ویلنٹائن ڈے کی مخالفت کیوں؟


amir hashimویلنٹائن ڈے کے حوالے سے ہمارے ہاں تین مختلف قسم کے ردعمل موجود ہیں۔ کچھ لوگ اس کے حق میں ہیں، اسے پروموٹ کرتے اور اس کے لئے دلائل دیتے ہیں، چونکہ اس معاملے میں کارپوریٹ معاملات شامل ہیں۔ بعض پراڈکٹس ویلنٹائن کے حوالے سے فروخت ہوتی ہیں، اس لئے کنزیومر ازم بھی ساتھ شامل ہو جاتا ہے۔ ویلنٹائن ڈے کی پروڈکٹس (چاکلیٹ، پھول، ٹیڈی بیئر وغیرہ) کی فروخت سے جن کے مفادات وابستہ ہیں، ان کی حمایت کی وجہ سمجھ بھی آتی ہے، مگر ویلنٹائن کو نظریاتی اور فکری بنیادوں پر سپورٹ فراہم کرنے والا حلقہ بنیادی طور پر یا تو عیش پرست ہے جو موج مستی کرنا پسند کرتے ہیں یا پھر یہ لبرل عناصر ہیں،جو فرد کی آزادی کے موید ہیں۔ جس کا جو جی چاہے ، وہ کرے، کوئی پابندی نہ لگائی جائے۔ ادھر ویلنٹائن کی مخالفت کرنے والے حلقے میں روایتی مذہبی لوگوں کے علاوہ لوئر مڈل کلا س کی روایتی اخلاقیات والے لوگ شامل ہیں، جن کے خیال میں اپنی مشرقی اور اسلامی اقدار کی حفاظت کرتے ہوئے ہمیں اپنے بچوں کو مغرب کی تہذیبی یلغار سے بچاناچاہیے۔

ویلنٹائن ڈے کی حمایت میں تین چار دلائل دئیے جاتے ہیں۔ یہ محبت کے اظہار کا دن ہے، اس پر پابندی کیوں لگائی جائے؟انسانی زندگیوں میں نفرتیں اس قدر زیادہ ہوچکی ہیں ، اگر ایک دن محبت کے نام کر دیا گیا ہے تو اس میں کیا برائی ہے؟ نوجوان لوگ کچھ دیر کے لئے خوش ہوجائیں، کچھ ہنس کھیل لیں تو کون سی قیامت آ جائے گی، مولوی حضرات کسی کو خوش دیکھ نہیں سکتے۔ وغیرہ وغیرہ۔ ایک اور دلیل جو عام طور سے دی جاتی ہے، ویلنٹائن ڈے صرف لڑکے اور لڑکی کی محبت کا دن نہیں ہے، محبت کا صرف یہی رنگ تو نہیں ، ماں ، باپ ، بھائیوں وغیرہ کو بھی پھول دئیے جاسکتے ہیں۔ پرخلوص محبت کا اظہار ہی ہے، ایک دن مقرر ہوگیا ہے تو اسے منانے میں کیا حرج ہوسکتا ہے؟ بعض لوگ اس الزام پر برہم ہوجاتے ہیں کہ ویلنٹائن ڈے مغرب سے درآمد شدہ تہوار ہے، جھنجھلاہٹ میں یہ ایک ہی فقرہ دہراتے ہیں، ویلنٹائن مغرب سے آیا ہے تو پھر کیا ہوا؟ اس میں کیا حرج ہے…؟

ویلنٹائن ڈے کے حوالے سے کوئی حتمی رائے قائم کرنے سے پہلے دو تین باتیں سمجھ لی جائیں۔ سب سے اہم یہ کہ ہر تہوار یا دن کا ایک خاص پس منظر اور ایک مجموعی تاثر (Overall Impact)ہوتا ہے۔اسی مخصوص پس منظر ہی میں اسے دیکھنا پڑے گا ، یہ ممکن نہیں کہ آپ اس کے کسی ضمنی اثر(Side Effect) کو قبول کر لیں اور صرف اسی کی بنیاد پر رائے قائم کر لیں۔ مثال کے طور پر روزے ہم اللہ کے حکم کی تعمیل میں رکھتے ہیں اور یہ ایک طرح سے تذکیہ نفس کا طریقہ ہے۔ اس کے ضمنی فوائد بے شمار ہوسکتے ہیں، بعض ماہرین اس کے طبی فوائد بھی گنواتے ہیں۔ یہ ثانوی اثرات یا فوائد خواہ جس قدر ہوجائیں، مگر روزے کا بنیادی سبب جو ہے ،و ہی رہے گا۔ ایسا نہیں کہ کوئی سمارٹ ہونے کے لئے روزے رکھنے شروع کر دے، ایسا کرنا ہرگز عبادت نہیں کہلائے گا۔ یہی بات نماز کے بارے میں کہی جاتی ہے۔ اللہ کا حکم ہے، ہمیں رسول اللہؐ نے یہ سکھایا اور اس کے اجر سے متعارف کرایا۔ اب نماز پڑھنے کے ضمنی اثرات کئی ہوں گے ، بعض سکالر اس میں ورزش کے پہلو کی جانب اشارہ کرتے ہیں، تو کچھ اسے ذہنی سکون کا نسخہ تصور کرتے ہیں وغیرہ وغیرہ۔ یہ سب کچھ اپنی جگہ ،نماز مگر نماز ہی رہے گی، اللہ کی بندگی کا ایک اسلوب، نبیؐ کے بتائے ہوئے طریقے کے مطابق ۔اس کا مجموعی تاثر بھی وہی رہے گا، اسی سے یہ عبادت پہچانی جاتی ہے۔ تہوار کی بات چل رہی ہے تو عیدکو لے لیں۔ عید الفطر انعام ہے رمضان المبارک کی عبادت کا، اس دن کو اسی پس منظر میں دیکھا اور جانا جاتا ہے۔

