بنگلا دیش : سابق امیر جماعت اسلامی مطیع الرحمان نظامی کو پھانسی دے دی گئی


mateeh ul rehmanبنگلا دیش میں امیر جماعت اسلامی مطیع الرحمان نظامی کو 1971 میں جنگی جرائم کا مرتکب قرار دیتے ہوئے پھانسی دے دی گئی۔
غیر ملکی خبر رساں ادارے کے مطابق بنگلا دیش میں جماعت اسلامی کے 72 سالہ امیر مطیع الرحمان پر نسل کشی اور تشدد سمیت دیگر الزامات تھے جس پر گزشتہ سال سپریم کورٹ نے انہیں سزائے موت کا حکم دیا تھا تاہم مطیع الرحمان کی جانب سے فیصلے پر نظر ثانی کی اپیل دائر کی تھی جسے عدالت نے مسترد کردیا تھا جب کہ مطیع الرحمان نے اپیل مسترد ہونے پر بنگلادیشی صدر سے رحم کی اپیل نہیں کی تھی۔
خبر ایجنسی کے مطابق بنگلا دیش کے وزیر قانون نے بتایا کہ مطیع الرحمان نظامی کو 1971 میں جنگی جرائم کے ارتکاب میں پھانسی دی گئی ہے جہاں سینٹرل جیل ڈھاکا میں انہیں تختہ دار سے لٹکایا گیا۔ خبر ایجنسی کے مطابق مطیع الرحمان کی پھانسی پر ڈھاکا میں ان کے حامیوں نے احتجاجی مظاہرے بھی کیے جب کہ پھانسی سے قبل مظاہروں کے باعث سخت سکیورٹی انتظامات کیے گئے اور سینٹرل جیل جانے والے تمام راستے بلاک کرکے ان پر پولیس کی بھاری نفری تعینات کی گئی تھی۔


Comments

FB Login Required - comments

3 thoughts on “بنگلا دیش : سابق امیر جماعت اسلامی مطیع الرحمان نظامی کو پھانسی دے دی گئی

  • 11-05-2016 at 11:10 am
    Permalink

    البدر اور الشمس نامی دہشتگرد تنظیموں کے بانیوں اور ان کے اہلکاروں کے ساتھ ایسا ہی سلوک ہونا چاہیے۔ پاکستان میں طالبان کی حمایت میں ریلی نکالنے والوں اور ہزاروں پاکستانیوں کی موت پر خاموش رہنے والوں کے ساتھ بھی ایسا ہی سلوک ہوگا، جلد یا بدیر۔

  • 11-05-2016 at 3:30 pm
    Permalink

    جسے تم پاکستان کے دشمن کہتے ہو اس کی وجہ سے ابھی تک پاکستان کا ایک انچ کسی دشمن کے قبضے میں نہیں گیا اور جنہیںں تم ملک کے دوست، پاکستان کے خیرخواہ اور محافظ کہتے ہو، ان کے کارناموں سے آدھا ملک کھو گیا۔ سچ کو جاننے اور ماننے کے لئے عقل کے علاوہ خودی اور غیرت کی ضرورت ہوتی ہے، جو تم جیسوں میں نہیں ہے۔ لکیر کے فقیربنے رہو، مطالعہ پاکستان کے پروپیگنڈے کو سچ مان کر مر جاو۔

Comments are closed.