گلگت بلتستان حکومت کے سیاسی تعصب پر مبنی اقدامات


\"\" یہ بات پاکستان میں مسلمہ ہے کہ چھوٹے صوبوں، آزاد کشمیر ، فاٹا اور گلگت بلتستان میں تو وہی جماعت  کامیاب ہوتی ہے جس کی اسلام آباد میں حکومت ہو۔ ان علاقوںمیں انتخابات کے دوران  پاکستان کے وزیر  اور مشیر کھلم کھلا مداخلت کرتے ہیں ، انتخابی عمل میں حصہ لیتے ہیں اور   لوگوں کو متاثر کرنے کے لئے ترقیاتی کاموں کے سچے جھوٹے اعلانات بھی کرتے ہیں۔  اگر ان کے اس اقدام کو پاکستان کے قانون اور آیئن کی خلاف ورزی  اس بنا پر نہیں سمجھا جاتا ہے  کہ گلگت بلتستان اور آزاد کشمیر میں ان قوانین کا اطلاق نہیں ہوتا ہے۔    اگر ایسا ہے تو پھر کن قوانین کے تحت وہاں کے باشندوں کو سزایئں دی جاتی ہیں ، سمجھ میں نہیں آتا کہ کیسے  کسی ملک کے قوانین  کا اس کے اپنے شہریوں پر اطلاق نہیں ہوتا۔ برجیس طاہر اور قمر الزمان کائرہ  کس قانون کے تحت وفاقی وزیر ہوتے ہوئے گلگت بلتستان کے گورنر بھی ہو سکتے ہیں حالانکہ پاکستان کا قانون کہتا ہے کہ ایک شخص دو جگہوں سے تنخواہ نہیں لے سکتا۔  یہاں تو  ایک ہی خزانے سے تنخواہ کیساتھ پینشن اور تا حیات مراعات بھی  لےلئے جاتے ہیں ۔

 چلو مان لیتے ہیں کہ اگر وہ اپنے کسی وزیر مشیر  کو اس کی کار کردگی کے انعام کے طور پر نوازنا چاہے تو گلگت بلتستان اور آزاد کشمیر کے لوگوں کو بلا کیا اعتراض ہو سکتا ہے۔  لیکن  جب یہاں کے باشندوں  کے ساتھ کسی قسم کی تفریق ہوتی ہے تو وہ مزاحمت ضرور  کرتے ہیں۔  اس طرح کی ایک تفریق جنرل ضیاء الحق  کے مارشل لائی دور میں گلگت بلتستان کے مقامی اور غیر مقامی سرکاری  ملازمین کے درمیان کی گئی   جس میں آخرالذکر  کو پچیس فیصد اضافی الاؤنس دیا گیا تھا ۔  اس امتیازی سلوک  کے خلاف گلگت بلتستان کے مقامی ملازمین نے تحریک چلائی اور برابری  کے حق کے حصول تک جاری رکھی تھی ۔

ایک دفعہ پھر  گلگت بلتستان کی سرکار کا ایک خط دیکھ کر میرے ہوش و حواس اڑ گئے ہیں  جس میں سرکاری  فنڈ کی اسمبلی کے ممبران میں تقسیم میں  سرکاری  جماعت سے تعلق رکھنے والے ممبران اور حزب اختلاف کے ممبران کے بیچ  تفریق کی گئی ہے۔   یہ شاید   کسی سرکاری مہر کے ساتھ واحدایسا  خط ہے جس میں ریاستی وسائل کی تقسیم  میں ان لوگوں کو انتہائی بے شرمی اور ہٹ دھرمی کیساتھ سزا دی  گئی ہے جنھوں  نےا سلام آباد میں  بر سر اقتدار جماعت کو ووٹ نہ دینے کا گناہ کیا  ہے۔  اگر یہ تعصب نہیں ہے تو پھر جنوبی افریقہ کی سفید فام  سرکار تو بالکل ہی متعصب نہیں تھی جس  سے آزادی کے لئے نیلسن منڈیلا نے اپنی آدھی زندگی عقوبت خانوں میں گزاردی۔  اگر یہ تعصب نہیں تو ہندوستان میں کونسا تعصب اور   تفریق ہے جس کی بنیاد پر کشمیری آزادی مانگتے ہیں اوراسرائیل کی کون سی جانبداری ہے  جس سے آزادی کے لئے  فلسطینی جدوجہد کر  رہے ہیں۔  اگر کسی مہذب جمہوری ملک میں ایساسرکاری خط لکھا گیا ہوتا اور لوگوں کے درمیان کسی سرکار نے ایسی تفریق کی ہوتی تو طوفان برپا ہوتا اور ایسا کرنے والے جیل میں ہوتے۔ یہاں کسی عدالت کا  ایسے تعصبی اقدام کے خلاف نوٹس نہ لینا یا   خود اپوزیشن کے ممبران  کا اس تفریق کے خلاف مزاحمت نہ کرنا ہماری سرد مہری اور نااہلی  کا ثبوت ہے۔

