شمالی کوریا کے جوہری تجربے کے بعد زلزلے کے شدید جھٹکے


سیئول سے خبر ملی ہے کہ شمالی کوریا نے چھٹا جوہری تجربہ کیا ہے جس کے بعد خطے میں 6.3 شدت کے زلزلے کے جھٹکے محسوس کئے گئے ہیں۔

خبر رساں ادارے اے ایف پی کے مطابق جاپان نے شمالی کوریا کے جوہری تجربے کی تصدیق کرتے ہوئے کہا کہ انہوں نے اس حوالے سے پیونگ یانگ کو باقاعدہ احتجاج ریکارڈ کروایا۔ جاپان کے وزیر خارجہ تارو کونو نے میڈیا کو بتایا کہ محکمہ موسمیات اور دیگر ذرائع سے معلومات حاصل کرنے کے بعد ان کی حکومت تصدیق کرتی ہے کہ شمالی کوریا نے جوہری تجربہ کیا ہے۔ ان کا کہنا تھا کہ جاپانی حکومت نے شمالی کوریا سے احتجاج کرتے ہوئے اس جوہری تجربے کو ‘ناقابل معافی’ قرار دیا ہے۔ اس سے قبل جنوبی کوریا کی فوج کا کہنا تھا کہ انہیں شبہ ہے کہ شمالی کوریا نے چھٹا جوہری تجربہ کیا ہے، جس کی بعدازاں جاپان نے تصدیق کر دی۔ جنوبی کوریا کی ویدر ایجنسی اور جوائنٹ چیف آف اسٹاف کا کہنا تھا کہ مقامی وقت کے مطابق رات 12 بجکر 29 منٹ پر شمالی صوبے ہیم گیونگ میں 5.6 شدت کے مصنوعی زلزلے کے جھٹکے محسوس کیے گئے۔ تاہم امریکی جیولوجیکل سروے نے دھماکے کے نتیجے میں زلزلے کے پہلے جھٹکے کی شدت 6.3 بتائی۔

یہ پیش رفت ایک ایسے وقت میں ہوئی ہے، جب گذشتہ دنوں شمالی کوریا کی جانب سے دعویٰ کیا گیا تھا کہ ان کے لیڈر کِم جونگ ان نے ہائیڈروجن بم کی تیاری کا معائنہ کیا۔ دوسری جانب شمالی کوریا کا کہنا ہے کہ وہ شام ساڑھے 6 بجے ‘اہم اعلان’ کرے گا۔

شمالی کوریا نے ستمبر 2016 میں اپنے پانچویں اور اب تک کے ‘سب سے بڑے’ کامیاب جوہری تجربے کا اعلان کیا تھا، جس کے نتیجے میں پونگی ری نیوکلیئر ٹیسٹ سائٹ کے قریب 5.3 شدت کا زلزلہ آیا تھا۔

جنوری 2016 میں ہی شمالی کوریا نے ہائیڈروجن بم کے پہلے کامیاب تجربے کا دعویٰ کرتے ہوئے کہا تھا کہ وہ امریکہ کی سفاکانہ پالیسیوں سے بچنے کے لیے اپنے جوہری پروگرام کو مزید طاقتور بنانے کا عمل جاری رکھیں گے۔ شمالی کوریا کو اپنے جوہری اور میزائل پروگرام کے باعث عالمی برادری بالخصوص امریکہ کی جانب سے شدید تنقید کا نشانہ بنایا جاتا ہے اور عالمی سطح پر اس کے تعلقات مزید خراب ہوچکے ہیں، تاہم اس کے باوجود بھی شمالی کوریا پیچھے ہٹنے پر تیار نہیں۔

گذشتہ ماہ 29 اگست کو شمالی کوریا نے ایٹمی مواد لے جانے کی صلاحیت کے حامل درمیانے فاصلے تک مار کرنے والے بیلسٹک میزائل کے کامیاب تجربے کا دعویٰ کیا تھا، جو جاپان کے اوپر سے گزرتا ہوا شمالی بحر الکاہل میں اپنے ہدف تک پہنچا تھا۔ شمالی کوریا کے اس میزائل تجربے کے بعد جاپانی وزیراعظم شنزو ایبے نے امریکی صدر ڈونلڈ ٹرمپ سے ٹیلی فونک رابطہ کرکے شمالی کوریا کے اس میزائل تجربے پر تشویش کا اظہار کیا تھا۔

وزیراعظم شنزو ایبے کا کہنا تھا کہ شمالی کوریا کے جارحانہ طریقے سے میزائل کے تجربات پر جاپان اور امریکا کی پوزیشن ایک جیسی ہے جبکہ دونوں رہنماؤں نے پیونگ یانگ کی جارحانہ حکمت عملی کے حوالے سے ہنگامی بنیادوں پر اقوام متحدہ کے سیکیورٹی کونسل کا اجلاس بلانے کا بھی مطالبہ کیا تھا۔ اعلامیے کے مطابق امریکی صدر نے جاپانی وزیراعظم کو شمالی کوریا کی کسی بھی جارحیت کے نتیجے میں جاپان کا دفاع کرنے کی یقین دہانی بھی کرائی۔

خیال رہے کہ گذشتہ ماہ شمالی کوریا کی جانب سے طویل فاصلے تک مار کرنے والے بین البراعظمی بیلسٹک میزائل کا کامیاب تجربہ کرنے کا دعویٰ کیا گیا تھا کہ اب امریکہ شمالی کوریا کے میزائلوں کے نشانے پر ہے۔

image_pdfimage_print
Comments - User is solely responsible for his/her words


اگر آپ یہ سمجھتے ہیں کہ ”ہم سب“ ایک مثبت سوچ کو فروغ دے کر ایک بہتر پاکستان کی تشکیل میں مدد دے رہا ہے تو ہمارا ساتھ دیں۔ سپورٹ کے لئے اس لنک پر کلک کریں