آخری لفظ کے بے کار ہونے تک لکھتے رہو!


naseer nasir

کبھی کبھی یوں لگتا ہے
جیسے دکھ اور بدی کے مقابلے میں
خوشی ناقابلِ حصول ہے
یہ سچ ہے کہ چاند اور ستارے اب روشنی کی امید نہیں رہے
بلکہ شب کی علامتیں ہیں
جو کثرتِ استعمال سے کلیشے ہو چکی ہیں
وقت کے تاریک سمندر میں
سورج کے ابھرنے اور ڈوبنے سے بھی اب کوئی فرق نہیں پڑتا
لیکن آخری حرف کے طلوع ہونے کا انتظار تو کیا جا سکتا ہے
یہ زمین کائنات کا قبائلی علاقہ ہے،
ازلی گنہ گاروں کی آماجگاہ
جہاں جنت سے نکالے گئے مرد و زن رہتے ہیں
یہ ابھی آسمان کے مقابلے میں بہت پس ماندہ ہے
یہاں ہم اپنی مرضی سے
جینے یا مرنے کے حق میں ووٹ نہیں دے سکتے!

کتنی عجیب بات ہے
کہ زیادہ تر نظمیں اور کہانیاں
دلوں اور سرحدوں کے آس پاس
کسی قومیت، کسی توطن کے بغیر جنم لیتی ہیں
اور سرحدیں پار کرتے ہوئے
غیر قانونی داخلے یا جاسوسی کے الزام میں دھر لی جاتی ہیں
بعض ملکوں میں
بارش اور ہوا کو بھی ویزے سے استثنا حاصل نہیں
جنگل کے پھول بھی
پرمٹ کے بغیر اپنی خوشبو برآمد نہیں کر سکتے
پہاڑوں کی چوٹیاں
آمنے سامنے ہونے کے باوجود
ایک دوسری سے گلے نہیں مِل سکتیں
سرحدوں کے طرفین
اجازت ناموں کے لیے
بادل لمبی لمبی قطاروں میں کھڑے رہتے ہیں
یہاں تک کہ پسینے میں شرابور ہو جاتے ہیں!

کسی دور کے ستارے پر رہنے والوں کے لیے
یہ دنیا پیدا بھی نہیں ہوئی ہو گی
لیکن ہم اسے تباہ ہوتے ہوئے بے بسی سے دیکھ رہے ہیں
اور لکھنے کے سوا کچھ نہیں کر سکتے
سچ ہے کہ شاعری دنیا کا نظام نہیں بدل سکتی
وہ تو داس کیپیٹل بھی نہیں بدل سکی
کیونکہ مارکس بھی
شاعری کے راستے سے اشتراکیت میں داخل ہوا تھا
تو پھر یہ کیا ہے جو ہمیں ایک دوسرے کے قریب لے آتا ہے؟
یہ کون سی ترقی پسندی، کون سی سرمایہ داری ہے؟
کون سی جمہوریت، کون سی خلافت، کون سی ملوکیت ہے؟
کیسی دہشت گردی ہے اور کیسی جنگ ہے؟
بم کہیں اور گرتے ہیں
اور دھمک ہمارے دلوں تک آتی ہے
دیواریں کہیں اور ہلتی ہیں
اور شیشے ہماری کھڑکیوں کے ٹوٹتے ہیں
کہیں دور کسی قلم سے خون بہتا ہے
اور یہاں ہماری نظمیں رونے لگتی ہیں!

تاریخ کے راستوں پر پسپا ہوتے ہوئے
زندگی کو کتابوں کی جلی ہوئی لاشوں کے پاس افسردہ دیکھ کر
ہم اس کو دلاسا دینے بھی نہیں رک سکتے
پتا نہیں وہ کس لفظ کی محبوبہ تھی
جو راکھ اور دھویں کی لامختتم ضخامت میں
جانے کون سا معنی، کون سا تناظر ڈھونڈ رہی تھی
آہوں، کراہوں اور سسکیوں کے انبار میں
نظموں کے پیکر اور کہانیوں کے کردار کہیں نیچے دب جاتے ہیں
مسودوں اور عبارتوں کے جنک یارڈ میں
پھٹے پرانے کاغذوں
اور سیل میں خریدے ہوئے کپڑوں اور جوتوں میں کوئی فرق نہیں ہوتا
ڈھیر ہوتی ہوئی بے خلیہ شاعری، افسانے اور کالم
وقت کا غیر نامیاتی سلسلہ ہیں
شاعرو! افسانہ نویسو! کالم نگارو!
آخری لفظ کے بے کار ہونے تک لکھتے رہو
یہاں تک کہ سیاہی کا سارا محلول ختم ہو جائے
شاید روشنی
ہمارے ضیا ترس پہاڑ جیسے جسموں
اور جنگل جیسی گنجان روحوں کے آر پار جانے لگے!


Comments

FB Login Required - comments

3 thoughts on “آخری لفظ کے بے کار ہونے تک لکھتے رہو!

  • 16-02-2016 at 4:00 pm
    Permalink

    یہ زمین کائنات کا قبائلی علاقہ ہے،
    ازلی گنہ گاروں کی آماجگاہ
    جہاں جنت سے نکالے گئے مرد و زن رہتے ہیں
    یہ ابھی آسمان کے مقابلے میں بہت پس ماندہ ہے
    یہاں ہم اپنی مرضی سے
    جینے یا مرنے کے حق میں ووٹ نہیں دے سکتے!

  • 16-02-2016 at 5:24 pm
    Permalink

    Wah! Wah! Wah! Khush rahein sir.

  • 16-02-2016 at 11:09 pm
    Permalink

    شکریہ وقار ملک و محمد طاہر یونس صاحبان

Comments are closed.