منتخب عوامی نمائندے  اپنے متعلقہ انتخابی حلقوں کی نیابت کرتے ہیں ان کے ساتھ کسی قسم کا امتیاز  پورے حلقے کے عوام کیساتھ امتیازی سلوک سمجھا جاتا ہے۔   شہریوں کے ساتھ سیاسی، مذہبی، نسلی، علاقائی یا لسانی بنیادوں پر کسی قسم کا اامتیاز نہ صرف  پاکستان کے آیئن اور دستور سے انحراف ہے بلکہ اقوام متحدہ کے چارٹر کی بھی خلاف ورزی ہے جس کا پاکستان دستخطی ہے۔   گلگت بلتستان کی حکومت کا سرکاری جماعت اور اپوزیشن  کے ارکان میں سرکاری وسائل کی تقسیم  میں   امتیاز سنگین تعصب  پر مبنی قدم ہے  جس کے ان متاثرہ حلقوں کی  سماجی اور معاشی ترقی پرانتہائی منفی  اثرات مرتب ہونگے ۔   اگر اس طرح کے امتیاز کو نہ روکا گیا تو اگلے اقدام میں ان حلقوں کی ترقی ہی روک دی جائیگی جہاں کے لوگوں نے بر سر اقتدار جماعت کو ووٹ نہ دیا ہو اور پھر دیگر انتقامی کاروائیاں ہوں گی جو ریاست کے ماں ہونے کے تصور کو ختم  کردیں گی۔

جمہوری حکومتیں ملکویتیں اور سلطنتیں نہیں ہوتی  ہیں جہاں  بادشاہوں  اور سلاطین کے شاہی فرامین پر  امور مملکت چلائے جاتے ہوں۔ جمہوری حکومتیں اپنے عوام کو جوابدہ ہوتی ہیں اور یہ جوابدہی عوام کے منتخب ایوانوں  کے زریعے ہوا کرتی ہے۔   اگر اس اسمبلی کے ارکان کے خلاف اس قدر امتیاز برتا جارہا ہو   ں تو ایک غریب شخص کے حقوق   کا تحفظ کیسے ہو سکتا ہے؟  اگر اس حلقے کو مالی وسائل کی فراہمی  میں اس قدر تعصب برتا جا رہا ہو جہاں سے حکمران جماعت کو  ووٹ نہیں ملاہے تو پھر نوکریوں اور دیگر حقوق  کی فراہمی میں کتنا امتیاز ہو رہا ہوگا؟  اس طرح  کے واقعات کا کھلم کھلا ہونا  تاریخ کی بد ترین  آمریتوں میں بھی نہیں دیکھا گیا ۔ ایک دفعہ ایک گروپ کے گلگت بلتستان کونسل کے انتخابات کا   بایئکاٹ کے نتیجے میں  کچھ حلقے بغیر نمائندگی کے رہ گئے  تو ان حلقوں  کے ترقیاتی فنڈ  قریب کے حلقوں کے نمائندوں کے ذریعے وہاں خرچ کئے گئے تھے تاکہ کوئی امتیاز نہ رہے۔  مگر اب  کی بار تو حد ہوگئی۔

اگر سرکاری وسائل پر صرف حکمران جماعت کا حق ہے تو پھر کسی قانون یا دستور میں لکھ دیا جائے    تاکہ  یہ کام قانونی اور دستوری طریقے سے ہو سکے۔   اس بات پر بھی لوگوں کو کوئی اعتراض نہیں ہوگا اگر یہ بھی لکھ دیا جائے کہ اسلام آباد میں جس جماعت کی حکومت ہو وہی جماعت اپنے من پسند افراد کو مختلف حلقوں سے نامزد کرکے گلگت بلتستان میں حکومت بنادے گی اور انتخابات کی کوئی ضرورت ہی نہیں ۔ اس طرح کم از کم سرکاری وسائل کی منصفانہ تقسیم تو ہوسکے گی ۔ مگرجب  انتخابات کروا دئے گئے ہیں تو کم از کم عوامی فیصلے کا احترام کیا جائے اور اس طرح کے قرون  وسطیٰ  کے اقدامات سے گریز کیا جائے۔

