ہم اداس کیوں ہیں؟


wajahatکچھ عرصہ قبل ایک غیرملکی تحقیق میں بتایا گیا کہ پاکستان کے رہنے والے دنیا کے اداس ترین لوگوں میں چوتھے نمبر پر آ گئے ہیں۔ اس میں دنیا کے لیے کوئی خبر ہو تو ہو، ہمارے لیے تو یہ روزمرہ کا مشاہدہ ہے۔ پاکستان کے کسی شہر میں کسی سڑک پر نکل جایئے، مجال ہے جو کسی چہرے پر مسکراہٹ نظر آئے، کسی کوچے کا رخ کیجئے، ممکن نہیں کہ کوئی نوجوان قہقہہ سماعت میں رس گھولے۔ کبھی لاہور میں قیوم نظر کا خارا شگاف قہقہہ گورنمنٹ کالج لاہور کے کیفے سے پاک ٹی ہاﺅس تک گونجتا تھا اور کچھ دور شیزان ریستوران سے سردار صادق کا قہقہہ گویا اس مصرع طرح پر گرہ لگاتا تھا۔ صبح سویرے لیڈی سائیکلوں پر سوار پری چہرہ لوگوں کے کھلکھلاتے پرے پنجاب یونیورسٹی کی طرف جاتے دکھائی دیتے تھے۔ پھر اس شہر میں ایک شاعر اترا۔ سدا رہے نام اس کا پیارا، ناصر کاظمی کہلاتا تھا۔ انبالے کی روشنی تھا۔ اداسی کے اسباب تو کچھ بعد میں سامنے آئے، وہ تو اچھے دنوں ہی سے کچھ ایسے شعر کہتا آ رہا تھا۔

دل تو میرا اداس ہے ناصر
شہر کیوں سائیں سائیں کرتا ہے

اور پھر

ہمارے گھر کی دیواروں پہ ناصر
اداسی بال کھولے سو رہی ہے

خود اداس رہتا تھا اور دوسروں کے لیے یہ تجویز تھی ۔

مت ملا کر اداس لوگوں سے
حسن تیرا بکھر نہ جائے کہیں

60 ءکی دہائی میں سیاسی بیان بازی کی ہوا چلی تو ایک روز ناصر انتظار حسین کے پاس پہنچے۔ انتظار حسین مشرق میں لاہور نامہ لکھا کرتے تھے۔ فرمائش کی کہ آج میرا بیان بھی شائع کر دیں۔ انتظار نے کہا ۔ فرمائیے۔ آپ کیا بیان دینا چاہتے ہیں۔ ناصر نے دھویں کا مرغولہ اڑاتے ہوئے کہا، ” لکھو، معروف غزل گو شاعر ناصر کاظمی نے بیان دیا ہے کہ آج میں اداس ہوں“۔ انتظار صاحب نے ہکا بکا ہو کر کہا مگر صاحب آپ کے بیان میں خبریت کہاں ہے؟انتظار ٹھہرے افسانہ نویس، شاعر کی طرزیں کیاجانیں۔ شاعر نے تو 58 ءکے موسم خزاں ہی میں خبر دے دی تھی۔

ان سہمے ہوئے شہروں کی فضا کچھ کہتی ہے

جس بستی کے شاعر اداس ہو جائیں، جہاں گائیک خاموش ہو جائیں، جہاں پرندے ہجرت کر جائیں، جہاں بچے ہنسنا بھول جائیں، وہاں گلیوں میں دھوپ تعزیت کرنے اترتی ہے۔ یہ دیس ہمیشہ سے تو ایسا اداس نہیں تھا۔ شور تھا اس مکاں میں کیا کیا کچھ۔ بہت بعد میں فیض نے بھی تو یاد دلایا تھا۔

گلیوں میں پھرا کرتے تھے دو چار دوانے
یہ شہر اداس اتنا زیادہ تو نہیں تھا

ثقہ لوگ قہقہے کو ابتذال سے تعبیر کرتے ہیں۔ جو ثقاہت کو ثقافت میں بدلنا چاہتے ہیں، ان کا کہنا ہے کہ قہقہہ تو تسلیم کا اشارہ ہے، امید کا استعارہ ہے، تحفظ کا نشان ہے۔ جہاں سے قہقہہ اٹھ جائے وہاں میر انیس جیسے بابصیرت سوچ میں پڑ جاتے ہیں۔

یہ بے سبب نہیں سُونے گھروں کے سناٹے

اور جو سبب ڈھونڈنے نکلیں تو فہرست نہیں، دفتر تیار ہو گا۔ لیاقت علی، حسین شہید سہروردی، ذوالفقار علی بھٹو، بینظیر بھٹواور نواز شریف کی صورت میں امیدوں کی جو فصل کھیت رہی، وہ الگ ہے۔ اداسی کے اس نسخے میں ایوب، یحییٰ، ضیاالحق اور پرویز مشرف کے اجزا شامل کر لیں، تین آئین مثلہ کیے گئے، وطن دولخت ہوا، بھابھڑا سے ڈھاکہ تک، سائیٹ کراچی سے لیاقت باغ تک، کالونی ملز سے ہشت نگر تک، پکا قلعہ سے کھچی گراﺅنڈ تک، ڈیرہ بگتی کی پہاڑیوں سے چہار باغ سوات تک

