھر سعودی عرب کے اس رویے پر تنقید کر رہی ہیں۔

بی بی سی سے گفتگو میں ایمنیٹسی انٹرنیشنل کی مشرق وسطی میں ڈائریکٹر سماح حدید نے کہا ابھی تک باوجود کوششوں کے ان خواتین تک رسائی کی اجازت نہیں مل سکی۔ بی بی سی سے گفتگو میں سعودی عرب میں موجود کچھ سماجی کارکنان نے کہا کہ وہ آن ریکارڈ بات نہیں کر سکتیں کیونکہ انھیں ایسا کرنے میں اپنی نوکری جانے کا اور حکومت سے خطرہ ہے۔ سماجی رابطوں کی ویب سائٹس پر اب بھی کچھ ایسے لوگ ہیں جو ڈرائیونگ پر عائد پابندی کے ختم ہونے سے نالاں ہیں۔

سعودی عرب سے ہزاروں میل دور آسٹریلیا میں موجود منال عورتوں کو یہ حق ملنے پر خوش تو ہیں لیکن وہ قید میں موجود خواتین اور مردوں کی سرپرستی میں ہونے کو لازمی قرار دیے جانے کے حکم کے خلاف مہم شروع کر چکی ہیں۔

image_pdfimage_print
Comments - User is solely responsible for his/her words


اگر آپ یہ سمجھتے ہیں کہ ”ہم سب“ ایک مثبت سوچ کو فروغ دے کر ایک بہتر پاکستان کی تشکیل میں مدد دے رہا ہے تو ہمارا ساتھ دیں۔ سپورٹ کے لئے اس لنک پر کلک کریں

بی بی سی

بی بی سی اور 'ہم سب' کے درمیان باہمی اشتراک کے معاہدے کے تحت بی بی سی کے مضامین 'ہم سب' پر شائع کیے جاتے ہیں۔

british-broadcasting-corp has 5346 posts and counting.See all posts by british-broadcasting-corp