کسی  بھی دشمن ملک کی  ایجنسیاں اگر زیادہ سے زیادہ کسی دوسرے ملک کو نقصان  وہاں کے عوام کو ریاست سے متنفر کر کے پہنچا سکتی ہیں۔ اگر کسی ملک کی سرکار بنفس نفیس یہ کام اپنے سیاسی   تعصب اور امتیاز پر مبنی اقدامات  خود ہی سے کر رہی ہو تو وہاں کسی اور ملک کی ایجنسیوں کی سازشوں کی بھلا کیا ضرورت رہ جاتی ہے۔  اگر گلگت بلتستان کو فراہم کردہ وسائل پاکستان کے عوام کے ٹیکس   کے پیسے سے سے آتے ہیں تو ان  وسائل کی تقسیم بھی پاکستان کے قانون اور آیئن کے دائرہ کار میں آتی ہوگی۔ ایسے میں پاکستان کے عوام ، یہاں کی حکومتوں ، عدالتوں،  قومی سلامتی کے ادروں ، میڈیا اور سول سوسائٹی کو ایسے تعصب اور امتیاز کا نوٹس لینا ہوگا۔ بصورت دیگر گلگت بلتستان کے عوام یہ سمجھیں گے کہ یہ حکومت پاکستان کی قومی پالیسی ہے کہ جو اسلام آباد میں قائم سرکار کا وفادار نہیں ہوگا  اس کو ہر قسم کے شہری حقوق سے محروم کردیا جائے۔

آج دنیا جب ہر قسم کے تعصبات اور امتیاز کے خلاف متفق  ہے  تو ایسے میں گلگت بلتستان کی سرکار کو ایسی تنگ نظری اور  سیاسی تعصب سے روکنا ہوگا ورنہ ہم دوسرے ممالک کے ایسے متعصب اقدامات کے خلاف بات کس منہ سے کریں گے۔


Comments

'ہم سب' کا کمنٹس سے متفق ہونا ضروری نہیں ہے۔ کمنٹ کرنے والا فرد اپنے الفاظ کا مکمل طور پر ذمہ دار ہے اور اس کے کمنٹس کا 'ہم سب' کی انتظامیہ سے کوئی تعلق نہیں ہے۔

2 thoughts on “گلگت بلتستان حکومت کے سیاسی تعصب پر مبنی اقدامات

  • 03-02-2017 at 2:33 pm
    Permalink

    حکومت جمہوریت کو شاہی لباس پہناکر بادشاہت کا تاج سر پر رکھنے کی کوشش میں ہے۔ اب اس نظام میں بادشاہ کے منظورنظر وہی ہونگے جو سب سرتسلیم خم کے اصول پر عمل پیرا رہینگے۔ن

  • 10-02-2017 at 10:24 am
    Permalink

    گلگت بلتستان کی حکومت کے سرکاری وسائل (فنڈز) کی متعصبانہ تقسیم کے موضوع پر گلگت بلتستان تھینکر فورم پر دو دن تک گفتگو ہوئی۔ اس گفتگو کے سہل کار کی زمہ داری ناچیز کو دی گئی تھی۔ گلگت بلتستان تھینکر فورم میں دنیا کے مختلف ممالک سے ۲۵۰ سے زائدممبران ہیں ۔ ان میں سے کئی شرکاء نے اس موضوع پر اپنی رائے کا اظہار کیا ۔ اس گفتگو کا خلاصہ یوں ہے؛

