نئے سال کی غیراخلاقی مگریقینی پیشگوئیاں


\"\"عصر حاضر کے ناسٹرے ڈیمس طوطے شاہ المعروف باوا سرکار نے اس دفعہ پھر دسمبر کا مہینہ ایک دور افتادہ خفیہ پہاڑی مقام پر قیام فرمایا اور ستاروں کی چالوں کا قریب سے مشاہدہ فرما کر ان کی روشنی میں آپ کا مستقبل کھوجنے کی سعی کی۔ باوا سرکار نئے سال2017ءکی قابل دست اندازی پولیس قسم کی یقینی پیشگوئیاں کرنے کے بعد اسی پہاڑی جائے واردات کی طرف ہجرت فرما گئے ہیں۔ آپ نے اس وقت تک دوبارہ آستانے پرقدم رنجہ نہ ہونے کا عزم کیا ہے، جب تک پیش گوئیاں ذیل کی بنا پر ان کی جان و آبرو کو لاحق خطرات رفع نہیں ہو جاتے۔

٭سالِ نو بھی سابقہ برس کی ”فوٹو سٹیٹ“ ہی ثابت ہوگا اور عالمی منڈی میں تیل مہنگا اور انسانی خون سستا ہوگا۔

٭خواتین میں لباس کا ناجائز استعمال فروغ پائے گا اور بعض ”مستورات“ عریانی کے لیے ستر پوشی سے کام لیں گی۔ مزید برآں ستاروں نے باوا سرکار کو نئے سال کے چند ایسے فیشنز کے درشن بھی کرائے ہیں کہ اگر ان کے ڈیزائنوں کا الفاظ میں نقشہ کھینچا جائے تو پیشگوئی ہذا سنسر کی زد میں آ جائے۔

٭اقبال اور فیض شناسوں میں مزید کمی ہوگی ، البتہ استاد امام دین گجراتی کے کلام پر تحقیق و تنقید کا عمل تیز ہوگا۔ نیز بیک وقت کئی شعرائے کرام عصرِ حاضر کے امام دین قرار پائیں گے اور عدیم النظیر مناصب و اعزازات سے نوازے جائیں گے۔ حسن کارکردگی کے سالانہ” استاد امام دین گجراتی ایوارڈ“ کا اجراءبھی ہوگا۔ علاوہ ازیں ”قہقہاتی ادب“ فروغ پائے گا اور طنز و مزاح پر سبقت حاصل کرے گا۔

٭سارا سال ملک کو پولیو ، خسرہ، خناق ، ٹی بی اور آشو ب آگہی جیسی مہلک بیماریوں سے پاک کرنے کے لیے جہدِ مسلسل جاری رہے گی اور ان خطرناک امراض میں خاطر خواہ کمی آئے گی۔

٭گیس اور بجلی کی مایہ ناز لوڈ شیڈنگ اور اس کے خاتمے کے بیانات شانہ بشانہ چلیں گے اور نتیجہ وہی رہے گا جو پانی بلونے کے بعد سامنے آتا ہے نیز اس عظیم لوڈ شیڈنگ کے صدقے ”عظمتِ رفتہ“ بحال کرنے میں مدد ملے گی اور بعض بزرگوں کا غاروں کے زمانے میں پلٹنے کا خواب شرمندہ تعبیر ہو گا۔

٭محبوب اور موبائل کی سمیں تبدیل کرنے کا رحجان فروغ پائے گا ، نیز محبوب کی بے نیازیوں سے دلبرداشتہ ہوکر خود کشی کے رحجانات میں خاطر خواہ کمی آئے گی۔ تاہم آلام زمانہ اور مہنگائی کے ہاتھوں مجبور ہوکر یہ عمل ترقی کر سکتا ہے۔ نیز سامانِ تعیش مثلاً آٹا،چینی ، تیل ، بجلی وغیرہ مسافرانِ خستہ جاں کی دسترس سے باہر ہو جائے گا۔

٭امسال کوئی عظیم دانشور گوشہ گمنامی میں یوں چپ چاپ دنیا سے گزر جائے گا ، جیسے بشریٰ انصاری کے پاس سے دبے پاﺅں وقت گزرا ہے۔

