ن لیگ کامیاب کیوں ہوتی ہے؟


\"irfan\" مسلم لیگ ن کی قیادت نے معروف امریکی ماہر نفسیات ابراہام ماسلو (1908تا 1970) کی تھیوری Hierarchy of Needs تو یقیناً نہیں پڑھی ہوگی، لیکن سیاسی طور پر وہ اسی پر عمل پیرا ہے۔ ویسے بھی عمرانی تھیوریز سماجی اور انسانی رویوں سے ہی اخذ و کشید کی جاتی ہیں۔ اس تھیوری کے ذریعے البتہ ہم بڑے واضح طور پر جان سکتے ہیں کہ ن لیگ کے انتخابات جیتنے کے سماجی عوامل کیا ہیں۔ مجھے غالب گمان ہے کہ حالات اگر یوں ہی رہے تو اگلے الیکشن میں بھی ن لیگ کی جیت یقینی ہے۔

ابراہام ماسلو کی اس تھیوری کے پہلے ورژن کے مطابق انسانی بنیادی ضروریات پانچ ہیں جو ایک خاص ترتیب سے یکے بعد دیگرے ظاہر ہوتی ہیں۔ یہ ضروریات اور ان کی ترتیب درج ذیل ہے:

  1. جسمانی ضروریات کھانا پینا وغیرہ physiological Needs
  2. تحفظ Safety Need
  3. محبت Love Need
  4. عزت Esteem
  5. ذاتی شناخت Self-Actualization

ماسلو کہتا ہے کہ یہ ضروریات عمومًا اسی ترتیب سے سامنے آتی ہیں۔ جب ایک ضرورت پوری ہو جاتی ہے تب دوسری ضرورت سر اٹھاتی ہے۔ کبھی البتہ ترتیب بدل بھی جاتی ہے لیکن وہ کسی عارضی عامل کی مداخلت کی وجہ سے ہوتا ہے۔ ورنہ عام حالات میں ان ضروریات کی ترتیب یہی رہتی ہے۔ ماسلو کی اس تھیوری کو 80 فیصد سے زائد درست پایا گیا ہے۔

\"Abraham_Maslow\"سادہ لفظوں میں تھیوری کو بیان کیا جائے تو آدمی کی پہلی ضرورت اس کا پیٹ ہے۔ روٹی کی خاطر وہ جان بھی داؤ پر لگا دیتا ہے۔ پیٹ جب بھرا ہو تب انسان کو اپنے تحفظ کی ضرورت کا خیال آتا ہے۔ تحفظ کے حصول کے بعد اس میں محبت کرنے اور کیے جانے خواہش سر اٹھاتی ہے۔ بات محبت کی ہو رہی ہے ہوس کی نہیں۔ چناچہ لوگ عمومًا معاشی طور پر اپنے پاؤں پر کھڑے ہونے کے بعد شادی کرنا پسند کرتے ہیں۔ دیکھا جاتا ہےکہ شادی کے بعد اگر معاشی حالات خراب ہو جائیں تو محبت بھی رخصت ہو جاتی ہے، شادیاں بھی ٹوٹ جاتی ہیں، اور انتہائی صورت میں لوگ بیوی بچوں کو مار کر خود خود کشی بھی کر لیتے ہیں۔ محبت کی ضرورت جب پوری ہوجاتی ہے تو عزتِ نفس کی ضرورت کا احساس ابھرتا ہے۔ ایسے لوگ جو معاشی طور پر مستحکم اور جان و مال کے تحفظ میں بھی مبتلا نہیں ہوتے تو مساوی حقوق کی طلب کرنے لگتے ہیں، جس کا تعلق عزتِ نفس سے ہے۔ (پی ٹی آٹئ میں ایسے ہی لوگوں کی اکثریت ہے)۔ جب چاروں ضرورتیں پوری ہو جاتی ہیں تو ذاتی شناخت منوانے کی خواہش پیدا ہوتی ہے۔ چنانچہ آپ دیکھتے ہیں کہ فارغ البال اقوام سمندروں کی تہ میں، آسمان کی فضاؤں میں غوطے لگا کر نئی نئی دریافتیں کرتی ہیں، محیر العقول کارنامے سر انجام دیتی ہیں، چاند اور مریخ پر کمندیں ڈالتی ہیں، لیبارٹریوں میں نئے نئے اکتشفات اور انکشافات کرتے ہیں۔ جب کہ ان میں سے کئی چیزیں ہمارے روٹی کی تلاش میں سرگرداں عوام کے لیے حماقت کے مترادف سمجھی جاتی ہیں۔

اب آئیے پاکستانی معاشرے پر اس تھیوری کے اطلاق کی طرف۔ پاکستانی عوام کی غالب اکثریت کی پہلی ضرورت یعنی جسمانی ضرورتیں یعنی کھانا پانی ہی پورا نہیں ہو پایا۔ ہم دیکھتے ہیں کہ دعوتوں میں اور سیاسی پارٹیوں کے جلسوں میں کھانا کھلنے پر ہمارے عوام کس طرح بھوکوں کی طرح کھانے پر ٹوٹ پڑتے ہیں، باہم سیاسی اختلاف رکھنے والے عوام اس معاملے میں بالکل ایک جیسے رویے کا مظاہرہ کرتے پائے جاتے ہیں۔ اس سے معلوم ہوتا ہے کہ ان سب کا اصل مسئلہ پیٹ ہے۔ اس لیے ان میں دیگر ضروریات کا احساس اور ان کی تکمیل کی خواہش سرِ فہرست ہی نہیں ہے۔

