غلاظت نئے دور کی ۔۔۔


یورپ میں نہانے کو کفر سمجھا جاتا تھا ۔ یورپ کے لوگوں سے سخت بدبو آتی تھی ۔ روس کے بادشاہ قیصر کی جانب سے فرانس کے بادشاہ لوئیس کے پا س بھیجے گئے نمائندے نے کہا ہے کہ فرانس کے بادشاہ کی بدبو کسی بھی درندے کی بدبو سے زیادہ متعفن ہے ۔ اس کی ایک لونڈی تھی جس کا نام مونٹیاسیام تھا جو بادشاہ کی بدبو سے بچنے کے لیے اپنے اوپر خوشبو ڈالتی تھی ۔
دوسری طرف خود روسی بھی صفائی پسند نہیں کرتے تھے ۔ مشہور سیاح ابن فضلان نے لکھا ہے کہ روس کا بادشاہ قیصر پیشاب آنے پر مہمانوں کے سامنے ہی کھڑے کھڑے شاہی محل کی دیوار پر پیشاب کرتا ہے ۔ چھوٹے اور بڑے دونوں پیشا ب کے بعد کوئی استنجا نہیں کرتا ۔ ایسی گندی مخلوق میں نے نہیں دیکھی ۔ اندلس میں لاکھوں مسلمانوں کو قتل کرنے والی ملکہ ایزا بیلا ساری زندگی میں صرف دو بار نہائی ۔ اس نے مسلمانوں کے بنائے ہوئے تمام حمام گرا دیے ۔ اسپین کے بادشاہ فلپ دوم نے اپنے ملک میں نہانے پر پابندی لگا ر کھی تھی ۔ اس کی بیٹی ایزا بیل دوم نے قسم کھائی تھی کہ شہروں کا محاصرہ ختم ہونے تک وہ اپنا اندرونی لباس بھی تبدیل نہیں کرے گی اور محا صرہ ختم ہونے میں تین سال لگے ۔ اسی غلاظت اور گندگی کے سبب وہ مر گئی تھی ۔
یہ عوام کے نہیں بلکہ iورپ کے حکمرانوں کے واقعات ہیں جو تاریخ کے سینے میں محفوظ ہیں ۔ جب ہمارے سیاح کتابیں لکھ رہے تھے جب ہمارے سائنسدان نظا م شمسی پر تحقیق کر رہے تھے تو یورپ کے بادشاہ نہانے کو کفر اور گناہ قرار دے کر لوگوں کو قتل کر رہے تھے ۔ پھر ہمیں ان کے بادشاہوں جیسے حکمران ملے
جب لندن اور پیرس کی آبادیاں 30 اور 40 ہزار تھیں اس وقت اسلامی شہروں کی آبادیاں ایک ایک ملین ہوا کرتی تھیں ۔ فرنچ پرفیوم بہت مشہور ہیں ۔ اس کی وجہ بھی یہی ہے کہ پر فیوم لگائے بغیر پیرس کی گلیوں میں گھومنا مشکل ہی نہیں بلکہ نا ممکن ہو ا کرتا تھا ۔ ریڈ انڈین جب iورپین سے جنگ کرتے تو گلاب کے پھول اپنے نتھنوں میں ٹھونس لیتے کیونکہ iورپیوں کی تلوار سے زیادہ تیز اور خطر ناک وہ بدبو ہوتی جو ان کے جسم سے اٹھ رہی ہوتی تھی ۔
فرانسیسی مورخ دریبار کہتا ہے کہ ہم یورپ والے مسلمانوں کے مقروض ہیں کیونکہ مسلمانوں نے اہل یورپ کو صفائی ستھرائی غلاظت بدبو میں فرق ا ور تمیز کرنا سکھایا انسانوں کی طرح جینے کا ڈھنگ سکھایا نہانا ، مسواک (برش) کرنا سکھایا ۔ جسم کو صا ف ستھرا کر کے ڈھانپنا ہمیں مسلمانوں نے سکھایا ۔ ہم جب ننگے دھڑنگے تعفن زدہ درندوں والی زندگی گذار رہے تھے تو اس وقت مسلمان اپنے کپڑوں کو یا قوت ، زمرد ، اور مرجان سے سجاتے تھے ۔ جب یورپی کلیسا نہانے کو کفر اور جرم قرار دے رہے تھے اس وقت مسلمانوں کے شہر قرطبہ میں لگ بھگ تین سو کے قریب عوامی حمام تھے ۔
موجودہ دور میں اگر ہم دیکھیں تو یورپ کہاں ہے اور ہم کہاں ہیں ۔ آج جب یورپ والے ڈرون بنا رہے ہیں نت نئی ایجادات سے دنیا کو حیران کر رہے ہیں وہاں نفیس پہناوے پہنے بظاہر ہماری پاکیزہ روحیں ایک ایسی غلاظت میں لتھڑی ہوئی ہیں جسے کرپشن اور رشوت خوری کہتے ہیں ۔ شاید آج بھی ہم اہل یورپ سے زیادہ متقی اور پرہیز گار ہیں لیکن ہماری اندرونی کیفیت فرانس کے اس بادشاہ سے بھی غلیظ ہے جس کی لونڈی اس کی بدبو کی وجہ سے اپنے اوپر خوشبو ڈالتی تھی ۔ ہمارے حالات یہ ہیں کہ ہم میں سے کوئی کسی خوبصورت ماڈل گرل کی اداﺅں کے پیچھے اپنی مکروہ کمائی چھپانا چا ہتا ہے۔ کوئی یورپ میں بیٹھ کے ہمارے پیارے ملک کی سالمیت وقار کو نقصان پہنچانے کے لیے ہمارے ا زلی دشمن سے گٹھ جوڑ کر کے ملک کی بھولی بھالی عوام کو بغاوت کے دھکتے تنور میں ڈال دینا چاہتا ہے ۔ ہمارے حکمرانوں پہ ایسے ایسے غلیظ اور باعث شرم الزام لگائے جا رہے ہیں کہ انسانیت شرما جائے۔ پانی کے منصوبوں میں کرپشن۔ صحت کے منصوبوں میں خرد برد۔ جعلی ادویات بنانے کے الزامات۔ مضر صحت دودھ بنانے کی فیکٹریاں۔ مذہب کی آڑ میں سیاسی اور ذاتی مفادات کا حصول، سرکاری زمینوں پلاٹس پہ قبضے۔ ملک کا پیسہ چوری کر کے بیرون ملک جائیدادیں بنانے کا انکشاف ۔ اگر یہ الزام سچ ہیں تو ان کی اس غلیظ سوچ کے سامنے دنیا کی تمام غلاظتیں کوئی معانی نہیں رکھتیں ،
اپنی ان غلاظتوں کی وجہ سے دنیا میں ہم اس قدر رسوا ہو چکے ہیں کہ مودی جیسا جاہل اور مکروہ انسان بھی ہمیں حقیر سمجھتا ہے۔ انڈیا کے ٹی وی پروگرام جنتا کی عدالت میں مودی ہمیں سبق سکھانے کی با ت کرتا ہے۔ جذبہ خیر سگالی کے تحت کرتار پور راہ داری کے کھولنے کے ہمارے مثبت اقدام کو ہندوستانی میڈیا سازش قرار دے رہا ہے۔ حالانکہ پو ری دنیا جاتنی ہے کہ انڈیا ایک دہشت گرد مکار اور احساس کمتری کا شکار ملک ہے۔ بابری مسجد کی شہادت کا منفی پراپیگنڈہ ہو یا گجرات فسادات کی سازش ان سب دہشت گرد واقعات کے پیچھے ہندوستانی حکومت اور اپنی فوج کا ہاتھ مودی تسلیم کرتا ہے ۔ اسے کوئی ڈر خوف نہیں ہے کیونکہ وہ جانتا ہے کہ ہم اس قدر بے حس ہو چکے ہیں کہ بس ہمیں ا پنے ذاتی مفادات پیارے ہیں ۔ ہماری خوداری کا یہ عالم ہے کہ اپنے ملک میں تو ہم ہیلمٹ پہننا سیٹ بیلٹ باندھنا لائن میں لگنا توہین سمجھتے ہیں لیکن تلاشی کے نام پہ یورپ کے ہوائی اڈوں پہ ہمیں ننگا بھی کر دیا جائے ہم پھر بھی یورپ جانا چاہتے ہیں ۔
اہل یورپ نے اپنی تمام غلاظتیں چاہے اندرونی ہوں یا بیرونی صاف کرنے کا گُر مسلمانوں سے سیکھا آج بھی یورپ میں حضرت عمر رضی اللہ تعا لی عنہ کے بنائے قانون لاگو ہیں اور ہم تو اپنے آقا سرورِکائنات ﷺ کی تمام تعلیمات کو بھول چکے ہیں۔ آپ ﷺ نے جھوٹ سے منع فرمایا۔ ملاوٹ سے منع کیا۔ آپ ﷺ فرمایا اپنی عورتوں کو پردے میں رکھو عورت کو پردے کی پابند رہنے کا حکم دیا عورت کو صفامروہ میں بھی بھاگنے دوڑ نے سے منع کیا ہماری عورتیں کرکٹ کے میدانوں کی زینت بن گئی ہیں۔ آپ ﷺ نے فرمایا کہ دنیا کی بد اخلاق ترین وہ عورت ہے جو غیر محرم سے مسکرا کے بات کرے لیکن ہمارا تو شیمپو ، دودھ ، کریم ، چائے کی پتی ، بسکٹ ، نمکو ، یہاں تک کہ کھاد سپرے کھل بھی اس وقت تک نہیں بکتا جب تک ناچتی گاتی بے پردہ عورتیں کمرشل میں نظر نہ آجائیں ۔ ہمارے معاشرے کے اعلی تعلیم یافتہ لوگ ان جدید غلاظتوں کی وکالت یہ کہہ کر کرتے نظر آتے ہیں۔ (اگر معاشرے کے ساتھ چلنا ہے آگے بڑھنا ہے تو یہ سب کرنا پڑے گا)

image_pdfimage_print
Comments - User is solely responsible for his/her words


اگر آپ یہ سمجھتے ہیں کہ ”ہم سب“ ایک مثبت سوچ کو فروغ دے کر ایک بہتر پاکستان کی تشکیل میں مدد دے رہا ہے تو ہمارا ساتھ دیں۔ سپورٹ کے لئے اس لنک پر کلک کریں