سماجی کارکن گلالئی اسماعیل سے ایف آئی اے کی پوچھ گچھ


گلالئی اسماعیل

BBC
گلالئی اسماعیل ڈیڑھ دہائی سے زیادہ عرصے سے پاکستان میں نوجوانوں خصوصاً لڑکیوں کے حقوق کے لیے سرگرم ہیں

پاکستان میں نوجوانوں اور خواتین کے حقوق کے لیے سرگرم سماجی کارکن گلالئی اسماعیل کو ایف آئی اے کے حکام اسلام آباد کے ہوائی اڈے سے اپنے ساتھ لے گئے ہیں اور ان کے والد کے مطابق ایف آئی اے ہیڈکوارٹر میں ان سے پوچھ گچھ کا سلسلہ جاری ہے۔

گلالئی اسماعیل لندن سے واپس پاکستان پہنچی تھیں اور انھوں نے ہوائی اڈے سے بی بی سی کے خدائے نور ناصر کو بتایا کہ وطن واپسی پر انھیں بتایا گیا ہے کہ ان کا نام ای سی ایل میں شامل ہے۔

یہ بھی پڑھیں

گلالئی اسماعیل کے لیے دولتِ مشترکہ کا یوتھ ایوارڈ

پشتون تحفظ موومنٹ کے کارکن حیات پریغال کی ضمانت منظور

’منظور پشتین نے ہمارا خوف ختم کر دیا ‘

’پشتون تحریک کو دشمن قوتیں استعمال کر رہی ہیں‘

گلالئی کا کہنا تھا کہ انھیں ایف آئی اے کے حکام اپنے ساتھ لے جا رہے ہیں تاہم ایف آئی اے کی جانب سے تاحال اس بارے میں کوئی بیان جاری نہیں کیا گیا۔

گلالئی کے والد نے بی بی سی کو بتایا کہ وہ اپنی بیٹی کے ہمراہ ایف آئی اے ہیڈکوارٹر میں موجود ہیں جہاں گلالئی سے سوال و جواب کا سلسلہ جاری ہے۔

تاحال یہ واضح نہیں کہ حکام گلالئی سے کن معاملات پر تفتیش کر رہے ہیں اور ان کا نام ایگزٹ کنٹرول لسٹ میں کیسے اور کس وجہ سے شامل کیا گیا۔

https://twitter.com/mjdawar/status/1050640488930324481

گلالئی پشتون تحفظ موومنٹ کی بھی سرگرم حمایتی ہیں اور وہ باقاعدگی سے تحریک کے جلسوں میں شرکت بھی کرتی رہی ہیں۔ انھیں حراست میں لیے جانے کے بعد سوشل میڈیا پر بھی ردعمل سامنے آیا ہے اور رکن قومی اسمبلی محسن داوڑ سمیت پی ٹی ایم کے حمایتیوں نے ان کی فوری رہائی کا مطالبہ کیا ہے۔

گلالئی اسماعیل ڈیڑھ دہائی سے زیادہ عرصے سے پاکستان میں نوجوانوں خصوصاً لڑکیوں کے حقوق کے لیے سرگرم ہیں اور انھیں 2015 میں دولتِ مشترکہ کے یوتھ ایوارڈ سے بھی نوازا گیا تھا۔ اس سے قبل 2014 میں انھیں انٹرنیشنل ہیومنسٹ ایوارڈ بھی ملا تھا۔

گلالئی اسماعیل نے 16 سال کی عمر میں ‘اویئر گرلز’ نامی غیر سرکاری تنظیم کی بنیاد رکھی تھی تاکہ نوجوان لڑکیوں کو اُن کے حقوق کے بارے میں آگاہی فراہم کی جا سکے۔

2013 میں انھوں نے ایک سو خواتین پر ایک ٹیم بھی تشکیل دی جس نے گھریلو تشدد اور کم عمری کی شادیوں جیسے معاملات پر کام کیا تھا۔

image_pdfimage_print
Comments - User is solely responsible for his/her words


اگر آپ یہ سمجھتے ہیں کہ ”ہم سب“ ایک مثبت سوچ کو فروغ دے کر ایک بہتر پاکستان کی تشکیل میں مدد دے رہا ہے تو ہمارا ساتھ دیں۔ سپورٹ کے لئے اس لنک پر کلک کریں

بی بی سی

بی بی سی اور 'ہم سب' کے درمیان باہمی اشتراک کے معاہدے کے تحت بی بی سی کے مضامین 'ہم سب' پر شائع کیے جاتے ہیں۔

british-broadcasting-corp has 6057 posts and counting.See all posts by british-broadcasting-corp