عیدالضحیٰ میں قربانی کی سنت پوری کی جاتی ہے، تاریخی پس منظر ہے،جس سے اس دن کو پہچاناجاتا ہے۔ ویلنٹائن ڈے کا ایک پس منظر ہے، مغربی تاریخ میں کچھ روایات ہیں اور پھر جدید مغربی تاریخ میں اس دن کو منانے کا بدلتا انداز ہے، جس پر اب دو عشروں سے کارپوریٹ روایات اور کنزیومرازم کا غلبہ ہوچکا۔ ویلنٹائن بنیادی طور پر پرو نکاح یا پرومیرج تحریک تھی۔ جب ایک خاص زمانے میں بادشاہ وقت نے نوجوانوں پر شادی کرنے کی پابندی عائد کر دی کہ شادی شدہ لوگ اپنی بیوی بچوں کی محبت میں فوج میں شامل ہونے سے گریز کرنے لگے تھے۔روایت کے مطابق سینٹ ویلنٹائن نے اس ناروا شاہی حکم سے بغاوت کا راستہ نکالا اور نوجوان جوڑوں کی شادیوں کا سلسلہ شروع کر دیا۔اسی جرم میں اسے سزا بھی ہوئی ،مگر یہ سلسلہ چل نکلا۔ بیسویں صدی کے دوسرے نصف حصے میں جب مغرب کی بدلتی اخلاقی قدروں میں شادی کا انسٹی ٹیوشن کمزور پڑنے لگا تو ویلنٹائن ڈے کا انداز بھی بدل دیا گیا۔ اب محبت کرنے والے جوڑوں کے مابین عہد وپیمان اور کھلے اظہار محبت کے لئے اسے استعمال کیا جانے لگا۔ رفتہ رفتہ اس میں کنزیومر ازم کا رنگ بڑھتا گیا۔ اب صرف اظہار کافی نہیں بلکہ سرخ پھول ، چاکلیٹ ، ٹیڈی بیئر وغیرہ لازم ہوگئے، ویلنٹائن ڈنرروایت ہوگئی اور پھر ویسٹرن سٹائل میں رومانوی شام منانے بلکہ زیادہ کھلے الفاظ میں شب بسری کے تمام لوازمات شامل ہوتے گئے ۔

ویلنٹائن ڈے کی مغربی روایت میں اور جو لوگ پاکستان جیسے ملک میںیہ دن رائج کرنا چاہتے ہیں، ان سب پر یہ واضح ہے کہ یہ خالصتاً مرد و عورت کے مابین اظہار محبت کا دن ہے۔ یہ اظہار محبت بھی مغربی کلچر سے مستعار یا اخذ کردہ ہے۔ مشرقی کلچر اور اسلامی روایات میں جس کی قطعی گنجائش نہیں۔ جس طرح کسی نئی چیز کو معاشرے کے لئے قابل قبول بناتے ہوئے پہلے کچھ تکلفات اور ادب آداب کا لبادہ پہنایا جاتا ہے۔ اسی طرح اس دن کے حوالے سے کہہ دیا جاتا ہے کہ اسے ماں باپ یا بہن بھائیوں سے محبت کے اظہار کے لئے بھی استعمال کیا جا سکتا ہے۔ نہیں جناب، یہ دلیل درست نہیں ہے۔ یہ صرف ایک حیلہ، دھوکہ اور تنقید کرنے والوں کا منہ بندکرنے کا حربہ ہے۔ ہمیں اپنے والدین اور بہن بھائیوں سے اظہار محبت کے لئے غیر اخلاقی، مشکوک پس منظر والے کسی دن کی ضرورت نہیں۔ اول تو مقدس رشتوں کے ساتھ اظہار محبت کو الگ دن کی ضرورت نہیں۔ ہمارا مذہب، ہماری روایات ہمیں یہ سکھاتی ہیں کہ اپنے ان عزیز رشتوں کے ساتھ محبت ہمیں ہر لمحہ اپنے دل میں زندہ رکھنی اور اپنے عمل سے اسے ثابت کرنا ہے۔ کسی فرماں بردار اولاد کو اپنی سعادت مندی اور محبت ثابت کرنے کے لئے سرخ پھولوں کی ضرورت نہیں۔ اسے صبح سے شام تک کے عمل سے جھلکنا چاہیے۔ اگر ایسا نہیں تو پھر خواہ کتنے پیسے پھولوں، چاکلیٹوں پر خرچ کر دئیے جائیں، وہ سب بیکار ہیں۔