\"nawaz3\"ن لیگ کا کمال یہ ہے کہ اس نے ہمارے عوام کی پہلی ضرورت کو اپنا عملی منشور بنایا ہوا ہے۔ پیپلز پارٹی نے بھی روٹی کپڑا اور مکان کے نعرے میں سیاسی طور پر اسی ضرورت کا انتخاب کیا ہوا ہے، لیکن وہ عوام سے اپنی حد سے بڑھی ہوئی بے حسی کی بنا پر اپنے اس منشور پر بقدرِ ضرورت بھی عمل کر کے دکھا نہ سکی، اور اسی وجہ سے اپنا ووٹ بینک کھوتی گئی۔ ن لیگ، البتہ، عوام کی ان بنیادی ضروریات کی تکمیل میں اس حد تک لگی ہوئی ہے کہ اس کے ووٹرز کی بڑی تعداد ان سے مطمئن ہو جاتی ہے۔ جو ووٹر ایک روٹی سے رام ہو جاتا ہے ن لیگ اسے دو روٹیاں دینے کی حماقت نہیں کرتی۔

آپ ن لیگ کے کاموں کی فہرست دیکھیں، جسے ان کے بڑے اور چھوٹے اپنی تقریروں اور بیانات میں دہراتے رہتے ہیں۔ یہ تمام کے تمام کام ماسلو کی فہرست میں دی گئی پہلی ضرورت، یعنی کھانے پینے کی ضرورت کے گرد گھومتے ہیں۔ سستی روٹی جیسے پراجیکٹ کی حماقت پر ماہرینِ معاشیات چاہے کتنا ہی سر پیٹ لیں، ایک عام ووٹر کا ووٹ بہرحال پکا ہو جاتا ہے۔ اسی طرح سڑکیں، پُل، بس اور ٹرین بھی اِسی بنیادی ضرورت میں سہولت پیدا کرنے کے اقدامات ہیں۔ ن لیگ بلا وجہ ان پر اربوں روپیہ نہیں لگا دیتی۔ یہ اپنے عوام کی ضرورت اور ان کے مزاج سے واقف ہیں اس لئے ان کا تیر خطا نہیں جاتا۔ اہل عقل چاہے عوام کی عقل پر ماتم کناں رہیں کہ ملک کے حقیقی مفاد کے لیے یہ چیزیں غلط ترجیحات ہیں، حکومت کے کرنے کے اور بھی کام ہوتے ہیں، لیکن غریب سے پوچھو تو اسے چاند میں بھی روٹی نظر آتی ہے۔ غریب آدمی روٹی کے پیچھے بھاگے گا، جو ن لیگ اسے للچا للچا کر دیتی ہے، وہ آپ کی معقول باتوں سے انکار بھی نہیں کر سکے گا لیکن وہ آپ کی بات سنی ان سنی کر ضرور کر دے گا۔

\"imrank3\" دوسری بات یہ ہے کہ اس پہلی ضرورت پر سب سے کم خرچ آتا ہے۔ دیگر ضروریات جیسے تعلیم، صحت انصاف وغیرہ پر خرچ بھی زیادہ آتا ہے۔ اور وہ معاملات پیچیدہ بھی زیادہ ہیں۔ ان دیگر ضروریات پر خرچ کرنے سے بچنے کےلیے ن لیگ اگلا اہتمام یہ کرتی ہے کہ عوام کو انہی ضرورت تک محدود بھی رکھتی ہے۔ یعنی وہ ان کی پہلی ضرورت بھی اس طرح پوری نہیں کرتی کہ اگلا مطالبہ اٹھ کھڑا ہو۔ ن لیگ کو تجربہ ہو چکا ہے کہ پیٹ بھرے نوجوانون کو اپنی طرف مائل کرنے کے لیے لیپ ٹاپ جیسی مہنگی سکیم پر اربوں روپے لگانے پڑے تھے، اتنے پیسوں میں تو وہ تین بار الیکشن جیت جاتی۔ اسی لیے آپ دیکھیے کہ تعلیم سے ایک گونا بیر ہے ن لیگ کو۔ تعلیم ان کی ترجیحات میں ڈھونڈنے سے بھی نظر ںہیں آتی۔ چنانچہ وہ عوام کو حتی المقدور اسی پہلی ضرورت کے دائرے میں گھماتے رہتے ہیں، اور لوگ روٹی سے پھر روٹی تک کی امید اور وعدوں پر ہر بار اپنا ووٹ ان کے لیے قربان کرتے چلے جاتے ہیں۔ نہ صرف یہ بلکہ ان کے لیے دل و جان سے نعرے بھی لگاتے ہیں، ان کی گاڑیوں کے آگے بھنگڑے بھی ڈالتے ہیں، صرف اس لیے کہ ان کی روزی روٹی لگی رہے۔

