تجھ کو منظور ہے یہ ہاتھ قلم ہو جائیں ؟


zeeshan hashim چارسدہ میں باچا خان یونیورسٹی پر حملہ انسانیت پر حملہ ہے .  اس یونیورسٹی پر حملہ دہشت گردوں کے ان عزائم کا منہ بولتا ثبوت ہے کہ وہ عدم تشدد کے نظریات کو اپنا دشمن سمجھتے ہیں، ان کا مقابلہ علم اور اس سے جنم لینے والی انسان دوست اقدار سے ہے. انہیں جمہوریت سے نفرت ہے کیونکہ وہ پاکستان میں شہریت کی مساوات اور سیاسی زندگی میں لوگوں کے حق انتخاب کے منکر ہیں. ان کا تصور انسان یہ ہے کہ ہر انسان جب آزاد ہو جاتا ہے تو وہ گمراہ ہو جاتا ہے، شیطان کا مددگار بن جاتا ہے، اس لئے ضروری ہے کہ فرد کی آزادی کو پابند کر دیا جائے اور ان کو اپنے من پسند رجعت پسندانہ مذہبی قوانین میں جکڑ دیا جائے. ان کے نظام میں عورت یا تو لونڈی کے روپ میں جنسی غلام ہے یا بیوی کے رشتہ میں مجازی خدا کے حضور ایک فرمانبردار خدمت گار جس کا واحد مقصد مرد کی خوشی کا سبب بننا ہے. ان کا تصور شہریت غلام و آقا، اور مسلم و ذمی میں بٹا ہوا ہے. وہ بچوں میں انسانی ترقی و خوشحالی کے امکانات نہیں دیکھتے بلکہ ان میں انہیں عظیم فتنہ گر نظر آتے ہیں جنہیں شدت پسندی کے مقاصد میں استعمال کیا جا سکتا ہے. وہ مذہب کے نام پر انسانی زندگی کے ہر گوشے میں جبر نافذ کرنا چاہتے ہیں. وہ سیکولر ازم کے حریف ہیں کیونکہ ان کے نزدیک ایک اسلامی ریاست میں شہریت کی مساوات نام کی کوئی چیز نہیں ہوتی. صرف فاتح شہری ہے اگر وہ ہم مذہب ہے، بقیہ مفتوح یا تو غلام ہیں یا ذمی جن کا ریاست میں درجہ مغلوب رعایا کا ہے. وہ انسانی آزادیوں کے دشمن ہیں اور حقیقتاً ان کا مقابلہ آزادی پسند انسان دوست اقدار سے ہے. یہ بنیادی بات سمجھے بغیر ان کے خلاف لڑائی میں کامیاب منصوبہ بندی نہیں کی جا سکتی.

اب تک دہشت گردی کے خلاف جو لائحہ عمل اختیار کیا گیا ہے، اس کا بنیادی مقدمہ یہ رہا ہے کہ دہشت گردوں کے کیمپ اکھاڑ دو، دہشت گردی بھی ختم ہو جائے گی. یہ بھی حقیقت ہے کہ ابھی تک دہشت گردوں کے تمام کیمپ ختم نہیں کئے جا سکے. شمالی وزیرستان میں ضرب عضب ہنوز نامکمل ہے. بلوچستان ایران بارڈر کے پاس ان کی چھوٹی چھوٹی ٹکڑیاں قائم ہیں. بلوچستان ان کے لئے ہنوز پسندیدہ جگہ ہے جہاں ریاست بلوچ عسکریت پسندوں کے خلاف لڑائی میں انہیں اسٹریٹجک اثاثوں کے طور پر استعمال کر رہی ہے. تمام قبائلی ایجنسیاں ان سے صاف نہیں، چھوٹے چھوٹے کیمپ ہنوز کام کر رہے ہیں. شہری آبادیوں خاص طور پر پنجاب کے شہروں میں یہ نسبتاً محفوظ ہیں. افغانستان میں پاکستان سے ملحقہ علاقوں کا ایک بڑا حصہ داعش کے کنٹرول میں جا چکا ہے اور بعض اطلاعات کے مطابق داعش نے پاکستان و افغانستان کے لئے کچھ فنڈ بھی مختص کئے ہوئے ہیں جن سے وہ اپنا دائرہ کار بڑھا رہے ہیں. تحریک طالبان پاکستان کے مختلف گروپس کے سرکردہ رہنما داعش کی بیعت کر چکے ہیں.

