شیخ کہتا رہا حساب حساب ۔۔۔ کشفی ملتانی


\"kashfi\" شور ہے ہر طرف سحاب سحاب

ساقیا! ساقیا! شراب! شراب

آبِ حیواں کو مَے سے کیا نسبت!

پانی پانی ہے اور شراب شراب!

رند بخشے گئے قیامت میں

شیخ کہتا رہا حساب حساب

اک وہی مستِ با خبر نکلا

جس کو کہتے تھے سب خراب خراب

مجھ سے وجہِ گناہ جب پوچھی

سر جھکا کے کہا شباب شباب\"kashafi-multani\"

جام گرنے لگا، تو بہکا شیخ

تھامنا ! تھامنا! کتاب! کتاب!

کب وہ آتا ہے سامنے کشفی

جس کی ہر اک ادا حجاب حجاب

 

(کشفی ملتانی)


Comments

'ہم سب' کا کمنٹس سے متفق ہونا ضروری نہیں ہے۔ کمنٹ کرنے والا فرد اپنے الفاظ کا مکمل طور پر ذمہ دار ہے اور اس کے کمنٹس کا 'ہم سب' کی انتظامیہ سے کوئی تعلق نہیں ہے۔

اسی بارے میں: ۔  ہجر کرتے یا کوئی وصل گزارا کرتے... عبیداللہ علیم