حاجی چچا نسوار والے


\"rashid-ahmad-2w\"ان کا اصل نام تو حاجی وہاب تھا مگر اہل علاقہ انہیں حاجی چاچا کے نام نامی سے یاد کرتے تھے۔ حاجی چاچا ہمہ گیر خوبیوں اورخامیوں کا مرقع تھے۔ جہاں جاتے بقول فراز داستاں چھوڑ آتے۔ دوستیاں تو ان گنت تھی ہیں دشمن بھی بے شمار پیدا کئے اور ہمیشہ اس وصف پر اترایاکرتے۔ دوست بھی ان کے ایسے تھے جیسے اپنے چچا غالب کے تھے۔

دوست دارِ دشمن ہے اعتماد دل معلوم

آہ بے اثر دیکھی نالہ نارسا پایا

اس لئے ہمیشہ دوستوں کے تذکرہ پر دشمنوں کے \’\’ذکرخیر\’\’ کو ترجیح دیتے۔ کہتے مجھے میرے دوستوں سے بچاو جن کا کیا دھرا مجھے ہی ہمیشہ بھگتنا پڑتا ہے۔ ان نادان دوستوں کی وجہ سے آئے روز کسی مصیبت کا منہ دیکھتے مگر دوستی کا بھرم قائم رکھتے۔ گو ان کی غیر موجودگی میں دل اور بٹن کھول کر ان کی غیبت کرتے، لیکن آنکھ کی حیا کا پاس تھا کہ پرانی وضع داری تھی تعلق توڑتے نہیں تھے۔

چچا کی ہمہ گیر اور ہمہ جہت خوبیوں میں سے ایک خوبی یہ تھی کہ جب سے چچا نے ہوش سنبھالا خود کو گھٹنوں کے درد میں مبتلا پایا۔ کہتے یہ درد مجھے ورثہ میں ملا ہے۔ روئے زمین پر بسنے والے شاید وہ واحد حیوان ہیں جنہیں گھٹنوں کا درد ورثہ میں ملا تھا۔ ان کی گفتگو اگر ایران عراق جنگ پر بھی ہوتی تو \’\’دردِ گھٹنہ\’\’کے بغیر نامکمل ہوتی۔ یار لوگ تو چچا کو طعنے دینے شروع ہوگئے تھے کہ چچا دوائیوں کی قیمتوں میں اضافہ آپ ہی کے مرہون منت ہے۔ اگر آپ مسلسل خریداری سے طلب اور رسد پر یوں بری طرح اثرانداز نہ ہوتے تو شاید دوائیوں کی قیمت میں ہوش ربا اضافہ نہ ہوتا۔ چچا اس پراپگینڈہ کو یکے از سازشِ یہود وہنود شمار کرتے۔

چچا گھنٹوں کسی بھی موضوع پر بلا تکان بلا رکے بول سکتے تھے اور درمیان میں کوئی ٹوکتا تو بزرگی کا فائدہ اٹھا کر اسے \’\’سلیس\’\’ اردو میں وہ بے نقط سناتے کہ دوسروں کو بھی کان ہوجاتے۔ چچا کی طبیعت میں عجیب خداداد خود اعتمادی تھی۔ سفید جھوٹ بھی اس اعتماد سے چھوڑتے کہ سننے والے کو یقین کرنے کے سوا کوئی چارہ نہ ہوتا۔ یار لوگ مروتاً واحتیاطاً خاموش رہتے اور چچا اسے اپنی \’\’اخلاقی فتح\’\’ قراردے کر بولتے رہتے۔ کسی حاسد نے تو بے پر کی اڑا رکھی تھی کہ چچا کو چونکہ گھر میں کوئی گھاس نہیں ڈالتا تو چچا اس کا انتقام باہر کے احباب سے لیتے ہیں۔ سنا ہے درون خانہ اس روایت کی تصدیق بارہا ہوئی مگر چچا اپنی کج بحثی اور چرب زبانی سے اس پوائنٹ کو بھی اپنے حق میں استعمال کرتے۔

چچا اپنے ریڈیو کی وجہ سے بھی بہت مشہور ہوئے۔ گاوں میں چونکہ انہی کے پاس ریڈیو تھا اس لئے انہی کی ہر مصدقہ وغیر مصدقہ اطلاع پر اعتبار کرنا پڑتا۔ ان کے دعاوی کی قلعی تو بعد میں کھلی جب ریڈیو ہر کس وناکس کے ہاتھوں میں پہنچا، تب عقدہ کھلا کہ چچا سنی گئی خبروں میں بارہ مصالحوں کا تڑکا لگانے کے بعد انہیں پبلک میں عام کرتے۔ مثلاً اگر یہ خبر ہوتی کہ آئندہ چند دنوں میں ہلکی بارش کا امکان ہے تو چچا گلی گلی گھوم کر اعلان کرتے کہ محکمہ موسمیات والوں نے شدید بارشوں کی پیشگوئی کی ہے اس لئے ابھی سے احتیاطی تدابیر شروع کردیں۔ یار لوگ کچے گھروں کی خبرگیری میں مصروف ہوجاتے اور شدید بارش پورے سیزن میں نہ ہوتی۔ چچا نے اپنی اسی عادت کے طفیل متعدد دفعہ ہندوستان پاکستان کی جنگیں بھی کروائیں لیکن صد شکر کہ یہ افواہ سازی ہی ہوتی۔ جب ریڈیو عام ہوا تو چچا غالب کے اس شعر کی تشریح بنے گھوما کرتے