تحریک طالبان افغانستان سے پاکستانی عسکری ادارے کے بعض حصوں کے ابھی تک دوستانہ رابطے ہیں. عالمی طاقتوں، افغانستان اور طالبان کے درمیان مذاکرات کے لئے ہم افغانی طالبان کی سرپرستی کر رہے ہیں، یوں ان کے اثاثے پاکستان میں کام بھی کر رہے ہیں محفوظ بھی ہیں اور افغانستان میں بعض دہشت گرد کارروائیوں کے لئے منصوبہ بندی بھی یہیں سے ہو رہی ہے. ان کی قیادت کا ایک بڑا حصہ پاکستان میں مقیم ہے مگر اس کے باوجود ہماری خواہش ہے کہ تحریک طالبان پاکستان کے خلاف لڑائی میں افغانستان ہم سے مکمل تعاون کرے.

حقیقت یہ ہے کہ سیکھنے نام کی کوئی صلاحیت ہم میں نہیں. ابھی آٹھ جنوری دو ہزار سولہ کو جنرل ضیا الدین بٹ ’دن ٹی وی‘کو دیئے گئے انٹرویو میں جہادی تنظیموں کو اپنی پانچویں سے چھٹی دفاعی لائن قرار دے رہے تھے اور فرمایا کہ ہم ان گروپس کو پروموٹ کرتے رہیں گے. کچھ ماہ قبل الجزیرہ ٹی وی کو دیئے گئے انٹرویو میں جنرل اسد درانی فرما رہے تھے کہ آرمی پبلک اسکول جیسے واقعات اسٹریٹجک لڑائی میں کوئی خاص اہمیت نہیں رکھتے. یہی وہ مائنڈ سیٹ ہے جو ابھی تک اچھے اور برے جہادی کی تقسیم پر عمل پیرا ہے. جماعت الدعوہ ہنوز ہیئت مقتدرہ کا دست و بازو ہے. جیش محمد جیسی وہ تمام تنظیمیں جو ریاست کی کشمیر بلوچستان اور سندھ کے دیہی علاقوں میں توسیع پسندانہ اور مہم جو عزائم میں مددگار ہیں بدستور کام کر رہی ہیں اور اقتدار کے کچھ مزعومہ حقیقی مالک ان کی درپردہ سرپرستی کر رہے ہیں.

سوال یہ ہے کہ چارسدہ کا واقعہ کیا اچانک ہوا ہے ؟ ہماری سیاسی و عسکری قیادت آپریشن ضرب عضب کی کامیابی کے اعدادوشمار بڑھ چڑھ کر پیش کر رہی تھی۔ گزشتہ سال کے نصف آخر میں امن کمیٹی کے قبائلی عمائدین کو ٹارگٹ کلنگ میں شہید کیا گیا۔ ریاست انہیں سیکورٹی فراہم کرنے میں ناکام رہی. یہ وہ لوگ تھے جنہوں نے طالبان کے قبائلی علاقوں میں مکمل کنٹرول کے باوجود ریاست سے تعاون کیا. پھر آہستہ آہستہ سرکاری اداروں پر چھوٹے چھوٹے حملوں کا آغاز ہوا. حملوں کی شدت بڑھتی گئی مگر ہمیں بار بار یہ خوش خبری سنائی جاتی رہی کہ سب ٹھیک چل رہا ہے. یہاں خبر اور اس کا ردعمل اتنا سنسر ہے کہ ہم نہیں جانتے کہ منگل اور بدھ کے دو روز میں ہم نے سو شہیدوں کی لاشیں اٹھائی ہیں. حالیہ چارسدہ واقعہ کا ’ذمہ دار تجزیہ‘میڈیا سے سنسرڈ ہے، صرف یہی پڑھایا جا رہا ہے کہ ہماری سیکورٹی ایجنسیوں نے چاروں حملہ آوروں کو مار گرایا، ہم بڑے نقصان سے بچ گئے، آپ تصور کریں کہ ارباب اختیار کے نزدیک یہ کوئی بڑا نقصان نہ تھا.

