قوم انتشار پھیلانے والوں کا ایجنڈا مسترد کر چکی ہے : وزیراعظم


prime ministerوزیراعظم نواز شریف کا کہنا ہے کہ سڑکوں اور چوراہوں کو روکنے والے بھی وہی کام کر رہے ہیں جو دہشت گرد کررہے ہیں، پاکستان کا امن و امان خراب کرنا اور پاکستان کی خوشحالی کا راستہ روکنے والوں اور دہشت گردوں میں کیا فرق ہے۔
وزیراعظم نوازشریف نے خطاب میں کہا کہ اگرملک میں دھرنوں کی سیاست نہ ہوتی تو راہداری منصوبہ بہت پہلے شروع ہوچکا ہوتا، دہشت گرد پاکستان کی ترقی کا راستہ روکنا چاہتے ہیں اورامن و امان کا مسئلہ پیدا کرنا چاہتے ہیں، سڑکوں اور چوراہوں کو روکنے والے بھی وہی کام کررہے ہیں جو دہشت گرد کررہے ہیں، پاکستان کا امن وامان خراب کرنا اورپاکستان کی خوشحالی کا راستہ روکنے والوں اوردہشت گردوں میں کیا فرق ہے، دونوں پاکستان میں افراتفری اوربے چینی چاہتے ہیں۔ انہوں نے کہا کہ پاکستان جب بھی ترقی کی راہ پرگامزن ہوتا ہے تو وارکرنے والے کچھ نہ کچھ کرنا شروع کردیتے ہیں لیکن ایسے لوگوں کا وارکامیاب ہونے نہیں دیں گے قوم ان کے ایجنڈے کو مسترد کرچکی ہے، آپ کا ایجنڈا نہیں چلے گا، پاکستان کے عوام نے ہمیں ترقی کا مینڈیٹ دیا ہے۔
وزیراعظم نے کہا کہ ہم کسی سے ڈرنے والے نہیں ورنہ ایٹمی دھماکا نہ کرپاتے، پاکستان بہت جلد دنیا کی عظیم اقتصادی قوتوں میں شامل ہوجائےگا، قوم دیکھ رہی ہے کہ کون اقتصادی راہداری جیسے منصوبوں کا حامی ہے اورکون روڑے اٹکا رہا ہے جب کہ دھرنے کی وجہ سے چین کی سرمایہ کاری تاخیرکا شکارہوئی۔ وزیر اعظم نے اپوزیشن لیڈر خورشید شاہ کو مخاطب کرتے ہوئے کہا کہ اس موقع پر اپنے دوست خورشید شاہ کی یاد آ گئی جو آج اس پل اورموٹر وے کے سنگ بنیاد کی تقریب میں موجود ہوتے تو بڑی خوشی ہوتی، ان سے کہتا ہوں کہ ہم ا?پ کے علاقے میں پل بنا رہے ہیں اورآپ ہمارے استعفے کا مطالبہ کررہے ہیں لیکن میں تو آج بھی آپ کواپنا دوست ہی سمجھتا ہوں۔
وزیراعظم کا کہنا تھا کہ کئی سال پہلے جوخواب دیکھا تھا وہ پورا ہورہا ہے، ملک بھرمیں سڑکوں کا جال بچھانے کا خواب پورا ہوتا نظرآرہا ہے، پاک چین اقتصادی راہداری منصوبہ پاکستان کو چین اوروسطی ایشیا سے ملانے کا منصوبہ ہے جس کی شاخیں پھیلیں گی اوریہ موٹروے پاکستان کوچین، تاجکستان، افغانستان،ترکمانستان،ازبکستان اورایران کو ملائے گی۔ انہوں نے کہا کہ 1990 میں خواب دیکھا تھا پشاوراسلام اورلاہوراسلام آباد موٹروے کا خواب دیکھا جو مکمل ہوا اوراس موٹروے منصوبے کوکراچی تک پہنچنا تھا لیکن 1999 میں ہمیں منصوبہ مکمل کرنے نہیں دیا گیا، اب 2013 میں پھر موقع ملا اب تیزی کے ساتھ ادھورا کام پھر شروع کردیا ہے۔
وزیراعظم نوازشریف سکھر ایئرپورٹ پہنچے تو وزیراعلی سندھ سید قائم علی شاہ اور پولیس کے افسران نے ان کا استقبال کیا جس کے بعد وزیراعظم نے سکھر ملتان موٹروے منصوبے کا سنگ بنیاد رکھا۔ 393 کلو میٹر طویل سکھر ملتان موٹروے پاک چین اقتصادی راہداری منصوبے کے تحت تعمیرکئے جانے والے پشاور کراچی موٹروے منصوبے کا حصہ ہے، چھ رویہ موٹروے ملتان سے جلال پور پیروالہ، احمد پور شرقیہ، اوباڑو اور پنوں عاقل سے گزرتی ہوئی سکھر پہنچے گی۔ موٹروے پرمجموعی طور پر 54 پل تعمیر کئے جائیں گے جن میں سب سے بڑا پل دریائے ستلج پر تعمیر کیا جائے گا۔ منصوبے میں 12 سروس ایریا، دس ریسٹ ایریا، 11 انٹرچینج ، 10 فلائی اوور اور 426 انڈر پاسز کی تعمیر بھی شامل ہے۔ موٹروے سے سندھ اور پنجاب کے درمیان تیز ترین نقل و حمل کی سہولت میسر ہوگی۔


Comments

FB Login Required - comments