ہندو انتہا پسند تنظیمیں پاک بھارت تعلقات میں سب سے بڑی رکاوٹ ہیں : چودھری نثار


\"chوزیر داخلہ چودھری نثار نے کہا ہے کہ پاک بھارت تعلقات کے حوالے سے بھارتی وزیر خارجہ کا بیان حیران کن ہے۔ سشما سوراج پہیلیوں میں بات کرنے کے بجائے بتائیں کہ کون سی طاقتیں ہیں جو تعلقات کی بحالی نہیں چاہتی۔
وزیرِ داخلہ چوہدری نثار نے کہا کہ اگر بھارتی وزیرِ خارجہ پاک بھارت تعلقات کے بارے میں اتنی ہی سنجیدہ اور پر عزم ہیں تو انھیں اس پر سیاسی پوائنٹ سکورنگ نہیں کرنی چاہیے تھی۔ کھل کر وضاحت کرنی چاہیے تھی کہ ان کے نزدیک وہ کون سی طاقتیں ہیں جو پاک بھارت تعلقات کی بحالی نہیں چاہتی۔ چودھری نثار نے کہا کہ پاکستان کے نزدیک تعلقات معمول پر لانے میں سب سے بڑی رکاوٹ آر ایس ایس، شیو سینا جیسی ہندو انتہا پسند تنظیمیں اور انکے بھارتی حکومت سے تعلقات اور اثر و رسوخ ہے۔ اگر بھارتی حکومت سنجیدہ ہے تو اس نے مذاکرات کے دروازے اتنے عرصے سے کیوں بند کر رکھے ہیں۔ وزیرِ داخلہ نے کہا کہ بھارت کی پاکستان دوستی کی پالیسی تو امریکی کانگریس میں وزیراعظم مودی کی تقریر کے ایک ایک لفظ سے عیاں ہو گئی تھی۔ چودھری نثار نے واضح کیا کہ وزیرِاعظم پاکستان کے کسی بھی ملک یا سربراہ حکومت سے تعلقات پاکستان کے مفادات سے منسلک ہیں۔ بھارتی وزیرِ خارجہ کا انہیں ذاتی رنگ دینا کسی طور مناسب نہیں۔


Comments

'ہم سب' کا کمنٹس سے متفق ہونا ضروری نہیں ہے۔ کمنٹ کرنے والا فرد اپنے الفاظ کا مکمل طور پر ذمہ دار ہے اور اس کے کمنٹس کا 'ہم سب' کی انتظامیہ سے کوئی تعلق نہیں ہے۔