جدوجہد آزادی میں ولی الہی جماعت کا کردار


تاریخ عالم میں کچھ ایسی ہستیوں کا ظہور ہوتا آیا ہے جو اپنے فکر و عمل کی خوشبو سے جہانِ بے رونق میں زندگی کی نئی لہر پیدا کر دیتی ہیں۔ اُن کی زندگی انسانیت کے لئے کسی مسیحا سے کم نہیں ہوتی وہ اپنے علم کی شمع لئے عمل کے راستے پر چل کر دکھی انسانیت کے اخلاق کی درستگی کو اپنا نصب العین بناتے ہوئے انھیں معاشرے کا کار آمد جزو بناتی ہیں۔

عصر حاضر کی وہ مجدد شخصیت جس نے انسانیت کی ترقی کو پیش نظر رکھا، جنہوں نے دین اسلام کی جامعیت (شریعت، طریقت اور سیاست) کی اساس پر نظام کی تشکیل کی دعوت بلاتفریق رنگ، نسل اور مذہب دی ان کو تاریخ امام شاہ ولی اللہ‎ کے نام سے یاد کرتی ہے۔

عالم گیر کی وفات کے بعد ہندوستان بتدریج زوال کا شکار ہو رہا تھا۔ انگریز دن بدن ہندوستان پر اپنا تسلط مضبوط کر رہا تھا۔ اسلامی نظام اپنے آخری ایام گزار رہا تھا۔ اِس وقت ضرورت تھی کہ اس پرانے نظام کو جس کی بدولت غلامی کے گھٹا ٹوپ اندھیرے چھائے جارہے تھے اُس کوجڑ سے اکھاڑ پھینکا جائے۔ امام شاہ ولی اللہ‎ کی حکیمانہ بصیرت نے یہ دیکھ لیا کہ اب موجودہ نظام انسانیت کو ترقی دینے میں ناکام ہو چکا ہے لہٰذا اسے فوراً بدلا جائے اور اس کے لئے ہر شخص جدوجہد اور کوشش کرے۔ چنانچہ آپ نے ”فک کل نظام“ کا نظریہ پیش کیا۔ آپ نے یہ واضح کیا کہ انسانیت کی ترقی کا جامع اسلامی نظام کیا ہے اور سوسائٹی کی اجتماعی ترقی اس کے بغیر کیوں ناگزیر ہے۔

انگریز جو ہندوستان میں آیا تو تجارت کی غرض سے تھا مگر یہاں کی دولت دیکھ کر ہوس کا شکار بن بیٹھا اور یہاں کے ہر سیاہ و سفید کا مالک بن گیا۔ اُس نے ہندوستانیوں کے ساتھ جو ظلم و ستم روا رکھا اس کی داستان تاریخ میں نہیں ملتی۔ یہاں کی دولت لوٹی، معدنیات اورنباتات پر قبضہ کیا، مقامی صنعتوں اور منڈیوں کو آگ لگا دی، معاشی نظام برباد کر دیا اور تہذیب و ثقافت کے پرخچے اڑا دیے۔

ان حالات کے پیش نظر ولی الہی جماعت ہاتھ پر ہاتھ دھرے نہیں بیٹھ سکتی تھی۔ چنانچہ اس جماعتِ حقہ نے انگریزوں کے مظالم کے خلاف نہ صرف آواز بلند کی بلکہ عملی میدان میں بھی سیسہ پلائی ہوئی دیوار بن کر مقابلہ کیا۔

یہی جماعت آگے چل کر 1831 ء میں معرکہ بالاکوٹ میں سکھوں کے خلاف لڑتی ہے اور سید احمد شہید جیسے اس جماعت کے سرخیل جام شہادت نوش کرتے ہیں۔ 1857 ء کی جنگ آزادی کو کون بھول سکتا ہے جس کی تاریخ انگریزوں کی سفاکیوں سے بھری ہوئی ہے۔ جس میں ہزاروں علماء اور قومی راہنماؤں کو بے دریغ قتل کیا گیا۔ اِن حالات میں کہ جہاں آزادی کا نام بغاوت تھا اور سر اٹھانے والے کی سزا موت سے کم نہ تھی۔ ولی الہی جماعت کے بزرگوں نے تھانہ بھون اور شاملی کے میدان میں انگریز کے خلاف مردانہ وار مقابلہ کرتے ہوئے اپنی جانوں کا نذرانہ پیش کیا۔

1857 ء کی جنگ آزادی کی بظاہر ناکامی کے بعد ولی الہی جماعت نے انگریز سے مزاحمت کی تیاری کے لئے 1866 ء میں ضلع سہارن پور میں دیوبند کے مقام پر ایک مدرسہ کی بنیاد رکھی۔ جہاں علوم اسلامیہ کے ساتھ ساتھ ریاضی، فلسفہ، منطق، طب اور علوم عمرانیات کے علاوہ دیگر عصری علوم بھی پڑھائے جاتے تھے۔ دار العلوم دیوبند کے فارغ التحصیل شیخ الہند مولانا محمود الحسن سے کون واقف نہیں کہ جن کی قیادت میں 1908 میں ”جمیعت الانصار“ کا قیام عمل میں لایا گیا۔ یہ جمعیت انگریز سامراج کے خلاف فضلائے دیوبند کو منظم کرنے اور عوام میں ولی الہی افکار کے فروغ کے لئے کام کرتی رہی۔ جس نے 1913 میں ایک تحریک کی صورت اختیار کرلی جسے ”تحریک ریشمی رومال“ کے نام سے یاد کیا جاتا ہے۔