پتیاں روتی ہیں، سر پیٹتی ہیں
قتل گل عام ہوا ہے اب کے

اور پھر یہ بھی تو دیکھیں حالیہ انسانی تاریخ میں پاکستان جیسے کتنے ایسے ملک ملیں گے جہاں کے بہترین ذہنوں نے تین نسلوں سے انسانی وقار، جمہوریت اور شہریت کی مساوات کے لیے بے پناہ قربانیاں دیں لیکن ہر آئے روز حکم ہوتا ہے، ”اٹھاﺅ پتھر اور چڑھو پھر سے پہاڑ کی چوٹی پر“۔

اداسی کا ایک پہلو تو اس آگہی سے بھی جنم لیتا ہے کہ اسی دنیا میں ”ایسے معمورے بھی ہیں، خوشحال ہے خلقت جن کی“۔جہاں علم کے چشمے بہتے ہیں، جہاں کارخانوں میں پہیہ گھومتا ہے، جہاں حکمران عوام کی مرضی سے چنے جاتے ہیں اور اپنے ہم وطنوں کی بہبود کے لیے سرگرداں رہتے ہیں، جہاں سڑکوں پر کوئی بچیوں کے لباس پر اعتراض کا یارا نہیں رکھتا، جہاں لکھنے والے کا قلم آزاد ہے، مصور کا مو قلم خشک نہیں ہوا اور ساز کے تار سُرمیں ہیں۔

ہماری اداسی محض غربت کا سوال نہیں۔ یہ وسائل کی قلت سے بھی جنم نہیں لیتی۔ ہماری اداسی ہمارے الجھاﺅ سے نکلی ہے۔ ہماری معاشرت کی سمت طے نہیں ہوئی، ہماری سیاست میں نشان منزل کا تعین نہیں ہوا، ہم نے مل جل کر رہنے کے لیے ضروری خطوط نہیں کھینچے۔ ہماری اداسی انہونی کے خوف کا نام ہے۔ ہم نے سوچ پر پہرے لگا رکھے ہیں اور ہم ایک مسیحا کے انتظار میں ہیں۔ جو قومیں مسیحا کے انتظار میں رہتی ہیں وہ بالآخر تھک کر اداس ہو جاتی ہیں…. اور پھر یہ اداسی ٹھہر جاتی ہے۔


Comments

FB Login Required - comments

2 thoughts on “ہم اداس کیوں ہیں؟

  • 11-02-2016 at 8:46 pm
    Permalink

    آج سمجھ آئی کہ برادر محترم وجاہت مسعود کے چہرے میں اس قدر اداسی کیوں ہوتی ہے. چند ماہ قبل میرے چھوٹے بھائی نے اپنے پاسپورٹ کی فوٹو کاپی بھیجی تھی جو کہ میں نے دوسری دستویزات کے ساتھ نیشنل ویزہ سینٹر بھیج دی. وہ بھی تصویر میں حیران و پریشان نظر آ رہے تھے. اب یاد آیا کہ جب میں خود پاکستان میں مقیم تھا تو میرے چہرے پر بھی اداسی کا بسیرا رہتا تھا. خیر اب طویل عرصے سے امریکہ میں قیام کی وجہ سے امریکیوں کے رنگ میں رنگ چکا ہوں. یہاں چند ایک کے سوا لوگوں کی بڑی تعداد دفتروں، بازاروں، پارکوں، شاپنگ مالوں، اور بسوں ٹرینوں میں بھی خوش و خرم نظر آتی ہے. اس کی وجہ وہی ہے جو محترم وجاہت مسعود صاحب اپنے مضمون بیان کر چکے. یہاں لوگ اپنے کام سے کام رکھتے ہیں. کسی دوسرے کے مذھبی، نسلی، یا جنسی معاملات میں ٹانگ نہیں اڑاتے. عیسائی اور یہودی مذھبی پیشوا بھی اپنی مذھبی سرگرمیاں عبادت گاہوں تک محدود رکھتے ہیں. عبادت گاہوں سے باہر صرف ریاست کی رٹ چلتی ہے اور ریاست کا کوئی مذهب نہیں ہے. لھذا لوگوں کی سوچوں پر پہرے نہیں. لیکن اس کا کیا کیا جائے کہ کچھ پاکستانی اپنی مذھبی، سیاسی، یا نسلی نفرت و عداوت کو امریکہ اور کینیڈا میں بھی زندہ رکھنا چاہتے ہیں.

  • 13-02-2016 at 2:55 pm
    Permalink

    خوبصورت تحریر

Comments are closed.