ہم جانتے ہیں اس نظام میں غریب کی عزت محفوظ نہیں۔ سو روپے کی چوری کے جھوٹے الزام پر پولیس جو تذلیل ایک غریب آدمی کی کرتی ہے، چھتر مار مار کر اس کا مثانہ تک پھاڑ دیتی ہے، لیکن مبینہ طور پر کروڑوں کی چوری کرنے والی ایان علی کو جیل میں بھی عزت و احترام ملتا ہے۔ غریبوں کی عزت سے کوئی طاقتور جب چاہے جتنا چاہے کھلواڑ کر سکتا ہے، نظام اس کا ہاتھ پکڑنے کی بجائے اس کی پشت پر کھڑا ہو جاتا ہے۔ لیکن پاکستان کے غریب عوام کو آپ جتنا بھی سمجھا لیں کہ پولیس، کچہری، عدالت وغیرہ کا یہ نظام جان بوجھ کر ایسا ظالمانہ بنا کر رکھا گیا ہے تاکہ طاقتور جو فائدہ اٹھانے چاہے اٹھا لے اور الٹا تم اس ظلم سے بچنے کے لیے بھی اسی ظالم ایم این اے، ایم پی اے اور وززیر اعلیٰ کے در پر سجدہ ریز ہو جنھوں نے یہ نظام بنایا ہے تاکہ وہ تمہاری داد رسی بھی تمہارے ووٹ کی قیمت پر کریں، لیکن یہ روٹی کے پیچھے بھاگتے عوام اپنا ووٹ ن لیگ کو ہی دیں گے۔ یہ معاملہ جبلت سے متعلق ہے عقل والے چاہے جتنا زور لگا لیں وہ جبلت کو شکست نہیں دے پائیں گے۔

عمران خان کا انصاف کا نعرہ ماسلو کی بیان کر دہ ترتیب کے لحاظ سے چوتھے نمبر پر آتا ہے، کیونکہ اس کا تعلق عزتِ نفس سے ہے، اسی لیے عمران خان کو باوجود اپنی ذاتی کرشماتی شخصیت کے اپنی بات سمجھانے میں دو دہائیاں لگ گئیں۔ اتنی محنت کے باوجود بھی اس کے گرد وہی لوگ جمع ہو سکے جو پیٹ، تحفظ اور محبت کی تینوں ضرورتوں سے آگے اب ملک میں عزت نفس سے جینے کا حق مانگتے تھے۔ یہ الگ بات ہے کہ منشور فی الحقیقت درست ہونے کے باوجود عمران خان کی اپنی ایجی ٹیشن کی سیاست اور بد اخلاقی نے خود اس کی راہ میں کتنی مشکلات کھڑی کیں، اس کے سپورٹرز کو کتنا مایوس کیا اور اس کی ناکامی میں دیگر خارجی عوامل کا کتنا دخل ہے۔

ن لیگ اور دیگر سٹیس کو کی جماعتوں کے قائم کردہ اس چکر ویو کا توڑ بہت مشکل ہے۔ اس کا علاج کسی آمر سے تو ہرگز ممکن نہیں۔ آمروں نے اس اندھیرے کو مزید گہرا ہی کیا ہے۔ اس صورتِ حال سے نجات مستقبل قریب میں تو دکھائی نہیں دیتی۔

اس مضمون میں تاجر برادری اور لینڈ مافیا پر بات نہیں کی گئی جو ٹیکس سے بچنے اور کارباری فوائد اور مراعات کے حصول کے لیے ن لیگ کے ساتھ ایک مافیا بناتے ہیں اور اس لیے اس کے کٹر ووٹرز بھی ہیں۔ اس مضمون کا تعلق عوام کے اکثریتی طبقے سے ہے۔


Comments

'ہم سب' کا کمنٹس سے متفق ہونا ضروری نہیں ہے۔ کمنٹ کرنے والا فرد اپنے الفاظ کا مکمل طور پر ذمہ دار ہے اور اس کے کمنٹس کا 'ہم سب' کی انتظامیہ سے کوئی تعلق نہیں ہے۔

2 thoughts on “ن لیگ کامیاب کیوں ہوتی ہے؟

  • 24-07-2016 at 6:29 pm
    Permalink

    آپ کے مضممون سے مجھے کچھ جزوبی اختلاف ہے ۔ عمران خان نے کبھی بھی الیکشن جیتنے کی سنجیدہ کوشش ہی نہیں۔ عمران خان الیکشن میں حصہ صرف اس لیتے ہیں تاکہ الیکشن کا ماحول بن جائے ۔ ورنہ الیکشن میں کامیابی کے لئے کچھ اور کرنا ہوتا ہے ۔ جو عمران خان سمیت سب کو بہت اچھی طرح معلوم ہے ۔

  • 24-07-2016 at 11:07 pm
    Permalink

    2014 کے الیکشن میں عمران سنجیدہ تھا۔ اس نے کوشش بھی خوب کی۔ اس میں البتہ دھاندلی بہت ہوئی

Comments are closed.