ایک اور اہم نکتہ سمجھنا ضروری ہے کہ محبت کا جذبہ قدرت کا تحفہ ہے، مرد اور عورت کے درمیان محبت ہونا فطری چیز ہے، مخالف جنس کے لئے کشش رکھنابھی ایک حقیقت ہے۔ اس کشش، محبت اور تعلق کو دیرپا بنیادوں پر استوار کرنے اور پھر قائم رکھنے کا ایک طریقہ، قرینہ اور سلیقہ ہے۔ ہماری اسلامی اور مشرقی روایات میں مرد اور عورت ایک خاص اسلوب اور طریقے سے رشتے میں بندھتے ہیں۔ ہمارا مذہب اور سماج اس کی اجازت دیتا ہے، بلکہ حوصلہ افزائی کرتا ہے۔ یہ صرف اسلام کا معاملہ نہیں بلکہ مشرقی تہذیب میں رچے بسے غیر مسلموں کی بھی یہی روایات اور آداب ہیں۔ اس خطے میں رہنے والے ہندو گھرانے ہوں، سکھ یا عیسائی… ہر ایک میںبزرگوں کا احترام کیا جاتا ہے، والدین کی رضامندی سے معاملات آگے بڑھائے جاتے اور اپنی محبت کے جذبوں کو نفاست اور شائستگی کا لبادہ پہنا کر مزید خوبصورت بنایا جاتا ہے۔ اپنی انہی روایات کا احترام کرنا چاہیے، ہر معاشرے کے کچھ بنیادی اجزا ہوتے ہیں، سماج کا فیبرک جن سے جڑا ہوتا ہے، انہیں ادھیڑنے کی کوشش پورے سماج کو درہم برہم کر دیتی ہے۔ ویلنٹائن ڈے کی مخالفت کرنے والے جنونی ، متشدد یا محبت کے مخالف نہیں۔ ان کے دلوں میں بھی بہاریں آتی، جذبے مہکتے اور آنکھیں سپنے دیکھتی ہیں۔ یہ لوگ مگر اپنے جذبات کے کھلے، بے لگام اظہار کو حیوانی فعل گردانتے ہیں۔ یہ چاہتے ہیں کہ محبت جیسے حسین ترین جذبے کی توہین نہ کی جائے۔ عامیانہ، سطحی اور بازاری انداز سے اس کے اظہار کے بجائے مہذب، شائستہ انداز میں رشتوں کے تقدس اور نزاکتیں ملحوظ خاطررکھی جائیں۔ خواہشات کی اس انداز میں تکمیل محبت کو نہ صرف مقدس اور پاکیزہ بنا دیتی ہے بلکہ رب تعالیٰ کے بتائے ہوئے طریقے پر عمل کرنے سے رحمتیں اور برکات بھی شامل ہو جاتی ہیں۔


Comments

FB Login Required - comments

2 thoughts on “ویلنٹائن ڈے کی مخالفت کیوں؟

  • 13-02-2016 at 2:51 pm
    Permalink

    تجزیہ کارانہ طریقے سے لکھی گئی عمدہ تحریر۔ تجزیہ کاری کی متوان مثال اوراظہار اور فکر کا دلیلِ اساسی انداز۔ اگر تاریخ کوپیشِ نظر رکھا جائے تو اس دن کو “یومِ شادی” کے طور پر منانا چاہیئے۔ کیونکہ سینٹ ویلنٹائن کو غیر فطری فرمانِ شاہی کی خلاف ورزی کرتے ہوئے فوجیوں کی شادیاں کروانے کے جرم میں 14 فروری 270ء میں پھانسی دی گئی تھی۔ اس دن اجتماعی شادیاں بھی کروائی جا سکتی ہیں۔ پھر شاید یہ دن مشرقی، اسلامی اور ہماری معاشرتی روایات کے مطابق بھی قابلِ قبول ہو ۔۔۔۔۔ 🙂 🙂

  • 16-02-2016 at 2:25 pm
    Permalink

    بہترین تجزیہ ہے جناب ۔۔۔۔۔۔ Welldone

Comments are closed.