نظامِ انہضام کو دوسرا دماغ کیوں کہا جاتا ہے؟ جانیے سات دلچسپ حقائق


ایک خاتون کے پیٹ پر آنتوں کی تصویر

Getty Images
ہمارے پیٹ کو اس کی ضرورتوں کے لیے دماغ کے مشورے کی ضرورت نہیں

آپ کے جسم کے کس حصے میں ریڑھ کی ہڈی کے ساتھ والی سپائنل کورڈ یا حرام نس سے بھی زیادہ نیورون ہوتے ہیں اور وہ مرکزی نظام عصبی کے تحت کام کرنے کے بجائے آزادانہ طور پر کام کرتے ہیں۔

شاید معدے کی آنت آپ کا پہلا جواب نہیں تھا۔ لیکن ہماری آنتیں لاکھوں کروڑوں نیورون سے جڑی ہوئی ہیں اور شاید اسی لیے اسے ہمارے ‘دوسرے دماغ’ کا نام دیا گیا ہے۔

یہ بھی پڑھیے

آنتوں کے بیکٹریا کینسر کے علاج میں مددگار

کھانا بنانے کی شوقین ایک بغیر پیٹ والی لڑکی!

کیا پروٹین سے وزن کم کیا جا سکتا ہے؟

کیمرہ کیپسول، چھوٹی آنت کی بیماری کا پتہ چلانے کی ’دوا‘

ہمارے نظامِ انہظام کے پاس ہم جو کھاتے ہیں اسے پراسیس کرنے کے علاوہ اور بھی کام ہیں۔ اس میں آباد اور پلنے والے جرثومے ہماری صحت اور طبیعت کو متاثر کر سکتے ہیں۔

سائنسدان اس بات کے متعلق تحقیق کر رہے ہیں کہ آیا آنتوں کی صحت کو بہتر بنانے سے کیا ہمارے مدافعتی نظام میں کچھ مدد مل سکتی ہے اور کیا اس سے ذہنی بیماریوں کا علاج کا جا سکتا ہے۔

مندرجہ ذیل میں ہماری آنتوں کے بارے میں چند حیرت انگیز حقائق دیے جا رہے ہیں:

1. یہ ایک خود مختار نظام اعصاب ہے

معدے کے جراثیم

Getty Images
ہمارے معدے میں اربوں کھربوں بیکٹریا ہوتے ہیں اور وہ ہم جو کھاتے ہیں ان کے ہاضمے کے لیے کام کرتے ہیں

‘گٹ ہیلتھ ڈاکٹر’ کی مصنفہ اور معدے کی صحت میں پی ایچ ڈی کرنے والی ڈائٹیشیئن ڈاکٹر میگن روسی کہتی ہیں: ‘ہمارے جسم میں دوسرے اعضا سے مختلف ہماری آنتیں اپنے طور پر کام کر سکتی ہیں۔ وہ اپنا فیصلہ کرنے کی مجاز ہیں اور انھیں اس کے لیے دماغ کے مشورے کی ضرورت نہیں۔’

ان کے خود مختار دماغ کو معائی اعصابی نظام (ای این ایس) کہا جاتا ہے جو مرکزی اعصابی نظام (سی این ایس) کی ایک ذیلی شاخ ہے اور یہ پورے طور پر معدے اور آنت کی حرکات و سکنات کے لیے ذمہ دار ہے۔

یہ نظام نیورونز کے ایک جال نما نیٹورک کی طرح نظر آتا ہے جو پیٹ اور نظامِ انہظام میں قطار اندر قطار نظر آتے ہیں۔

عام طور پر ای این ایس ہمدرد اور غیر ہمدرد نظام اعصاب کے ذریعے سی این ایس سے رابطہ کرتا ہے۔

2. ہمارے مدافعتی نظام کے 70 فیصد خلیے ہمارے معدے میں ہوتے ہیں

ایک خاتون سوالیہ نشان کے ساتھ

Getty Images
آپ کے نیورونز صرف آپ کے دماغ میں نہیں ہوتے ہیں

ڈاکٹر روسی کا کہنا ہے کہ ‘اسی سبب ہمارے معدے کی صحت بیماریوں کے خلاف ہمارے مدافعتی نظام کو بہتر بنانے کے لیے انتہائی اہمیت کی حامل ہے۔’