مسئلہ کی جڑ چار ذہنی عارضے ہیں.

 مہم جو نفسیات : ہم دو ہمسایہ ریاستوں سے خاص طور پر خوف زدہ ہیں. ہم سمجھتے ہیں کہ اگر ہم دشمن کے گھر میں گھس کر دشمن کو تباہ کرنے والے دوست پیدا نہ کرتے رہے تو دشمن ہمیں تباہ کر دے گا. یہ نفسیات اتنی پختہ ہے کہ آپ دنیا بھر کا بین الاقوامی تعلقات کا لٹریچر سامنے رکھ دو، کوئی اثر نہیں ہونے والا، کہ صاحبو کوئی کسی ملک کو تباہ نہیں کر سکتا اگر وہاں سول آزادیاں محفوظ ہیں، معاشی خوشحالی ہے، تعلیم و صحت کا چلن ہے اور امن و مسکراہٹ کا بول بالا ہے.

دوم: ہئیت مقتدرہ کی سوچ اپنے ادارہ جاتی مفادات کے گرد گھومتی ہے جس کے لئے تمام توانائیاں ضائع کر دی جاتی ہیں. مثال کے طور پر کراچی میں رینجرز اور سول اداروں کی باہم چپقلش تازہ مثال ہے. پاکستان کی خارجہ پالیسی اب بھی جی ایچ کیو بناتا ہے اور ملیحہ لودھی جیسے دماغ ایک فوجی کپتان یا میجر سے خارجہ پالیسی کا ویژن لیتے ہیں اور اس پر عمل کرتے ہیں. چیف آف آرمی سٹاف وزیر خارجہ کی حیثیت سے بیرونی ممالک کے دورے کرتے ہیں. یہ اس خوف میں جی رہے ہیں کہ کہیں عالمی طاقتوں سے قربت میں سویلین ہمارے خلاف سازشیں ہی نہ کر رہے ہوں.

سوم: آپریشن ضرب عضب اور دوسرے سیکورٹی بندوبست میں کارروائی کی ساری طاقت جی ایچ کیو کے قبضہ قدرت میں رہی ہے اور سول اداروں جیسے پولیس کو اختیارات دیئے گئے ہیں اور نہ انہیں تربیت دی گئی ہے، اور نہ ایسی کوئی طویل مدتی پالیسی بنائی گئی ہے جس کی بدولت ہمارا معاشرہ سول سیکورٹی اداروں کی کارکردگی کے سبب محفوظ رہ سکے. سیکورٹی کے جملہ انتظامات میں قوم صرف ہئیت مقتدرہ کی طفیلی بن کر رہ گئی ہے جس کا صرف رائج و قابض ’سٹیٹس کو‘ ہی کو فائدہ ہو رہا ہے. سول اداروں کی نااہلی میں سیاسی قیادت بھی برابر کی ذمہ دار ہے.