٭New Horizon نامی امریکی خلائی جہاز 36 ہزارمیل فی گھنٹہ کی رفتار سے اگلی دنیاﺅں کی طرف سفر کرتا رہے گا۔ جبکہ کسی نامعلوم ریاست میں ریورس گیئر میں اتنی ہی رفتار سے ترقی کا سفر جاری و ساری رہے گا۔ نیز کسی اخلاق باختہ قوم کے سائنسدان چاند پر زندگی گزارنا ممکن کر دکھائیں گے ، جبکہ اخلاقی قدروں سے مزین کوئی برگزیدہ قوم عید کا چاند دیکھنے پر باہم دست و گریباں رہے گی۔

٭قائداعظم کے افکار و نظریات کی اصلاح کا خیرالعمل جاری رہے گا اور صالحین ملت و جہاد ی قلمکار اس بے ریا، کھرے اور شریف آدمی کو حضرت مولانا محمد علی جناح ثابت کرنے کے لیے ایڑی چوٹی کا زور لگائیں گے۔ ان کی زبانِ دشنہ و خنجر اور قلمِ بے نیام سے التباسات تڑپ تڑپ کر نکلیں گے اور نیم خواندہ اور جذباتی قوم کو تڑپا کر رکھ دیں گے۔

٭چند بزرگ سیاستدان، دانشور اور مذہبی رہنما جو اپنی طبعی عمر پوری کر کے ”اوور ٹائم“ لگا رہے ہیں ،راہی بقا ہو جائیں گے۔ تاہم قوم کو اس سے کوئی فائدہ نہ ہوگا کیونکہ ان کا خلا پر کرنے کے لیے لائنیں لگی ہوئی ہیں۔

٭سیاسی ملائیت، جمہوریت کے خلاف صف آرا رہے گی نیز فنونِ لطیفہ کی سرکوبی کے لیے کوئی دقیقہ فروگزاشت نہ کرے گی۔

٭”غنڈی رن“ اور ”حسینہ زیرو میٹر“ برانڈ اصلاحی فلمیں بنا کر پڑوسی ملک کی مخرب اخلاق فلموں کا مقابلہ کیا جائے گا۔

٭تھیٹر اور ٹی وی ڈرامہ بدستور زوال کا شکار رہیں گے،البتہ ٹوپی ڈرامے اور پگڑی ڈرامے میں خوب ترقی کریں گے۔ نیز نان ایشوز پر دھرنے بازیوں کا مقابلہ کرنے کے لیے بیان بازیاں ، جگت بازیاں ، رنگ بازیاں ، آتش بازیاں ، پتنگ بازیاں اور نقاب کشائیاں جاری رہیں گی۔

٭دہشت گردوں کے خلاف آپریشن جاری رہے گا اور شدت پسندی کی انڈسٹری بھی اپنی پروڈکشن جاری رکھے گی۔

٭جرائم کا بول بالا ہوگا اور قانون کا منہ کالا ہوگا۔

٭یہود و ہنود ہماری دختر ملالہ یوسفزئی کو کئی اور ایوارڈ دے کر ہماری پولیو زدہ غیرت پر تازیانے برسائیں گے۔

٭پڑوسی ملک کے ساتھ امن اور دوستی قائم ہونے کے شدید خطرات منڈلاتے رہیںگے ،تاہم”غیرت بریگیڈ“ کا جذبہ ایمانی خطرات کے ان بادلوں کو بن برسے ہی بھاگنے پر مجبور کردے گا۔

٭جہالت، جذباتیت اور غربت شانہ بشانہ چلیں گی اور باہم مل کر ایسا طوفان برپا کریں گی کہ عقل، منطق، دلیل اور رواداری کی نیم جاں شمعیں گل ہونے کا خطرہ ہے۔ نیز مردانہ قوت کے ساتھ ساتھ معاشرے میں قوتِ برداشت میں بھی مزید کمی آنے کا خدشہ ہے۔

نوٹ: قبلہ طوطے شاہ کو ستاروں نے اور بھی کئی ہوشربا پیشگوئیوں سے”روشناس“ کرایا ہے۔ تاہم باوا سرکار نے عدم برداشت کے نامہرباں موسموں میں ان کو طشتِ ازبام کرنے سے اجتناب فرمایا ہے کہ

بلھے شاہ ہن چپ چنگیری

نہ کر ایتھے ایڈی دلیری


Comments

FB Login Required - comments