سفارتی کشیدگی: سعودی عرب نے کہا ہے کینیڈا ’بڑی غلطی‘ درست کرے جبکہ کینیڈا کا معافی مانگے سے انکار


جسٹن

AFP

کینیڈا اور سعودی عرب کے درمیان سفارتی کشیدگی میں سعودی عرب نے کہا ہے کہ ثالثی کی گنجائش نہیں اور کینیڈا کو معلوم ہے کہ ’بڑی غلطی‘ کی درست کرنے کے لیے کیا کرنا ہے جبکہ کینیڈا نے معافی مانگنے سے انکار کر دیا ہے۔

کینیڈا کے وزیر اعظم جسٹن ٹروڈو نے سعودی عرب کے انسانی حقوق پر تشویش کا اظہار کرنے پر معافی مانگنے سے انکار کر دیا ہے۔

مونٹریول میں پریس کانفرنس کرتے ہوئے جسٹن ٹروڈو نے کہا ’کینیڈا ہمیشہ بھرپور اور واضح انداز میں نجی اور سب کے سامنے انسانی حقوق کے سوال پر بولتا رہے گا۔ ہم سعودی عرب کے ساتھ خراب تعلقات نہیں چاہتے۔ کینیڈا تسلیم کرتا ہے کہ سعودی عرب نے انسانی حقوق کے معاملے پر کافی کام کیا ہے۔‘

سعودی ایئر لائنز نے ٹورونٹو کے لیے پروازیں معطل کر دیں

سعودی شہزادی کی تصویر چھاپ کر ٹھیک کیا: ووگ

’انٹرنیٹ پر جان کی دھمکیاں دی جا رہی ہیں‘

انھوں نے مزید کہا کہ کینیڈا کی وزیر خارجہ کرسٹیا فریلینڈ کی منگل کو سعودی وزیر خارجہ عادل الجبیر سے تفصیلی بات چیت ہوئی ہے تاکہ اس معاملے کو حل کیا جا سکے۔

انھوں نے مزید کہا ’سفارتی سطح پر بات چیت ہوتی رہے گی ۔۔۔ ضروری نہیں ہے کہ ہماری سعودی عرب کے ساتھ خراب تعلقات ہوں۔ سعودی عرب دنیا کا ایک اہم ملک ہے جو انسانی حقوق کے حوالے سے کام کر رہا ہے۔‘

’کینیڈا کی بڑی غلطی‘

سعودی عرب اور کینیڈا کے درمیان سفارتی کشیدگی میں مزید اضافہ ہوا ہے اور سعودی عرب نے کہا ہے کہ ثالثی کی کوئی گنجائش نہیں ہے اور کینیڈا کو معلوم ہے کہ ’اپنی بڑی غلطی‘ کی درست کرنے کے لیے کیا کرنا ہے۔

سعودی وزیر خارجہ عادل الجبیر نے بدھ کو پریس کانفرنس کرتے ہوئے کہا کہ ’ثالثی کرنے کو کچھ نہیں ہے۔ ایک غلطی سرزد ہوئی ہے اور اس غلطی کو درست کرنا ہے۔‘

دونوں ممالک کے درمیان تعلقات مزید خراب ہونے کا عندیہ اس بات سے ملتا ہے کہ سعودی وزیر خارجہ نے کہا سعودی عرب کینیڈا کے خلاف مزید اقدامات لینے کے حوالے سے سوچ رہا ہے۔ تاہم انھوں نے تفصیلات نہیں دیں۔

یاد رہے کہ کینیڈا نے سعودی عرب میں انسانی حقوق کے کارکنوں کی گرفتاری پر تشویش کا اظہار کیا تھا۔

الجبیر

Reuters

سعودی عرب نے کینیڈا پر ملک کے داخلی معاملات میں ‘مداخلت’ کرنے کا الزام عائد کرتے ہوئے کینیڈا کے سفیر کو ملک چھوڑنے کا حکم دیا جبکہ کینیڈا میں تعینات سعودی سفیر کو بھی واپس بلا لیا۔

پریس کانفرنس میں انسانی حقوق کے کارکنوں کی گرفتاری کے حوالے سے پوچھے گئے سوال کے جواب میں عادل الجبیر نے کہا ان کے خلاف جو الزامات لگے ہیں ان کو منظر عام پر اس وقت لایا جائے گا جب یہ کیس عدالت پہنچیں گے۔

انھوں نے ایک بار پھر ان کارکنان کے خلاف عائد کیے جانے والے الزامات کو دہراتے ہوئے کہا کہ یہ کارکنان غیر ملکیوں کے ساتھ رابطے میں تھے۔

’یہ معاملہ انسانی حقوق کا نہیں ہے بلکہ قومی سلامتی کا ہے۔‘

سعودی

EPA

ایک اور سوال کے جواب میں وزیر خارجہ نے کہا کہ سعودی عرب میں کینیڈا کی سرمایہ کاری محفوظ ہے اور اس کشیدگی کا سرمایہ کاری پر اثر نہیں پڑے گا۔

منگل کو برطانوی خبر رساں ایجنسی روئٹرز نے کہا تھا کہ کینیڈا اس سفارتی کشیدگی کو ختم کرنے کے لیے متحدہ عرب امارات اور برطانیہ کی مدد حاصل کرے گا۔

روس نے کینیڈا اور سعودی عرب کے درمیان سفارتی جنگ میں سعودی عرب کی حمایت کرتے ہوئے کینیڈا سے کہا ہے کہ یہ بات باقابل قبول ہے کہ وہ سعودی عرب کو انسانی حقوق پر لیکچر دے۔

سعودی عرب نے کینیڈا کے ساتھ تجارت کو منجمد کرنے کے علاوہ مریضوں کو بھی کینیڈا بھیجنا بند کر دیا ہے۔ سعودی حکام کینیڈا کے ہسپتالوں میں موجود سعودی مریضوں کو منتقل کرنے پر کام کر رہے ہیں۔

تاہم ابھی یہ واضح نہیں کہ کتنے سعودی مریض اس فیصلے سے متاثر ہوں گے۔

image_pdfimage_print
Comments - User is solely responsible for his/her words


اگر آپ یہ سمجھتے ہیں کہ ”ہم سب“ ایک مثبت سوچ کو فروغ دے کر ایک بہتر پاکستان کی تشکیل میں مدد دے رہا ہے تو ہمارا ساتھ دیں۔ سپورٹ کے لئے اس لنک پر کلک کریں

بی بی سی

بی بی سی اور 'ہم سب' کے درمیان باہمی اشتراک کے معاہدے کے تحت بی بی سی کے مضامین 'ہم سب' پر شائع کیے جاتے ہیں۔

british-broadcasting-corp has 4872 posts and counting.See all posts by british-broadcasting-corp