حالیہ تحقیق سے پتہ چلتا ہے کہ معدے اور آنتوں کے مسائل سے انسان کے بخار جیسی عام بیماریوں کے زد میں آنے کا امکان بڑھ جاتا ہے۔

3. ہمارا 50 فیصد فضلہ بیکٹریا ہیں

ہمارے جسم سے نکلنے والے فضلے صرف ہمارے کھانے کے بچے ہوئے حصے نہیں ہیں۔

ان میں پائے جانے والے بہت سے بیکٹریا درحقیقت ہمارے جسم کے لیے بہتر ہوتے ہیں۔

اسی سب فضلے کا ٹرانسپلانٹ ان لوگوں کے لیے بہتر علاج ثابت ہو سکتا ہے جن کے پیٹ میں زیادہ ‘خراب’ بیکٹریا پیدا ہو گئے ہیں۔

اس علاج کو ‘سٹول ٹرانسپلانٹ’ بھی کہتے ہیں جس کے تحت صحت مند شخص کا صحت مند بیکٹریا والا فضلہ بیمار شخص میں ڈالا جاتا ہے۔

چونکہ ہم معدے پر گفتگو کر رہے تھے اس لیے ہم نے ڈاکٹر روسی سے پوچھا کہ ایک شخص کو کتنی بار ٹوائلٹ جانا چاہیے۔

انھوں نے کہا کہ ‘تحقیق کے مطابق ایک دن میں تین بار سے لے کر ایک ہفتے میں تین بار تک پاخانے جانے کو نارمل کہا جاتا ہے۔’

4. آپ کے معدے کے جرثوموں کی صحت کو مختلف النوع کے کھانے بہتر بناتے ہیں

سبزیاں

BBC
آپ کے پیٹ کے بیکٹریا کو انواع و اقسام کے کھانے پسند آتے ہیں

ہمارے معدے میں اربوں کھربوں مائکروبز کا بسیرا ہے۔ یہ اہمیت کے حامل ہیں کیونکہ یہ بعض مقوی غذاؤں کو ہضم کرنے میں ہماری مدد کرتے ہیں۔

جراثیم کا ہر گروہ مختلف قسم کے کھانے پر پھلتا پھولتا ہے۔ اس لیے انواع و اقسام کے کھانے سے آپ کے معدے کی صحت بہتر ہوتی ہے اور یہ آپ کی اچھی صحت سے منسلک ہے۔

ڈاکٹر روسی کہتی ہیں کہ ‘مائکروبز ہمارے چھوٹے پالتو جانوروں کی طرح ہیں جسے آپ پالنا چاہتے ہیں اور اس کی دیکھ بھال کرتے ہیں۔’

جو لوگ ہمیشہ ایک ہی قسم کا کھانا کھاتے ہیں ان کے معدے میں کمزور قسم کے مائکروبز ہوتے ہیں۔

5. آپ کی آنتیں آپ کے موڈ سے مربوط ہیں

ڈاکٹر روسی کہتی ہیں کہ اگر آپ کو معدے کی شکایت ہے تو یہ دیکھنا بہتر ہوگا کہ آپ کس قدر تناؤ میں ہیں۔

انھوں نے کہا: ‘میں اپنے طریقۂ علاج میں اپنے مریضوں کو ہمیشہ روزانہ 15 سے 20 منٹ تک مراقبہ یا دھیان کرنے کی ترغیب دیتی ہوں۔ اور جب وہ چار ہفتوں تک روزانہ اس کی پابندی کرتے ہیں تو ہم ان کی علامات میں بہتری پاتے ہیں۔’

صحت مند بیکٹریا والی غذائيں

Getty Images
کھانے جو اچھے بیکٹریا کو پیدا کرنے میں معاون ہوتے ہیں ان کے بارے میں جاننا تحقیق کا اہم میدان ہے

وہ کہتی ہیں کہ ‘تناؤ کو کم کرنا اور ختم کرنا واقعتاً بہت اہم ہے۔’

