شہباز شریف: کارکنوں کی گرفتاریاں قبل از انتخابات کھلی دھاندلی ہے


شہباز شریف

PMLN

پاکستان مسلم لیگ (ن) کے صدر شہباز شریف نے کہا ہے کہ نواز شریف کی جمعے کو وطن آمد سے قبل ان کی جماعت کے سینکڑوں کارکنوں کی گرفتاریاں قبل از انتخاب دھاندلی اور عام انتخابات کو داغدار کرنے کی کوشش ہے۔

جمعرات کو لاہور میں پریس کانفرنس سے خطاب کرتے ہوئے شہباز شریف نے صوبے میں نگران حکومت اور ماتحت انتظامیہ کے اقدامات پر شدید تنقید کی۔

ان کا کہنا تھا کہ نگران حکومت کے احکامات پر لاہور اور راولپنڈی میں ان کے سینکڑوں کارکنوں کو حراست میں لے لیا گیا ہے تاکہ وہ نواز شریف کے استقبال کے لیے لاہور ایئرپورٹ نہ جا سکیں۔

مزید پڑھیے

جب نواز شریف لاہور ایئرپورٹ پر اتریں گے تو کیا ہو گا؟

’جیل جانا پڑے یا پھانسی دے دی جائے،اب قدم نہیں رکیں گے‘

ان کا کہنا تھا کہ ’ہمارے سینکڑوں کارکن لاہور،راولپنڈی اور دوسرے شہروں میں گرفتار کیے جا چکے ہیں اور 30 دن کے لیے انھیں پابند کیا گیا ہے۔ اس کا مطلب ہے کہ یہ انتخابات سے قبل کھلی دھاندلی ہے۔‘

شہباز شریف نے کہا کہ ’یہ صرف کل کے دن کے لیے نہیں ہو رہا۔ یہ انھوں نے انتخابات کو اب داغدار کرنا ہے۔ یہ انتخابات پر شکوک و شبہات ڈال رہے ہیں۔‘

سابق وزیراعلیٰ نے کہا کہ ان تمام حربوں کے باوجود مسلم لیگ ن نواز شریف کا پرامن طریقے سے استقبال کرے گی اور وہ لوہاری مسجد سے استقبالی جلوس کی قیادت کریں گے۔

شہباز شریف نے کہا کہ عدالت عظمیٰ نے کہا کہ انتخابات تک کسی کو گرفتار نہ کیا جائے لیکن ن لیگ کو نشانہ بنایا جا رہا ہے۔

’ہمارا کل کا پروگرام انتہائی پرامن تھا اور ہے لیکن اس کو بھی گوارا نہیں کیا جا رہا، تو اس کا مطلب یہ ہے کہ کچھ تو دال میں کالا ہے۔‘

ان کا کہنا تھا کہ دفعہ 144 کے باوجود عمران خان کو لاہور میں جلسے کی اجازت دے گئی ہے اور ہمیں کہا جا رہا ہے کہ آپ دفعہ 144 کے پابند ہیں۔

شہباز شریف نے انتظامیہ اور پولیس کو اپنے پیغام میں کہا کہ وہ اپنی ظلم و زیادتی روک لیں۔ جب مسلم لیگ کی حکومت آئے گی تو وہ انھیں انصاف کے کٹہرے میں کھڑا کریں گے۔

’ لیکن جو لوگ یہ سمجھتے ہیں کہ وہ ہمیں ڈرا لیں گے دھمکا لیں گے چاہے وہ تھانیدار ہے، ایس پی ہے یا ڈپٹی کمشنر ہے، وہ اچھی طرح کان کھول کر سن لیں کہ یہ جنتی مرضی دھاندلی کر لیں ہم یہ الیکشن جیت رہے ہیں۔۔۔۔۔اگر الیکشن کے نتائج خدانخواستہ اور نکلتے ہیں جس کی شروعات ہو چکی ہیں تو میں سمجھتا ہوں کہ ذمہ دار وہ ہوں گے جو الیکشن کو داغدار کر رہے ہیں۔۔۔۔۔ جان لیں کہ 26 کو مسلم لیگ ن کی حکومت آئے گی تو ہم آپ کے ساتھ زیادتی تو نہیں کریں گے لیکن انصاف کریں گے۔‘

انھوں نے الزام عائد کیا کہ الیکشن کمیشن اس وقت کٹھ پتلی بن چکا ہے تاہم انھوں نے الیکشن کمیشن سے اپیل کی کہ ان کے گرفتار کارکنوں کو رہا کرنے کے احکامات دیے جائیں۔

دوسری جانب قومی احتساب بیورو، نیب کے سربراہ جسٹس ریٹائرڈ جاوید اقبال کی جانب سے جاری تحریری بیان میں کہا گیا ہے کہ ایون فیلڈ ریفرنس میں دیے گئے فیصلے اور احتساب عدالت کی جانب سے نواز شریف اور مریم نواز کی گرفتاری کے وارنٹ گرفتاری پر قانون کے مطابق عمل کیا جائے گا۔

بیان میں کہا گیا ہے کہ اس میں کسی بھی قسم کی رکاوٹ ڈالنے کی کوشش کرنے والوں کے خلاف قانون کے مطابق کارروائی عمل میں لائی جائے گی۔

پاکستانی ذرائع ابلاغ کے مطابق نگران وزیرِ داخلہ علی ظفر نے بھی کہا ہے کہ نواز شریف اور مریم نواز کو لاہور آمد کے فوراً بعد عدالتی حکم کے تحت حراست میں لے لیا جائے گا اور انھیں ہوائی اڈے سے باہر جانے کی اجازت نہیں دی جائے گی۔

image_pdfimage_print
Comments - User is solely responsible for his/her words


اگر آپ یہ سمجھتے ہیں کہ ”ہم سب“ ایک مثبت سوچ کو فروغ دے کر ایک بہتر پاکستان کی تشکیل میں مدد دے رہا ہے تو ہمارا ساتھ دیں۔ سپورٹ کے لئے اس لنک پر کلک کریں

بی بی سی

بی بی سی اور 'ہم سب' کے درمیان باہمی اشتراک کے معاہدے کے تحت بی بی سی کے مضامین 'ہم سب' پر شائع کیے جاتے ہیں۔

british-broadcasting-corp has 5365 posts and counting.See all posts by british-broadcasting-corp