ہر ابوالہوس نے حسن پرستی اختیار کی

اب آبروئے شیوہ اہل نظر گئی

کہتے یہ کل کے لونڈے ریڈیو بارے کیا جانیں۔ ریڈیو سننے اور سمجھنے کو فنون کثیفہ میں شمار کرتے، بچوں کو کرکٹ کمینٹری سننے سے بھی منع کرتے اور وجہ اخلاقی بتاتے تھے، لیکن پھر یہ خبر بھی عام ہوگئی کہ چچا آنکھ بچا کر اپنی کٹیا میں \’\’ریڈیو آکاشوانی\’\’ سے ہندوستانی گانے سنتے ہیں۔ یوں چچا کو دفاعی پوزیشن میں آنا پڑا اور ریڈیو پر ان کی اجارہ داری ختم ہوئی۔

چچا کے بارہ میں حاسدین نے یہ خبر بھی مشہور کی ہوئی تھی کہ موصوف 1971 کی جنگ میں جبراً ہندوستانی سرحد کے آس پاس تعینات کئے گئے تھے، مگر رات میں جونہی ایک طیارے کی آواز سنی تو دوڑ لگا دی۔ تین سو کلومیٹر کا فاصلہ چند گھنٹوں میں پیدل طے کرکے گاوں واپس آئے اور آتے ہی ڈینگیں مارنی شروع کردیں کہ ہندوستان کے متعدد سپاہیوں کو جہنم واصل کرکے آیا ہوں۔ یہ بنیا اب ہم اہل ایمان سے لڑائی کرے گا۔ اس کی ایسی تیسی،مگر جونہی ایک دل جلے نے چچا کو بھاگنے کا طعنہ دیا تو چچا آپے سے باہر ہوگئے۔ سلیس اردو میں وہ مغلظات سنائیں اور اگلے کئی دن خود بھی گھر سے باہر تشریف نہ لاسکے کہ یک گونہ شرم شاید دل کے کسی نہاں خانے میں جاگ گئی، لیکن جونہی باہر تشریف لائے پھر سے اسی فصل گل کی تصویر بنے نظر آئے جس کے لئے مشہور تھے۔

چچا کی بحر بے کراں شخصیت کا احاطہ کرنے کے لئے تو سفینہ درکار ہے مگر زیرنظر مضمون میں جس خوبی پر ہم اختتام کررہے ہیں وہ چچا کی نسواری طبعیت تھی۔ کہتے میری زندگی کے جملہ مقاصد میں سے ایک مقصد نسوار کو قومی تشخص دلانا ہے۔ چچا سندھی النسل تھے مگر نسوار کی محبت میں سراپا سرشار تھے۔ اسے دل وجگر کے لئے تو مقوی بتلاتے ہی تھے کسی دل جلے نے یہ مشہور کر رکھا تھا کہ چچا نے نسوار سے ایک مقوی باہ کا نسخہ بھی تیار کیا تھا جسے خود پر آزمانے کے بعد اپنے چند ایک دوستوں کر بھی تحفہ میں دیا۔ یہ وہ دوست تھے جن کی طرف ان کا ادھار رہتا تھا۔ روایت ہے کہ وہ دوست ایک لمبا عرصہ حکیموں کے چکر لگاتے رہے کہ خدارا ہم پر رحم کریں۔ ہماری کھوئی ہوئی \’\’صحت\’\’ ہی بحال کردیں۔ چچا اپنی اس انتقامی کاروائی کی کامیابی کو یوں چسکے لے کر بیان کرتے کہ شادی شدہ حضرات بھی کانوں کو ہاتھ لگاتے۔ غرض چچا نہار منہ نسوار منہ میں رکھتے تو رات گئے تک اسے دیس نکالا نہ دیتے۔ کہتے یہ مردانگی کے خلاف ہے کہ یوں ایک بے زبان سے بے وفائی کی جائے۔ روزہ رکھتے تب بھی نسوار منہ میں ہوتی۔ یہ بتانے کی کوئی خاص ضرورت تو نہیں مگر ہم جہاں اتنی باتیں بتا چکے وہاں یہ بھی بتلائے دیتے ہیں کہ افطاری تو کرتے ہی نسوار سے تھے۔

پیدا کہاں ہیں ایسے پراگندہ طبع لوگ

افسوس تم کو میر سے صحبت نہیں رہی


Comments

'ہم سب' کا کمنٹس سے متفق ہونا ضروری نہیں ہے۔ کمنٹ کرنے والا فرد اپنے الفاظ کا مکمل طور پر ذمہ دار ہے اور اس کے کمنٹس کا 'ہم سب' کی انتظامیہ سے کوئی تعلق نہیں ہے۔

راشد احمد

راشداحمد بیک وقت طالب علم بھی ہیں اور استاد بھی۔ تعلق صحرا کی دھرتی تھرپارکر سے ہے۔ اچھے لکھاریوں پر پہلے رشک کرتے ہیں پھر باقاعدہ ان سے حسد کرتے ہیں۔یہ سوچ کرحیران ہوتے رہتے ہیں کہ آخر لوگ اتنا اچھا کیسے لکھ لیتے ہیں۔

rashid-ahmad has 21 posts and counting.See all posts by rashid-ahmad

3 thoughts on “حاجی چچا نسوار والے

  • 28-06-2016 at 10:01 am
    Permalink

    کیا کہنے جی. تحریر کیا تھی گویا ہم خود چاچا کو روبرو دیکھ رہے ہوں

  • 28-06-2016 at 5:09 pm
    Permalink

    راشد ماشاء الله یار خوب لکھا هے اچھا خاکه هےمزه آیا پوری تحریر کے دوران میرا چهره ??????? اسے ایسے انداز بدلتا رها خوب لکھا لوٹ پوٹ کردیا

  • 29-06-2016 at 12:06 pm
    Permalink

    Bht khoob jnab… 🙂

Comments are closed.