عورت کا مسئلہ: سادہ فارمولا، آسان حل


auwn sheraziسید عون شیرازی 

گھر کے اندر مشرقی ماحول اور دہلیز پار کرتے ہی مغربی آزادیوں کی متمنی ہم میں سے اکثریت منافق نہیں ہے تو کیا ہے؟ عجب ڈگر پر چلتا معاشرہ۔ دودھ، دہی، مرچ، مسالے سے لے کر محبت اور خلوص تک میں ملاوٹ طبعیت کا حصہ بن چکی، منافقت ہے کہ فطرت ثانیہ میں ڈھل چکی، جس کے سامنے دانت نکالے تعریفوں کے پل باندھ رہے ہوں گے، نظروں سے اوجھل کیا ہوا، کہ جیسے وہ اپنے ساتھ اپنی ساری خوبیاں بھی لے گیا، اور پھر اسی کی برائیاں، اسی محفل میں، ڈھٹائی کی بھی کوئی حد ہوتی ہے، ہم ٹھیک، باقی سب غلط برائیاں دوسروں میں، ہم تو اچھائیوں کے پیکر صاحب! ریت ہی ایسی چل پڑی ہے باس کے سامنے زبان جی جی کرتے تھکتی نہیں، کہ جیسے باپ سے بھی زیادہ قابل احترام، اُسی کی غیر موجودگی میں اندر کی گرواٹ باہر کا رخ کرتی ہے، اور تب فقرے کسے جا رہے ہوتے ہیں، نقلیں اتاری جا رہی ہوتی ہیں بریکنگ نیوز کی طرح دوسروں کی برائیوں کو پھیلانے والے اپنے حال سے اکثر بے خبر ہی ہوتے ہیں، پارلیمنٹ میں بیٹھے ممبر سے لے کر تھڑے والے تک اور قیمتی ترین سوٹ میں ملبوس پڑھے لکھے سے لے کر گاؤں کے کھیت میں رفع حاجت کرتے گنوار تک، سب ایک مرض کے مریض ہی نظر آتے ہیں۔

چینل تبدیل کر دیا، بہن جو کمرے میں داخل ہوئی، خدا کے بندے اگر بہن کی موجودگی میں توں وہ سب کچھ نہیں دیکھ سکتا تو پھر اکیلے میں بھی نہ دیکھ یا پھر چینل نہ بدل۔ اسے بھی تو معلوم ہو کہ بھائی کتنا معصوم ہے لیکن نہیں! پھر فرشتہ صفت اور شریف کون کہے گا؟ راتوں کو شباب اور شراب کی محفلیں منعقد کرنے والے خودساختہ شرفاء اسی انگور کی بیٹی کے خلاف قراردادیں پیش کرتے ہیں شراب حرام ہے تو پھر پیتے کیوں ہو؟ کوئی شرم، کوئی حیا؟ کہیں سے کوئی جمشید دستی جیسا کردار برآمد ہوتا ہے، جو پارلیمنٹ لاجز سے شراب کی بوتلیں گننے اور ڈھونڈنے میں مصروف، سستی شہرت کے متلا شیو! کچھ تو عقل کرو بازار، دفاتر، شاپنگ مالز، عدالتوں، غرض کہ کسی جگہ بھی عورت نظر آ جائے، تو اس باریک بینی سے جائزہ لینا کہ شاید اس کا مجسمہ تیار کرنا ہو، پاؤں کے انگوٹھے کے ناخن سے لے کر سر کے بالوں تک ایسا مشاہدہ شاید فرشتوں نے بھی بناتے ہوئے نہ کیا ہو گا، ہر گہرائی میں دھنستی اور ابھار پر چڑھتی نظریں اور پھر عورت کے اوجھل ہوتے ہی معاشرے میں بڑھتی فحاشی و عریانی کا لیکچر تیار ہوتا ہے ایسے عوام پھر حکمرانوں پر الزام کس منہ سے لگاتے ہیں۔

چمچہ گیری، چاپلوسی، خوشامد سے اٹی بے حس شخصیتیں اس ملک کا مستقبل کیا سنواریں گے غلام ابن غلام بننے میں فخر، جانوروں جیسے سلوک کے باوجود عجیب سا غرور، سچ میں لگتا ایسا ہی ہے کہ یہ قوم اسی سلوک کی مستحق ہے۔ حالات بدلتے نہیں، عقل کے اندھو! بدلنے پڑتے ہیں، اکیلی دعائیں رنگ نہیں لاتیں، ساتھ دوا بھی کرنی پڑتی ہے طوائفوں کو معاشرے کا ناسور قرار دے کر انہی کی آغوش میں پناہ لینے والو۔۔۔۔۔ دوسروں کی ماں بہن کو دیکھ کر رالیں ٹپکانے والو، پھر اس کے بعد غیرت کی بات کس منہ سے کرتے ہو جب دوسروں کی ماؤں بہنوں کو بے باک نظروں سے گھور رہے ہوتے ہو، تو پھر تیار رہا کرو کہ کوئی تم جیسا غیرت سے عاری انہی نظروں سے تمہاری ماؤں بہنوں کا بھی ایکسرے کر رہا ہو گا وکیل عدالتوں میں، صحافی میڈیا پر، سیاستدان پارلیمنٹ میں، ڈاکٹر ہسپتالوں میں، اساتذہ سکولوں میں، مولوی مساجد میں غرض کہ ہر شعبے کے افراد دو نمبری میں سینے پر تمغے سجائے۔ حقوق اس طرح مانگتے ہیں کہ جیسے تمام فرائض ادا کر دیئے ہوں پھر کہتے ہو مسائل حل نہیں ہوتے، معاشرے سے ریپ، شراب، چوری، ڈکیتی، کرپشن، دو نمبری تب ختم ہو گی، جب نام نہاد شرافت کا لبادہ اتار کر اصلی چہرہ سامنے لاؤ گے۔۔۔۔۔۔ سادہ اور آسان حل یہ ہی ہے۔۔۔۔۔۔ منافقت چھوڑو، جو کرو سامنے کرو۔۔۔۔۔۔۔۔۔ کوئی اچھا ہے یا برا اس کے منہ پر کہو۔۔۔۔۔۔۔۔ جو چیز اپنے لیے جائز سمجھتے ہو، دوسروں کے لیے گناہ نہ سمجھو۔۔۔۔۔۔۔۔ حرام کو حلال کے لبادے میں مت چھپاؤں۔۔۔۔۔۔۔ اپنی بیٹی کی عزت محفوظ رکھنا چاہتے ہو تو پھر عہد کر لو کہ کسی کی بیٹی پر ہوس والی نظریں نہیں ڈالو گے


Comments

FB Login Required - comments

One thought on “عورت کا مسئلہ: سادہ فارمولا، آسان حل

  • 27-02-2016 at 11:36 am
    Permalink

    اللہ آپ کو ہمیشہ خوش رکھے۔

Comments are closed.