    یہ فورم اس بات پر متفق ہے کہ قانون ساز ساز اسمبلی کو اس کے اصل کام قانون سازی کرنے دی جائے اور ترقیاتی فنڈز کی بندر بانٹ میں نہ الجھا یا جائۓ۔ اگر ترقیاتی فنڈز اسمبلی کے ارکان کے زریعے دیئے جاتے ہیں تو تقسیم میں سیاسی تعصب، جانب داری اور امتیاز کا ارتکاب نہ کیا جائے۔ موجودہ تقسیم میں اس قبیح تعصب کا اظہار تقسیم کے فارمولے سے عیاں ہے جس میں حزب اقتدار کے ممبران کو سات کروڑ اور حزب اختلاف کے ممبران کو پایچ کروڑ روپے فی کس مختص کرنے کا کہا گیا ہے۔ اس پر مستزاد یہ کہ خواتین ممبران اور ٹیکنو کریٹ کو بھی دو دو کروڑ روپے اضافی دئے جائیں گے جن کی اکثریت کا تعلق بھی حزب اقتدار سے ہے۔ یہ فنڈز اس پچیس کروڑ روپے کے علاوہ ہیں جو چیف منسٹر کے خصوصی فنڈ کے نام پر رکھے گئے ہیں ۔

    یہ فورم اس بات پر بھی متفق ہے کہ ریاستی وسائل کی تقسیم میں اس طرح کی سیاسی جانب داری اور تعصب کا مظاہرہ ماضی میں کبھی نہیں دیکھا گیا اور نہ ہی پاکستان کے کسی اور صوبے یا وفاق میں اس کی مثال ملتی ہے۔

    اگر اس طرح کا سیاسی تعصب جاری رہا اور ترقیاتی فنڈز کو سیاسی انتقام کے لئے استعمال جاری رہا تو اس کی شکل زیادہ خوفناک ہوسکتی ہے اور اس پسماندہ اور غریب علاقے میں غربت اور افلاس میں مزید اضافہ ہوگا اور یہ ایک انسانی المیہ ہو سکتا ہے۔

    فورم نے خدشے کا اظہار کیا کہ اگر اس روش کو نہ روکا گیا اور اس نوٹیفیکیشن کو واپس نہ لیا گیا تو اس حساس خطے کے عوام کے آپس میں نفرتوں میں اضافہ ہو جائیگا اور اور دوریاں پیدا ہونگی۔

    جی بی تھینکر فورم کے شرکاء کا کہنا ہے کہ خواتین ممبران کو دئے جانے والے فنڈز کو پورے جی بی پر خرچ کیا جائے اور ٹیکنو کریٹس کا فنڈ ختم کرکے ان کو تیکنیکی مشاورت تک محدود کیا جائے۔

    فورم کے ممبران نے عہد کیا کہ سرکار کے اس متعصبانہ عمل کے خلاف اور عوام میں اس تعصب کے خلاف شعور کو اجاگر کرنے کے لئے ہر فورم اور ہر پلیٹ فارم کو استعمال کیا جائیگا۔

    فورم نے وکلا برادری اور انسانی حقوق کی انجمنوں اور افراد پر زور دیا کہ وہ عدالتی چارہ جوئی کا راستہ بھی اختیار کریں تاکہ اس تعصب کو مزید پھیلنے سے قبل ہی روک دیا جائے۔

    فورم کے شرکاء نے افسر شاہی سمیت تمام ریاستی اداروں پر زور دیا کہ اس قسم کے غیر اخلاقی، غیر قانونی، غیر آئینی امور کی انجام دہی میں وہ سرکار کا ساتھ دینے سے اجتناب کریں اور ایک ریفری کے طور پر ریاستی امور غیر جانبداری سے انجام دیں۔ بصورت دیگر افسر شاہی اور دیگر ریاستی اداروں کو بھی شریک جرم سمجھا جائیگا۔

    فورم میں شریک دیگر وفاقی پارٹیوں (پی ٹی آئی اور پی پی پی وغیرہ ) سے وابستہ ممبران نے اپنے پارلیمانی ممبران سے اس معاملے کو وفاق کے ایوانوں میں اٹھانے کا بھی وعدہ کیا۔

    اس موضوع پر ضمنی گفتگو کے طور پر ترقیاتی فنڈز میں کرپشن اور بلدیاتی اداروں کے انتخابات نہ ہونے پر بھی بات ہوئی ۔ چونکہ وہ بھی انتہائی اہمیت کے حامل موضوعات ہیں اس لئے فورم کے ایڈمن سے گزارش کی گئی کہ ان پر الگ سے گفتگو کرائی جائے اور ممبران کی اراء سے مستفید ہوا جائے۔

    گفتگو کے آخر میں ناچیز نے بطور سہل کار تمام شرکاء اور ایڈمن کا شکریہ آدا کیا۔

Comments are closed.