چہارم: مسئلہ کا سب سے بڑا سبب دہشت گردی اور شدت پسندی کے مددگار ہیں جو پورے معاشرہ پر قابض ہیں. جمعہ کے خطبوں میں ساری قوم ان کے سامنے دوزانو ہوتی ہے. مدرسہ میں غریبوں کے بے سہارا بچے شدت پسندی کی اس فیکٹری میں بطور خام مال استعمال ہو رہے ہیں. دہشت گردوں کو خبر کی فراہمی اور پناہ دینے کے معاملہ میں یہ محفوظ پناہ گاہیں بدستور کام کر رہی ہیں. سول سوسائٹی کا کوئی فرد اگر دہشت گردی کے مقابلہ میں سر اٹھاتا ہے تو اس کا سر کچلنے کو ان کی خدمات ہی لی جاتی ہیں. بھارت و امریکہ کے خلاف کوئی مظاہرہ کروانا ہو یا مقتدر طبقہ کی حمایت میں سڑکوں پر آنا ہو، ان ہی کے لشکر حاضر خدمت ہوتے ہیں. پورا سماج ان کا قیدی ہے دہشت گردی کو یہ غذا مہیا کرتے ہیں مگر ان کا اخباری موقف یہی ہوتا ہے کہ دہشت گردی میں بھارت کا ہاتھ ہے، جب کہا جاتا ہے کہ جس کا بھی ہاتھ ہے اسے کاٹ دینا چاہئے تو جواب میں ’اگر مگر چونکہ چنانچہ‘ کی مدد سے دہشت گردی کے عفریت کو جواز مہیا کئے جاتے ہیں اور اسے فکری و اسٹرٹیجک مدد فراہم کی جاتی ہے.

افسوس ناک بات یہ ہے کہ کرتا دھرتا طاقتیں ان سے خوفزدہ ہیں. لاہور میں ایک جہادی تنظیم کے بارے میں مشہور ہو چکا ہے کہ اگر اس پر ہاتھ ڈالا گیا تو پورا وسطی پنجاب خون میں نہا جائے گا. ایک جہادی تنظیم جس کا صدر دفتر بہاولپور کا ایک مدرسہ ہے اس کے بارے میں یہ پروپیگنڈہ کیا گیا ہے کہ اگر اسے ختم کیا گیا تو پورا جنوبی پنجاب خاک و خوں میں لتھڑ جائے گا. اس خوف کی نفسیاتی بنیادیں بھی وہی ہیں جو ابتدا میں طالبان سے لڑنے میں حائل تھیں.

گزشتہ ڈیرھ سال کی کارکردگی بتاتی ہے کہ ہم جنگ جیت رہے ہیں اور نہ ہار رہے ہیں، ہم درمیان میں لٹکے ہوئے ہیں. اگر واضح اور دوٹوک پالیسی پر عمل نہ ہوا جس میں شدت پسندوں، ان کے خیر خواہوں، ان کی محفوظ پناہ گاہوں اور شدت پسندی کے اسباب کو ختم نہ کیا گیا تو یہ جنگ طویل ہوتی جائے گا اور ہم زخموں سے چور ہو کر اوندھے منہ جا گریں گے .


Comments

FB Login Required - comments

ذیشان ہاشم

ذیشان ہاشم ایک دیسی لبرل ہیں جوانسانی حقوق اور شخصی آزادیوں کو اپنے موجودہ فہم میں فکری وعملی طور پر درست تسلیم کرتے ہیں - معیشت ان کی دلچسپی کا خاص میدان ہے- سوشل سائنسز کو فلسفہ ، تاریخ اور شماریات کی مدد سے ایک کل میں دیکھنے کی جستجو میں پائے جاتے ہیں

zeeshan has 92 posts and counting.See all posts by zeeshan

9 thoughts on “تجھ کو منظور ہے یہ ہاتھ قلم ہو جائیں ؟

  • 23-01-2016 at 12:52 pm
    Permalink

    اس موضوع پر بہت اچھا تجزیہ ہے مگر اب شاید بات بہت آگے نکل گئی ہے پشتون دوست بھائیوں کے کمنٹس پڑھ کر مایوسی بڑھتی جارہی ہے کہ بلوچستان میں پہلے سے مایوسیاں ھیں اور اوپر سے انتہائی بزدل دونوں بھائیوں کے پتہ نہیں کون سے راز چوہدری نثار کے پاس ہیں کہ انہیں نوازنا فرض عین ہے

    • 23-01-2016 at 3:24 pm
      Permalink

      شکریہ راشد صاحب … اور حسیب اسلم بھائی …

      تحریر پسند کرنے اور حوصلہ بڑھانے کا شکریہ

  • 23-01-2016 at 2:44 pm
    Permalink

    You never disappoint me. Love your colums…

  • 23-01-2016 at 4:24 pm
    Permalink

    A compact and good analysis of the situation. It reflects the situation regarding terror threat and government’s ineffectiveness quite explicitly.