ہمارے موڈ اور ہمارے معدے کو جو چیز جوڑتی ہے وہ 80 سے 90 فیصد تک نظام ہاضمہ میں بننے والے سیروٹونین ہیں۔

سیروٹونین ایک کیمیائی پیغامبر ہے جو آنتوں کے ساتھ جسم کے کئی کام کو متاثر کرتا ہے۔

یہ نفسیاتی بےترتیبی سے بھی منسلک ہے۔

طویل مدتی دباؤ سے سیروٹونین کی سطح کم ہو سکتی ہے جو ہمارے موڈ کے ساتھ ہمارے جذباتی حالات، تشویش اور خوشی کو متاثر کر سکتے ہیں۔

پیٹ درد

Getty Images
اگر آپ کو کسی غذا سے ڈر لگتا ہے تو اس کے کھانے پر آپ کے پیٹ میں تکلیف ہو سکتی ہے

6. اگر آپ کے اہل خانہ کسی غذا کو آپ کے لیے مضر سمجھتے ہیں تو آپ اس کو محسوس کرنے لگیں گے

بعض لوگوں کے معدے بہت حساس ہوتے ہیں۔

لیکن ڈاکٹر روسی کا کہنا ہے کہ تازہ تحقیق سے پتہ چلا ہے کہ اگر آپ کسی مخصوص غذا کے کھانے سے ڈرتے ہیں تو اس کے کھانے کے بعد آپ کو اس سے تکلیف ہو سکتی ہے۔

انھوں نے کہا: ‘ہم دیکھتے ہیں کہ کس طرح کوئی بات جس پر آپ کا یقین ہے وہ آپ کے معدے کے لیے مسائل کھڑا کر دیتا ہے۔’

بہت سے لوگوں کا خیال ہے کہ گلوٹن یا دودھ کے اجزا ان کے لیے مضر ہیں اور اگر ان کا نظام واقعتا اس کو نہ برداشت کرنے والا یا اس سے الرجک نہیں بھی ہے تو بھی ان غذاؤں کے کھانے کے بعد ان کو مسئلہ پیدا ہو سکتا ہے۔

7. آپ اپنے ہاضمے کی صحت کو بہتر بنا سکتے ہیں

ڈاکٹر روسی نے خوش معدے کے لیے بعض عادات کو اپنانے کا مشورہ دیا ہے جو درج ذیل ہیں:

  • مختلف اقسام کی غذائيں کھائیں تاکہ آپ کے معدے میں پلنے والے بیکٹریا مختلف النوع ہوں
  • اپنے طبیعت کے حساب سے اپنے دباؤ کو کم کرنے کے طریقے اپنائیں جیسے مراقبہ کریں، آرام کریں، ذہن کو مرکوز کریں یا یوگا کریں۔
  • اگر آپ کو پہلے سے ہی معدے کی تکلیف ہے تو شراب نوشی، کیفین اور مسالے دار کھانوں سے بچیں۔ یہ چیزیں آپ کے مسائل کو بڑھا سکتی ہیں۔
  • بہتر نیند لینے کی کوشش کریں۔

ایک تحقیق میں یہ بات سامنے آئی ہے کہ اگر آپ اپنے سونے کے اوقات کو تبدیل کرتے ہیں تو اس سے آپ کے معدے کے جراثیم کا نظام بھی متاثر ہوتا ہے۔ یاد رکھیں کہ آپ کو ان کا اچھی طرح سے خیال رکھنے کی ضرورت ہے۔

image_pdfimage_print
Comments - User is solely responsible for his/her words


اگر آپ یہ سمجھتے ہیں کہ ”ہم سب“ ایک مثبت سوچ کو فروغ دے کر ایک بہتر پاکستان کی تشکیل میں مدد دے رہا ہے تو ہمارا ساتھ دیں۔ سپورٹ کے لئے اس لنک پر کلک کریں

بی بی سی

بی بی سی اور 'ہم سب' کے درمیان باہمی اشتراک کے معاہدے کے تحت بی بی سی کے مضامین 'ہم سب' پر شائع کیے جاتے ہیں۔

british-broadcasting-corp has 5716 posts and counting.See all posts by british-broadcasting-corp