فوج میں توسیع کس لئے


 

mujahid aliپاک فوج نے وزارت خزانہ سے پاک فوج کا ایک نیا سیکورٹی ڈویژن کھڑا کرنے کے لئے فندز فراہم کرنے کا مطالبہ کیا ہے۔ پاک فوج کے اعلیٰ افسروں نے اس بارے میں وزارت خزانہ کے حکام سے ملاقات کی اور فوری طور پر اس منصوبے پر اٹھنے والے اخراجات پورے کرنے کا مطالبہ کیا ہے۔ وزارت خزانہ کے جاری کردہ پریس ریلیز میں بتایا گیا ہے کہ وزیر خزانہ اسحاق ڈار نے فوجی وفد کو یقین دلایا ہے کہ حکومت ملک کی سیکورٹی کی صورت حال سے پوری طرح آگاہ ہے اور نیا ڈویژن اور کئی نئے بٹالین استوار کرنے کے لئے ضروری فنڈز فراہم کئے جائیں گے۔ خبروں کے انبار میں یہ اہم قومی خبر صرف ایک انگریزی اخبار میں جگہ پا سکی ہے۔ سرکاری پریس اعلامیہ یہ بتانے میں ناکام ہے کہ فوج کس قدر اضافی رقم کا مطالبہ کررہی ہے۔

ملک کی سیکوٹی صورت حال تشویشناک ہے اور کراچی سے لے کر خیبر تک فوج کو دہشت گرد عناصر کے خاتمہ اور تلاش کے لئے متعین کیا جاتا ہے۔ تمام صوبائی حکومتیں پولیس اور صوبائی سطح پر دیگر سیکورٹی اداروں کو مستحکم کرنے، ان کا اعتماد بحال کرنے، انہیں دسائل، مناسب تربیت اور اسلحہ کی فراہمی میں بھی ناکام رہی ہیں۔ دوسرے لفظوں میں یہ کہا جا سکتا ہے کہ ملک میں انتہا پسندی اور تشدد کے جرائم میں خطرناک حد تک اضافہ کے باوجود صوبائی حکومتیں اپنی ذمہ داری پوری کرنے میں ناکام ہیں۔ نہ وفاقی حکومت انہیں اس بارے میں آمادہ کرنے کی کوشش کرتی ہے۔ اسے شاید یہ بات ذیادہ آسان لگتی ہے رینجرز اور دیگر وفاقی اداروں کے ذریعے صوبوں کی مدد کرکے خود اختیارات استعمال کئے جائیں اور فیصلوں پر اثر انداز ہؤا جائے۔ کراچی میں سندھ حکومت کے ساتھ سامنے آنے والے اختلافات اس پالیسی کی عکاسی کرتے ہیں۔ اس کے علاوہ

سیاست دان پولیس کو ذاتی پروٹوکول اور مقاصد کے لئے استعمال کرکےزیادہ راحت محسوس کرتے ہیں۔
فوج کا بنیادی کام سرحدوں کی حفاظت اور بیرونی حملوں کی صورت میں ملک کا دفاع کرنا ہے۔ لیکن ملک میں گزشتہ دو دہائیوں کے دوران جس طرح انتہا پسند گروہوں کو من مانی کرنے کا موقع دیا گیا ہے، اس کے سبب تمام ضروری سول معاملات میں فوج دخیل نظر آتی ہے۔ ملک میں نئے جمہوری دور میں دوسری حکومت اپنی نصف مدت پوری کرچکی ہے لیکن یہ بات ہر روز مزید واضح ہوتی جارہی ہے کہ فوج کے سربراہ کو ساتھ ملائے بغیر منتخب نمائندے حکومت کرنے کے قابل نہیں ہیں۔ اس لئے اگر ہفتہ عشرہ وزیراعظم کی آرمی چیف سے ملاقات نہ ہو یا ان کی اکٹھے تصویر شائع نہ ہو تو یہ افواہیں گشت کرنے لگتی ہیں کہ دال میں کچھ کالا ہے۔ حکومت کے دن گنے جارہے ہیں۔ گویا طاقت کا اصل مرکز جی ایچ کیو GHQ کو بنا دیا گیا اور اس کی اس حیثیت کو چیلنج کرنے کی کوئی کوشش بھی دیکھنے میں نہیں آتی۔ اسی لئے سرکاری نمائیندے کسی لمحے فوج اور سول حکومت کے ایک پیج پر ہونے کی یاددہانی کروانا نہیں بھولتے۔

