عالمی شخصیات کی ٹرمپ کے مسلم پناہ گزینوں پرپابندی کے فیصلے پر کڑی تنقید


\"\"

غیرملکی خبررساں ادارے کے مطابق ڈونلڈ ٹرمپ کے متنازع ایگزیکٹو آرڈر کے بعد عالمی رہنماؤں سمیت مختلف نامور شخصیات کی جانب سے فیصلے پر شدید تنقید کی جارہی ہے۔ برطانوی وزیراعظم تھریسامے نے 7 مسلم ممالک کے پناہ گزینوں کے امریکا داخلے کے فیصلے کو انسانیت کے خلاف قرار دیتے ہوئے برطانوی وزیرخارجہ بورس جانسن کو حکم دیا کہ وہ فوری طورپر اس معاملے کو امریکی ہم منصب کے سامنے اٹھائیں اور اپنے تحفظات کا اظہار کریں۔

برطانوی لیبر رہنما جریمی کوربین نے مطالبہ کیا ہے کہ ڈونلڈ ٹرمپ کے متنازع آرڈر کے جواب میں رواں سال کے آخر میں امریکی صدر کے دورہ برطانیہ کو منسوخ کردیا جائے جب کہ برطانوی شہریوں کی جانب سے حکومت سے مطالبہ کیا جارہا ہے کہ ڈونلڈ ٹرمپ کے دورہ برطانیہ کو منسوخ کردیا جائے اور اس مقصد کے لئے شہری آن لائن پٹیشن پر دستخط بھی کر رہے ہیں۔

\"\"
Kim Kardashian West
✔@KimKardashian
Statistics

10:45 AM – 29 Jan 2017

نامورامریکی ماڈل کم کارڈیشئن نے ٹوئٹر پرامریکا میں ہلاک ہونے والے شہریوں کے سالانہ اعداد و شمار جاری کئے جس میں ان کا کہنا تھا کہ امریکا میں سالانہ سب سے زیادہ شہری بندوق کے غیرقانونی استعمال سے ہلاک ہوتے ہیں جس کے ذمہ دار عام شہری ہیں لیکن پناہ گزینوں کو امریکا کی سیکیورٹی کے لئے خطرہ قرار دیتے ہوئے ان کے ملک میں داخلے پر پابندی عائد کی گئی ایسے افراد کی تعداد صرف 2 ہے۔ انہوں نے مطالبہ کیا کہ مسلمانوں پر پابندی لگانے کے لئے امریکا میں بندوق کے غیرقانونی استعمال کو روکا جائے۔

لندن کے میئر صادق خان نے ٹرمپ کے ایگزیکٹو آرڈر کو تنقید کا نشانہ بناتے ہوئے کہا کہ امریکا کے صدر کو برطانیہ صرف اسی وقت آنے دیا جائے گا جب وہ مسلمانوں پرعائد کردہ متنازع فیصلے کو واپس نہیں لے لیتے۔

 \"\"
Boris Johnson
✔@BorisJohnson
We will protect the rights and freedoms of UK nationals home and abroad. Divisive and wrong to stigmatise because of nationality

برطانوی وزیرخارجہ بورس جانسن نے اپنی ٹوئٹ میں کہا کہ ہم اپنے شہریوں کے حقوق اورآزادی کا تحفظ نہ صرف برطانیہ میں بلکہ بیرون ملک بھی کریں گے، کسی پر قومیت کی بنیاد پر پابندی لگانے کو رسوائی سمجھتے ہیں۔ برطانوی وزیرخارجہ کی ٹوئٹ پر ان کی بہن نے بھی جوابی ٹوئٹ پر تبصرہ کرتے ہوئے لکھا کہ ہمیں صرف برطانیہ کے شہریوں ہی کی نہیں بلکہ ہر کسی شخص کے حقوق کا تحفظ کرنا چاہیئے۔

\"\"


Comments

'ہم سب' کا کمنٹس سے متفق ہونا ضروری نہیں ہے۔ کمنٹ کرنے والا فرد اپنے الفاظ کا مکمل طور پر ذمہ دار ہے اور اس کے کمنٹس کا 'ہم سب' کی انتظامیہ سے کوئی تعلق نہیں ہے۔