میڈیا کے رجحانات اور جدید تقاضے


قدیم عربوں میں شاعر قبیلوں اور معاشرے کا مرکزی نقطہ فکر ہوا کرتے تھے کیونکہ شعراء کو ذریعہ اظہار کی تمام قوّت میّسر تھی۔ جس میں ذہانت، الفاظ اور مجمع سرِ فہرست ہیں، اور یہی وجہ ہے کہ ان معاشروں کی ذہنی تربیت اور اُٹھان اسی لافانی شاعری کے سائے میں پروان چڑھی، میں چونکہ اس دور کی عربی شاعری اور شاعر کو میڈیا کا ابتدائی زمانہ سمجھتا ہوں۔

اس لئے میرا خیال ہے کہ قوموں کی اجتماعی نفسیات اور روّیوں کی تشکیل میں میڈیا کا کردار انتہائی اہم اور بنیادی ہوتا ہے، سو ہم زمانہ حال میں جب اپنے قومی روّیے میں تشّدد، اخلاقی گراوٹ، اقدار کی پامالی اور بہتان طرازی کے بڑھتے ہوئے تناسب کو شّدد کے ساتھ محسوس کرتے ہیں تو ان منفی عوامل کا کھوج ہمیں سب سے پہلے جدید میڈیا کے دروازے پر لا کھڑا کر دیتا ہے،

جہاں صحافت کے نام پر ایک فتنہ انگیزی اپنی تمام تر حشر سامانیوں کے ساتھ قصیدہ گوئی یا بہتان طرازی کا سنگھارکیے ریٹنگ کے دریچے سے گاہک کو اپنی اپنی طرف متوجہ کرنے کے لئے دن رات مصروف نظر آتی ہے۔

الیکڑانک میڈیا جوں ہی اپنے بناؤ سنگھار اور نوزائیدگی کے ساتھ صحافت کی گلی میں داخل ہوتا ہے تو ایک ہنگامہ برپا ہوجاتا ہے، کیونکہ یہاں ماضی کا زمانہ تو ہے ہی نہیں کہ گزرے لمحوں سے تجربہ کشید کیا جائے، صحافیوں کی اکثریت بھی نوجوان اور نا تجربہ کار ہے، اسی لئے جذباتیت مادہ پرستی اور بے سروپا پروپیگنڈہ جیسے منفی عوامل میڈیا کو کافی حد تک جکڑ لیتے ہیں، جو نہ صرف سماجی زندگی جو صدیوں سے چلی آتی روایات اور اقدار کی بنیادوں پر کھڑی ہوتی ہے اور اس کے تمام تانے بانے اسی ڈھانچے سے جڑے ہوتے ہیں کو درہم برہم کردیتا ہے، بلکہ سیاست میں ہم آہنگی اور مشاورت کی بجائے لعن طعن اور بہتان تراشی کو فروغ دیتا ہے، جو مجموعی حوالے سے معاشرے پر انتہائی منفی اثرات مرتب کردیتا ہے، تکلف برطرف ہمارے موجودہ سماجی معاشرے اور قومی سیاست کی زوال پذیری اس کی بڑی مثالیں ہیں۔

اس وقت عالمی سطح پر مہذّب دُنیا میں میڈیا جن تین چیزوں پر فوکس کر رہا ہے، ان میں قانون کی بالادستی، بنیادی انسانی حقوق اور سماجی اقدار کا تحّفظ شامل ہے، گو کہ ہمارے ہاں اس حوالے سے میڈیا کا کردار کوئی زیادہ قابل رشک نہیں، تاہم بعض سنجیدہ صحافی اور میڈیا گروپ شدید دباؤ کے باوجود اس طرف میڈیا کا رُخ موڑنے کی کوشش کر رہے ہیں۔

جو یقینًا ایک قابل اطمینان امر ہے، الیکڑانک اور پرنٹ میڈیا کے علاوہ جدید ترین اور با اثر سوشل میڈیا رائے عامہ پر نظر انداز ہونے میں دوسروں پر سبقت لیتا جا رہا ہے، کیونکہ یہاں رسائی اور اظہار رائے پر کوئی قد غن نہیں، چونکہ نوجوان نسل کی اکثریت سوشل میڈیا کی طرف راغب ہے۔ اس لئےسطحیت اور جذباتیت کا عنصر اور پختگی کا فقدان واضح طور پر نظر آرہا ہے، لیکن حیرت انگیز طور پر سوشل میڈیا تیزی کے ساتھ اعتدال کی جانب بڑھتا محسوس ہو رہا ہے۔

یہاں آگاہی اور تحرّک کا رجحان بدرجہ اُتم موجود ہے، جو نوجوان طبقے کو عالمی اور مقامی سطح پر رونما ہونے والی تبدیلیوں اور ارتقائی عمل کا حصہ بنانے میں حد درجہ معاون ثابت ہو رہا ہے۔

سوشل میڈیا کا قابل ستائش کردار یہ بھی ہے کہ اس نے ریاست کے تمام طاقتور سٹیگ ہولڈرز بمع میڈیا اور سیاستدانوں کے سب کو کسی حد تک بے لگام ہونے سے روک رکھا ہے، جب ہم میڈیا کے مجموعی کردار اور معاشرے پر پڑنے والے اس کے اثرات پر بحث کرتے ہیں، تو ہمیں یہ بات ذہن نشین رکھنی چاہیےکہ موجودہ میں تیسرے درجے کی صحافت کے لئے گنجائش برق رفتاری کے ساتھ سکڑتی جارہی ہے۔ اب خبر کی سچائی جانچنے کے لئےذرائع کی بہتات پروپیگنڈے کو اُکھاڑنے میں اہم کردار ادا کر رہی ہے۔

اس لئے مستقبل کی صحافت تفتیش ریسرچ اور آئیڈیا کی تلاش کے بغیر ممکن نظر نہیں آرہی، اس سلسلے میں فعال طبقات کا کردار اور تیزی کے آج بیدار ہوتی رائے عامہ سب سے بڑی انڈی کیشنز ہیں۔

اب یلو جرنلزم کے لئے نہ تو وہ فضا میّسر ہے اور نہ وہ خوابیدہ رائے عامہ جس میں اس طرح کی زہر آلود فصلیں کاشت اور آبیاری کے مراحل سے گزرتی ہیں گو کہ صورتحال اب بھی اتنی بہتر اور قابل اطمینان نہیں کہ ہم اس کا موازنہ مہذب دنیا کے جدید میڈیا سے کر سکیں لیکن فی الحال اس صورتحال کو کچھ عرصے تک برداشت کرنا پڑے گا کیونکہ جدید میڈیا ایک سیلاب کی مانند اُمڈ آیا ہے۔ یہ بستیوں کو کسی حد تک اُجاڑ بھی دے گا، مگر قانون کی بالادستی، آزادی اظہار اور سماجی اقدار کے تحفظ کا ضامن بھی یہی میڈیا ہی بنے گا۔

image_pdfimage_print
Comments - User is solely responsible for his/her words


اگر آپ یہ سمجھتے ہیں کہ ”ہم سب“ ایک مثبت سوچ کو فروغ دے کر ایک بہتر پاکستان کی تشکیل میں مدد دے رہا ہے تو ہمارا ساتھ دیں۔ سپورٹ کے لئے اس لنک پر کلک کریں