فوج کی نفری اور قوت میں اضافہ ایک اہم قومی فیصلہ ہے لیکن یہ معاملہ نہ تو منتخب ایوانوں میں پیش ہوگا اور نہ ہی اس پر بحث ہوگی۔ ملک کی سیکورٹی اور قومی مفاد کے نام پر غریب عوام کے وسائل بے دریغ فوج کو اس کے تقاضے اور ضرورت کے مطابق فراہم کردئے جائیں گے۔ جب آرمی چیف منتخب لیڈروں سے زیادہ مقبول بھی ہو اور طاقتور بھی تو اس کے سوا چارہ بھی کیا ہے۔ لیکن اس ملک میں چار بار فوج کی حکمرانی اور دس برس تک کسی نہ کسی طرح اندرونی سرکش عناصر سے لڑائی نے یہ بات واضح کردی ہے کہ عسکری قوت کسی مسلہ کا حتمی حل نہیں ہے۔ امن قائم کرنے اور انتشار سے جان چھڑانے کے لئے سیاستدانوں کو مفادات کو بالائے طاق رکھنا پڑے گا اور بہتر صلاحیت کا مظاہرہ کرنا ہوگا۔ جس ملک میں ایک ہفتہ تک قومی ائیر لاین اس لئے بند رہے کہ حکومت خسارہ برداشت کرنے کی صلاحیت نہیں رکھتی اور جو ملک عالمی قرضوں کے بغیر دیوالیہ ہونے کے قریب ہو وہ فوج کو مضبوط اور طاقتور بنا کر کیا حاصل کرے گا۔ اگر لوگ بھوکے اور بے روزگار رہیں گے تو سیکورٹی کے نام پر کچھ کیجئے ، نتیجہ ڈھاک کے تین پات ہی ہوگا۔


Comments

FB Login Required - comments

سید مجاہد علی

(بشکریہ کاروان ناروے)

syed-mujahid-ali has 415 posts and counting.See all posts by syed-mujahid-ali

One thought on “فوج میں توسیع کس لئے

  • 08-02-2016 at 3:27 pm
    Permalink

    فوج اگر توسیع کررہی ھے تو اُس کی منطقی وجہ بھی سامنے ھے اور ہمیشہ کی طرح مطالبہ میں اس کی تفصیل بھی لازماََ ھوگی جس پر بحث ایک الگ موضوع ھے۔ تاہم کابینہ میں وزیروں مشیروں منشیوں للوؤں چپوؤں کا آئیے دن بلاجواز اور بلا اجازت من مانا اضافہ ھوتا ھے پہلے اس کی وضاحت ضروری ھے۔ یہی نہیں بلکہ پاکستان کے سفارتخانوں میں آئے دن نام نہاد “اٹیچی” اور اس قسم کی ‘بندہ نواز’ بھرتیاں ھورہی ہیں پہلے انُ کی خبر لیجیئے، جب اس سے فارغ ھوجائِں تو گھوسٹ ملازمین کا سراغ لگائیے تو بات سمجھ بھی آئے۔ پاکستان اپنے ہمسائہ ممالک میں سوائے افغانستان کے فوج پر سب کم خرچ کرنے والا ملک ھے جو فی کس اوسطاََ مذکورہ ہمسایہ ممالک کے مقابلے پچاس فیصد سے بھی کم خرچ کرتا ھے تاہم انہی ممالک میں سب سے پڑی اور سب سے مہنگی کابینہ رکھنے والا ملک بھی پاکستان ہی ھے

Comments are closed.