کراچی ہاکس بے پر 12 افراد سمندر میں ڈوب گئے: 11 لاشیں برآمد


کراچیمیں ہاکس بے کے مقام پر پکنک منانے کے لئے آنے والے 12 افراد سمندر کی لہروں کی نذر ہوگئے جن میں سے 11 کی لاشیں نکال لی گئی ہیں۔

کراچی کے ساحل ہاکس بے پر نارتھ کراچی اور ناظم آباد سے تعلق رکھنے والے ایک ہی خاندان کے افراد پکنگ منانے آئے تھے کہ سمندر میں نہاتے ہوئے 12 افراد ڈوب گئے جن میں سے 11 کی لاشیں نکال لی گئی ہیں جب کہ ایک کی تلاش جاری ہے، ڈوبنے والے افراد میں 4 خواتین بھی شامل ہیں۔

عینی شاہدین کا کہنا ہے کہ سمندر میں نہانے کے دوران 3 افراد ڈوب گئے تھے جنہیں بچانے کے لئے دیگر افراد بھی سمندرکی حدود کے اندر چلے گئے اور 12 افراد سمندر کی تیز لہروں کی لپیٹ میں آ گئے۔

ایس پی کیماڑی نے ڈوبنے والے 11 افراد کی لاشیں نکالنے کی تصدیق کرتے ہوئے بتایا ہے کہ 8 افراد کی لاشیں سول اسپتال منتقل کی جا چکی ہیں۔ ایس پی کیماڑی کا کہنا تھا کہ سمندر میں لہریں بہت تیز تھیں اور متاثرہ فیملی کو پولیس اور ریسکیو ٹیموں نے آگے جانے سے منع کیا تھا لیکن اس کے باوجود انہوں نے ہماری ہدایت سنی ان سنی کر دی۔

وزیر اعلیٰ سندھ مراد علی شاہ نے اس واقعے کا نوٹس لیتے ہوئے سیکرٹری داخلہ سے رپورٹ طلب کر لی ہے۔ انہوں نے سیکرٹری داخلہ سے استفسار کیا کہ کیا سمندر میں نہانے پر دفعہ 144 نافذ تھی، کیا ساحل سمندر پر رہنمائی کے لئے سائن بورڈ لگے ہوئے تھے اور عملہ تعینات تھا، واقعہ کیسے پیش آیاَ؟

وزیراعلیٰ سندھ نے انسانی جانوں کے زیاں پر دکھ کا اظہار کرتے ہوئے کہا کہ اس واقعے سے مجھے بہت صدمہ پہنچا ہے اور لواحقین کے غم میں برابر کا شریک ہوں۔

image_pdfimage_print
Comments - User is solely responsible for his/her words


اگر آپ یہ سمجھتے ہیں کہ ”ہم سب“ ایک مثبت سوچ کو فروغ دے کر ایک بہتر پاکستان کی تشکیل میں مدد دے رہا ہے تو ہمارا ساتھ دیں۔ سپورٹ کے لئے اس لنک پر کلک کریں