جاؤ۔ ہم نے تمہارا پرندہ آزاد کیا


جاؤ
ہم نے تمہارا پرندہ آزاد کیا
بس چونچ اس کی کاٹ دی ہے
جو دراصل چبھتی بہت ہے ان انگلیوں میں
جو فیصلہ لکھنے کے بعد قلم توڑ دیتی ہیں
بس ایک ذرا سی زبان ہی تو تھی اس کی
جو ہم نے اپنے پاس رکھ لی ہے
تاکہ اس کے شور و شرابے سے بیدار نہ ہوں
گہری نیند میں مدفون اہلِ چمن
اور پنجے مروڑ دیے ہیں ذرا زرا سے
تاکہ چمن کی ٹہنیوں پر جم کر بیٹھا نہ رہے
پروں کو بھی تھوڑا سا نوچ لیا ہے
تاکہ دوبارہ اتنی اُڑان نہ بھر سکے
کہ زندانوں کی اونچی فصیلوں پر آ کر بیٹھ جائے
اور تم ہمیں الزام دو
کہ ہمارا پرندہ قید میں ڈال دیا ہے تم نے
چلو اب لوٹ جاؤ سب کے سب اپنے گھروں کو
اور لمبی تان کر ایک مطمئن نیند سو جاؤ
کہ اب پھر کبھی ایسا نہ ہوگا
جاؤ
ہم نے تمہارا پرندہ آزاد کیا

image_pdfimage_print

Comments - User is solely responsible for his/her words

اگر آپ یہ سمجھتے ہیں کہ ”ہم سب“ ایک مثبت سوچ کو فروغ دے کر ایک بہتر پاکستان کی تشکیل میں مدد دے رہا ہے تو ہمارا ساتھ دیں۔ سپورٹ کے لئے اس لنک پر کلک کریں

نورالہدیٰ شاہ

نور الہدی شاہ سندھی اور اردو زبان کی ایک مقبول مصنفہ اور ڈرامہ نگار ہیں۔ انسانی جذبوں کو زبان دیتی ان کی تحریریں معاشرے کو سوچنے پر مجبور کر دیتی ہیں۔

noor-ul-huda-shah has 65 posts and counting.See all posts by noor-ul-huda-shah