تحریک ریشمی رومال حکومت برطانیہ کے خلاف آزادی کی ایک خفیہ تحریک تھی جس کا مقصد مختلف ممالک کو حکومتِ برطانیہ کے خلاف اکٹھا کرنا تھا۔ جس میں پیغامات خفیہ طور پر ریشمی رومال پر لکھ کر بھیجے جاتے تھے۔ اِس تحریک کی قیادت مولانا عبیداللہ سندھی کے ہاتھ میں تھی۔ اس تحریک کی اہمیت کا اندازہ اس بات سے ہوتا ہے کہ جب حکومتِ برطانیہ کو اِس کا پتا چلا تو اُن کے ایوانوں میں کھلبلی مچ گئی جس کے ردِعمل میں حکومت برطانیہ نے رولٹ ایکٹ نافذ کر دیا اور ظلم و جبر کو قانونی حیثیت دی گئی۔ لوٹ مار اور قتل و غارت گری کا بازار گرم کیا گیا۔ آزادی رائے پر پابندی لگا دی گئی۔ رولٹ ایکٹ کے نفاذ کے بعد پورے ملک میں انگریز سامراج کے خلاف ایجیٹیشن شروع ہوئی۔

اسی دوران امرتسر میں جلیاں والا باغ کا دہشت ناک حاذثہ پیش آتا ہے جس کی بدولت عوام خوابِ غفلت سے بیدار ہوتے ہیں اور ان میں آزادی کی لہر دوڑ گئی۔ اس کے نتیجے میں سول نافرمانی کی تحریک ہندوستان کے طول و عرض میں پھیل جاتی ہے۔

تحریک ریشمی رومال ہندوستانیوں میں آزادی کی نہ ختم ہونے والی لہر پیدا کر دیتی ہے جو بعد میں تحریک خلافت میں تبدیل ہوجاتی ہے اور بالآخر ہندوستان اپنی آزادی حاصل کرتا ہے۔ جنوری 2013 ء میں انڈیا کے صدر پرناب مکھرجی نے تحریک ریشمی رومال اور قائدین کی قربانیوں کو سراہتے ہوئے ایک ڈاک ٹکٹ کا اجرا کیا۔

گویا یہ امام شاہ ولی اللہ‎ کی جماعت ہی تھی جس نے آزادی کی شمع کو کبھی بجھنے نہ دیا اور انگریز سامراج کے خلاف اپنی جانیں تک قربان کر دیں۔

دور حاضر میں امام شاہ ولی اللہ‎ کے افکار کی ترویج اور اسے نوجوان نسل تک پہنچانے کے لئے حضرت شاہ سعید احمد رائے پوری نے لاہور میں ”ادارہ رحیمیہ علوم قرآنیہ“ کی بنیاد رکھی۔ جو نوجوانوں کو مایوسی سے نکال کر فکر و عمل کی راہ دکھاتا ہے، موجودہ نظام کی خرابیاں اور اِس کے مقابل دین اسلام کی جامعیت (شریعت، طریقت اور سیاست) کی اساس پر نظام کی تشکیل کا درس دیتا ہے۔ اِس حوالے سے نوجوانوں کو اُن کی ذمہ داریوں سے آگاہ کرنا اور اُن کی تربیت کا اہتمام کرنا ادارہ رحیمیہ علوم قرآنیہ کے مقاصد میں شامل ہے۔ یونیورسٹیز اور کالجز کے ہزاروں طلباء اِس چشمہ ہدایت سے فیض یاب ہورہے ہیں اور اپنی انفرادی و اجتماعی زندگی میں معاشرے کا مفید کل پرزہ بن کر کام کر رہے ہیں۔

ضرورت اس امر کی ہے کہ آج ہم امام شاہ ولی اللہ‎ کے اُس فکر و نظریے کو سمجھیں جو ہر لحاظ سے جامع ہے۔ جس میں انبیا کی تعلیمات بھی سموئی ہوئی ہیں اور اُس کی اساس پر معاشرے کے سلگتے ہوئے مسائل کا سائنسی بنیادوں پر حل بھی لئے ہوئے ہے۔

آج ہمیں اپنے جمود کو توڑنا ہے، سستی اور کاہلی کو ختم کرنا ہے اور انسانیت کی ترقی کے جو بنیادی اصول امام شاہ ولی اللہ نے متعینکیے ہیں اُن کی روشنی میں خود کو تربیت کے لئے پیش کرنا اور ایک صالح جماعت کا حصہ بننا آج کے دور کا تقاضا ہے اور انسانیت کی فلاح کا ضامن ہے۔
اللہ ہمارا حامی و ناصر ہو۔

image_pdfimage_print
Comments - User is solely responsible for his/her words

طلحہ علیم کی دیگر تحریریں
طلحہ علیم کی دیگر تحریریں

اگر آپ یہ سمجھتے ہیں کہ ”ہم سب“ ایک مثبت سوچ کو فروغ دے کر ایک بہتر پاکستان کی تشکیل میں مدد دے رہا ہے تو ہمارا ساتھ دیں۔ سپورٹ کے لئے اس لنک پر کلک کریں