علامہ مشرقی ، ’تذکرہ‘ اور نوبل پرائز !


khizer hayatبہت کم لوگ جانتے ہوں گے کہ برسوں پہلے 1924ءمیں علامہ عنایت اللہ مشرقی صاحب کو 36سال کی عمر میں اپنی کتاب ” تذکرہ ” پر نوبل پرائز کے لئے نامزد کیا گیا تھا – لیکن نوبل کمیٹی نے شرط یہ رکھی تھی کہ علامہ صاحب اس کتاب کا کسی یورپی زبان میں ترجمہ کروائیں- مگر علامہ مشرقی نے اس شرط کو قبول کرنے سے انکار کر دیا اور اس طرح وہ نوبل پرائز نہ حاصل کر سکے – تذکرہ کتاب میں علامہ صاحب نے قران اور قدرت کے قوانین کا سائنسی تجزیہ کیا ہے – اس کتاب کا ترجمہ نہ کروانے کی ان کی کیا توجیح ہو گی یہ سمجھ نہیں آتی – کیونکہ وہ نہ صرف روایتی ملا نہ تھے بلکہ ان کے بہت خلاف تھے
علامہ عنایت مشرقی صاحب ایک ہمہ جہت شخصیت کے مالک تھے – ایک بہت بڑے ریاضی دان کے علاوہ وہ سیاسی ، سماجی اور مذہبی سکالر بھی تھے – انگلستان میں اپنی تعلیم کے دوران کیمبرج یونیورسٹی میں ان کی دوستی سر جین جونز اور سر نیوٹن جیسے بڑے سائنسدانوں سے ہوئی – جنہیں علامہ صاحب نے اسلام اور اپنے پیغمبر صلعم کے بارے میں آگاہ کیا – اور شنید ہے انہوں نے اسلامی کتب کے مطالعہ کے بعد علامہ صاحب سے جنگ کے دوران قید ہونے والی خواتین سے سلوک پر سوال اٹھایا – جس پر علامہ بہت پریشان ہوے اور کچھ عرصہ تعلیمی سلسلے کو منقطع کر کے قران اور حدیث کے مطالعہ میں اپنے آپ کو غرق کر لیا – اس کے بعد ہی انہوں نے تذکرہ اور ملا کا غلط مذہب نامی کتب لکھیں – اور وہ اس نتیجے پر پہنچے کہ حدیثوں میں جنگی قیدی خواتین سے جس سلوک کا ذکر ملتا ہے کہ انہیں اپنی مرضی سے استعمال کیا جا سکتا ہے قران میں ایسے سلوک کا enayatذکر ہر گز نہیں ہے – اللہ نے تو صاف کہا ہے کہ قیدی خواتین کو جزیہ لے کر دشمنوں کے حوالے کر دیں – اور اگر وہ جزیہ دینے سے انکاری ہوں تو صلح رحمی کرتے ہوے بغیر جزیہ کے دشمن کو ان کی خواتین واپس کر دیں ۔ ہمارے سیدی مودودی صاحب نے اپنی تفسیر میں حدیث والے ورژن کو ہی مستند لکھا ہے اور اس سلوک کی انتہائی بھیانک شکل کا مظاہرہ آجکل داعش کے جنگی جنونی کر رہے ہیں
علامہ مشرقی صاحب صرف 25سال کی عمر میں کالج پرنسپل بن گئے تھے اور 29 سال کی عمر میں ایجوکیشن ڈیپارٹمنٹ کے انڈر سیکریٹری بن گے تھے – بعد میں انہیں کئی بڑے عہدے آفر ہوے جیسے افغانستان کی سفارت مگر انہوں نے ایسی کسی آفر کو قبول نہیں کیا بلکہ سرکاری ملازمت چھوڑ کر 1930ءمیں خاکسار تحریک کی داغ بیل ڈالی – اس تحریک کا بنیادی مقصد غریب عوام کی بلاتفریق مذہب و فرقہ خدمت کرنا تھا – اس تحریک کیلئے کئی دفعہ وہ جیل بھی گئے۔ وہ انڈیا کی تقسیم کے حق میں نہیں تھے اور اسے انگریزوں کی سازش قرار دیتے تھے – علامہ مشرقی نے 1956ءمیں منٹو پارک میں پیش گوئی کی تھی کہ اگر مشرقی پاکستان کے مسائل کو حل نہ کیا گیا تو یہ علیحدہ ہو جائے گا اور ان کی پیش گوئی سچ ثابت ہوئی –


Comments

FB Login Required - comments

5 thoughts on “علامہ مشرقی ، ’تذکرہ‘ اور نوبل پرائز !

  • 08-02-2016 at 6:56 pm
    Permalink

    علامہ مشرقی کا المیہ جو پوری ااسلامی امہ کا المیہ تھا وہ یہ کہ وہ ریاضی اور سائینس کا میدان چھوڑ کر سیاست کے میدزن میں کود پڑے ۔ وہ ریاضی میں اعلی صلاحیتوں کے مالک تھے اور بلا شبہ اگر اس میدان میں رہتے تو اآنسٹائین کو بھی پیچھے چھوڑ دیتے۔ علامہ کے داماد اختر حمید خان جامعہ ملیہ میں میرے استاد محترم تھے ان سے جب بھی علامہ کے بارے میں بات ہوئی انہوں نے اس بات سے اتفاق کیا۔ صد حیف کہ اتنے اتنے عظیم دانشور ہم نے سیاست کے بے ثمر ہاتھوں گنوا دئے۔ ہے دھیا کہاں گئے وے لوگ؟ اآصف جیلانی

  • 09-02-2016 at 10:16 am
    Permalink

    خضر حیات صاحب کے مطابق کیمبرج یونیورسٹی میں علامہ مشرقی کی جن بلند پایہ سائنس دانوں سے دوستی تھی ان میں نیوٹن بھی شامل تھے۔ میری معلومات کے مطابق نیوٹن تقریباًتین سو چوہتر برس پہلے پیدا ہوئے تھے۔ اس لحاظ سے علامہ مشرقی سے ان کی دوستی ذرا مشکل بات لگتی ہے۔

  • 16-02-2016 at 11:22 am
    Permalink

    @ Shakeel Chaudhry: Moreover, Allama Mashriqi’s name is not present in the nomination database of Nobel prize website for the year 1924 or even 1925. Looks like Khizr Hayat Khan is an admirer of Allama Mashriqi which of course, does not grant him the right to present fantasies as facts.

  • 16-02-2016 at 1:01 pm
    Permalink

    Well noted Shakeel Chaudhry Sb. (Sir Isaac Newton: 1642 – 1727).
    Moreover, I could not find Allama Mashriqi’s name in the nominees list of 1924 or 1925 for a Nobel prize in any field. Please check out:
    http://www.nobelprize.org/nomination/archive/list.php
    With all respect and honor for Allama Mashriqi, Khizr Hayat Khan seems to be one of his admirers which, of course, does not grant him the right to present fantasies as facts.

Comments are closed.