جرمنی میں اسلام پر کانفرنس میں سور کے گوشت کا کھانا دینے پر تنازع


خوراک

Getty Images

جرمنی کے شہر برلن میں اسلام کے بارے میں کانفرنس میں دیے گئے کھانے میں سور کے گوشت سے تیار ڈش پر تنازع پیدا ہو گیا ہے۔

اسلامک کونفرنس کے دوران کھانے میں سوسیج رکھے گئے تھے جس پر جرمنی کے وزارتِ داخلہ نے افسوس کا اظہار کیا ہے۔

وزارتِ داخلہ کے مطابق برلن میں منعقدہ جرمن اسلامک کانفرنس میں کھانے کا انتخاب مختلف مذاہب سے تعلق رکھنے والے افراد کی شرکت کو مدنظر رکھتے ہوئے کیا گیا تھا۔

وزارتِ داخلہ نے اس واقعے کہا ہے کہ’ اگر کسی شخص کے مذہبی جذبات مجروع ہوئے ہیں تو اس پر معافی مانگتے ہیں۔

اس کانفرنس کا انعقاد وزیر داخلہ ہورسٹ زیہوفر نے کیا تھا اور انھوں نے مارچ میں کہا تھا کہ’ اسلام کا تعلق جرمنی سے نہیں ہے۔‘

مقامی ذرائع ابلاغ کے مطابق کانفرنس کے شرکا میں زیادہ تعداد مسلمانوں کی تھی۔

اس بارے میں مزید پڑھیے

مسلم خیراتی ادارے سے تعلق، مسلمان کھلاڑی کا معاہدہ ختم

اسلام اور امیگریشن مخالف جماعت کے خلاف مظاہرہ

جرمنی میں سرکاری ملازمین کے نقاب پہننے پر پابندی

جرمنی کے صحافی ٹینسی اوژدمر نے ٹویٹ میں کہا کہ’ وزیر داخلہ زیہوفر کیا پیغام دینا چاہتے تھے؟ مسلمان کی تھوڑی عزت کرنے کی ضرورت ہے جو سور نہیں کھاتے۔‘

اطلاعات کے مطابق کانفرنس کے آغاز پر وزیر داخلہ زیہوفر نے کہا تھا کہ’ وہ جرمن اسلام چاہتے ہیں۔‘

تاہم ٹینسی اوژدمر نے کہا کہ وزیر داخلہ زیہوفر کا رویہ ایسا کہ جیسے’چائینہ شاپ میں ہاتھی‘ اور وہ جرمنی کے مسلمانوں کی اکثریت کی حمایت حاصل نہیں کر پائیں گے۔

https://twitter.com/TuncayOezdamar/status/1068079981455118336

اس کے جواب میں وزارتِ داخلہ نے کہا کہ کانفرنس کے دوران پیش کیے گئے کھانے میں کل 13 پکوان تھے اور ان میں سبزیاں، گوشت اور مچھلی شامل تھی جبکہ بوفے میں رکھے گئے پکوانوں کے بارے میں واضح الفاظ میں لکھا گیا تھا۔

مقامی ذرائع ابلاغ کا کہنا ہے کہ 2006 میں منعقدہ پہلی اسلامک کانفرنس میں دیے گئے کھانے میں سور کا گوشت رکھا گیا تھا۔

وزیر داخلہ زیہوفر نے مارچ میں کہا تھا کہ اسلام کا کسی طور پر بھی تعلق جرمنی سے نہیں ہے۔

انھوں نے کہا تھا کہ ’ہمارے ساتھ رہنے والوں مسلمان قدرتی طور پر جرمنی کی ملکیت ہیں اور اس کا مطلب یہ نہیں کہ ہم اپنے رسم و رواج کو دوسروں کے لیے چھوڑ دیں۔‘

image_pdfimage_print
Comments - User is solely responsible for his/her words


اگر آپ یہ سمجھتے ہیں کہ ”ہم سب“ ایک مثبت سوچ کو فروغ دے کر ایک بہتر پاکستان کی تشکیل میں مدد دے رہا ہے تو ہمارا ساتھ دیں۔ سپورٹ کے لئے اس لنک پر کلک کریں

بی بی سی

بی بی سی اور 'ہم سب' کے درمیان باہمی اشتراک کے معاہدے کے تحت بی بی سی کے مضامین 'ہم سب' پر شائع کیے جاتے ہیں۔

british-broadcasting-corp has 6441 posts and counting.See all posts by british-broadcasting-corp