شام کے صوبے ادلب میں عمارت دھماکے سے گر گئی، کم از کم 39 افراد ہلاک


Destroyed building in Sarmada, Syria. Photo: 12 August 2018

AFP/Getty Images
امدادی کارکنوں نے بلڈوزروں کی مدد سے لوگوں کو ملبے سے نکالا

اطلاعات کے مطابق شام کے صوبے ادلب میں دھماکے کے نتیجے میں عمارت گر جانے سے کم از کم 39 افراد ہلاک ہو گئے ہیں جن میں 12 بچے بھی شامل ہیں۔

اطلاعات کے مطابق سرمدا قصبے میں واقع اس عمارت میں اسلحے کے ایک سمگلر نے بڑی مقدار میں گولہ بارود چھپا رکھا تھا۔

حالیہ مہینوں میں شام کی سرکاری فوج نے روس اور ایران کے تعاون سے ملک کے بڑے حصے سے باغیوں اور جہادی تنظیموں کا صفایا کر دیا ہے۔

یہ بھی پڑھیے

شام میں جنگ کیوں ہو رہی ہے؟

تاہم ادلب صوبے کے بڑے حصے پر اب بھی باغیوں کا غلبہ ہے اور امکان ہے کہ شامی فوج یہاں جلد ہی کارروائیاں شروع کرنے والی ہے۔

اتوار کو امدادی کارکنوں سرمدا میں بلڈوزروں کی مدد سے ملبہ ہٹا کر پھنسے ہوئے لوگوں کو باہر نکالا۔

خبررساں ادارے اے ایف پی نے شہری دفاع کے ایک کارکن حاتم ابو مروان کے حوالے سے کہا ہے کہ ‘عام شہریوں سے بھری عمارت ملبے کا ڈھیر بن گئی ہے۔’

ادھر برطانیہ میں قائم انسانی حقوق کی تنظیم برائے شام نے کہا کہ درجنوں لوگ اب بھی لاپتہ ہیں۔

بعض اطلاعات کے مطابق مرنے والوں کی تعداد میں خاصا اضافہ ہو سکتا ہے۔

خیال کیا جا رہا ہے کہ عمارت میں جہادیوں کے خاندانوں کے افراد مقیم تھے جنھوں نے شام کے دوسرے حصوں سے نکالے جانے کے بعد ادلب میں پناہ لے رکھی ہے۔

دھماکے کی وجہ فی الحال معلوم نہیں ہو سکی۔

image_pdfimage_print
Comments - User is solely responsible for his/her words


اگر آپ یہ سمجھتے ہیں کہ ”ہم سب“ ایک مثبت سوچ کو فروغ دے کر ایک بہتر پاکستان کی تشکیل میں مدد دے رہا ہے تو ہمارا ساتھ دیں۔ سپورٹ کے لئے اس لنک پر کلک کریں

بی بی سی

بی بی سی اور 'ہم سب' کے درمیان باہمی اشتراک کے معاہدے کے تحت بی بی سی کے مضامین 'ہم سب' پر شائع کیے جاتے ہیں۔

british-broadcasting-corp has 4883 posts and counting.See all posts by british-broadcasting-corp