  • 23-01-2016 at 5:58 pm
    Permalink

    بہت خوب ہاشم صاحب … باچا خان یونیورسٹی سانحہ پر اب تک کے تمام تبصروں میں سب سے بہترین تجزیہ …

    یقینا ہم فوکسڈ نہیں ہیں ، اور ہماری ملٹری اسٹبلشمنٹ ذہنی عارضوں کا ایسا شکار ہے کہ اس کی مہم جو پالیسیاں ہنوز جاری ہیں –

  • 24-01-2016 at 1:11 pm
    Permalink

    تقریباً ایک ماہ سے سوشل میڈیا سے دور رہا ہوں حتہ کے ٹی وی دیکھنے کا اتفاق نہیں ہوا امریکہ کینیڈا سے دوست آئے ہوئے تھے جو لبرل تو ضرور ہیں مگر پاکستان کی سیاست پر غورو فکر نہیں کرتے ان میں سے ایک شاعری اور موسیقی سے لگاؤ والے دوست تھے جن سے کبھی دل کی بات ہوجاتی تھی آج پہلا مضمون آپ کا لکھا ہوا پڑھا ہے ،پاکستان کا شروع دن سے المیہ رہا ہے کہ یہ ریاست سامراجی مقاصد کے لیے بنی تھی اور زندہ بھی انہی کے مقاصد کے لیے ہے امریکہ کا افغانستان کے اندر وجود اس پورے خطہ کے اندر دہشت گردی کی پروموشن کے لیے کافی ہے،طالبان جن کی تعلیم و تربیت میں پاکستانی ریاستی ادارے اور امریکہ شامل رہا ہے وہ اپنی رٹ قائم رکھنا چاہتے ہیں اس لیے کہ امریکہ اور پاکستانی اداروں نے ان کو سہانے خواب دکھائے تھے اب وہ خواب ان کو پورے ہوتے نظر نہیں آرہے اور وہ پراکسی وارکا حصہ بنے ہوئے ہیں ریاستی ادارے ان کو یہ باور کرواتے ہیں ہمارا اس میں کوئی قصور نہیں ہے ،امریکہ آپ کے خلاف ہے وہ چاہتا ہے آپ اس کے مطابق چلیں اور اس کی رٹ کو یقینی بنائیں اور نام نہاد اسلامی نظریے کو چھوڑ دیں ہمارے ریاستی اداروں کے مفاد میں یہ لڑائی چل رہی ہے اور قتل عام عوام کا ہورہا ہے نفرتیں قومیتوں کے درمیان بڑھ رہی ہیں ،پورے خطہ کے اندر پاکستان متنازعہ بنا ہوا ہے یہ چوہے بلی کا کھیل زیادہ دیر تک چلتا نظر نہیں آرہا ہمارے ریاستی اداروں کو امریکہ پر اپنا موقف واضح کرنا چاہئے کہ اس کا افغانستان سے نکل جانا ہی امن کی ضمانت ہے روس اس دلدل میں کبھی دوبارہ گھسنے کی کوشش نہیں نکرے گا ۔آخر پاکستان کے اندر لڑائی یا تو اداروں اور ان ملی ٹینٹ فورسز کے درمیان لڑی جائے گی یا جمہوری قوتوں کے ساتھ ان کی آخر جنگ ہوگی جس میں قوم پرست قوتیں بھی آخر کار جمہوری قوتوں کا ساتھ دیں گی ،کہ اس لیے کہ ان انتہاء پسند مذہبی قوتوں کا اسلام کسی کی سمجھ میں نہیں آتا

  • 24-01-2016 at 1:29 pm
    Permalink

    بہت شکریہ حسیب صاحب ، مجاہد صاحب ، اور حسین صاحب ….
    حوصلہ افزائی پر ممنون ہوں ..

  • 05-03-2016 at 9:26 pm
    Permalink

    Well balanced article. Government and all others must ponder over it if they have brain.

  • 05-03-2016 at 10:03 pm
    Permalink

    Bahut khub analysis

Comments are closed.