آئیے اختلاف کریں!


quratul ain fatimaدنیا اختلافات سے بھری پڑی ہے۔ ہر کسی کو اختلاف ہوتا ہے، کسی کو کم اور کسی کو شدید۔ اختلافات کئی طرح کے ہوتے ہیں۔ کچھ ذاتی نوعیت کے، کچھ سرکاری، قومی اور بین الاقوامی سطح کے اور کچھ اختلافات خوامخواہ کے ہوتے ہیں۔ میں اس وقت حیران ہوئی جب ایک میڈیا ورکشاپ میں ایک مشہور اینکر پرسن نے اپنے شاگردوں کو کامیابی کا جو پہلا اصول سکھایا وہ یہی تھا ”خوامخواہ کا اختلاف“ ۔ فرمانے لگے کامیابی اسی میں ہے کہ ایک اچھے خاصے لاجیکل پوائنٹ پر جب کوئی اختلاف نہ کر سکو تو بھی اس پر تنقید کرو۔ ہار نہ مانو، مجھے اختلاف ہے کہہ کر اگلی بات پر آ جاؤ۔ ایک کونے سے کسی دانشمند نے کہا یہ کیسا اختلاف ہے۔ میں نے تنقید کا حق استعمال کرتے ہوئے کہا کہ اسے خوامخواہ کا اختلاف کہتے ہیں۔ میری آواز سامعین تک محدود رہی۔ پہنچ جاتی تو یقیناً استاد محترم اس سے بھی خوامخواہ اختلاف کر کے مجھے خوامخواہ سزا کے طور پر کھڑا رکھتے۔

اختلافات زندگی کا حُسن ہوتے ہیں۔ یہ اتنے حسین ہوتے ہیں کہ یکسر کسی کی زندگی کا رُخ بدل دیتے ہیں۔ اس کی سوچ اور فکر کو ایک نئی راہ پر ڈال کر اس کے لیے کامیابی کے راستے کھول دیتے ہیں۔ یہ اتنے طاقتور ہوتے ہیں کہ بعض اوقات مجموعی زندگیوں میں بھی بڑے پیمانے پر تبدیلی لے آتے ہیں۔ حضورﷺ نے فرمایا میری اُمت کا اختلاف رحمت ہے۔ تنقید اختلاف کا حصہ ہے، تنقید ذہنی افق کو وسیع کرتی ہے۔ تنقید علمی تحفہ ہے۔ تنقید اور اختلاف سے انسان خود کو دریافت کر سکتا ہے۔ تنقید سے ایک گفتگو کے کئی پہلو سامنے آتے ہیں اور انسان کے اندر تخلیقی سوچ پیدا ہوتی ہے۔ تنقید اور اختلاف کو اگر تحمل سے برداشت کیا جائے تو خود اعتمادی کی دولت بھی حاصل کی جا سکتی ہے۔

مشاورت کا حکم بھی اسی لیے دیا گیا کہ جب مشورہ کیا جاتا ہے تو اس میں بہت سے لوگ اختلاف بھی کرتے ہیں جس کی وجہ سے بعد میں کسی اچھے نتیجہ پر پہنچا جا سکتا ہے۔ لیکن اس کے لیے اختلاف کو سمجھنا بہت ضروری ہے۔ ہم تذلیل کو بھی اختلاف رائے کا نام دے دیتے ہیں۔ ہم سر عام بے عزتی کر کے کہتے ہیں یہ تنقید ہے۔ اختلاف رائے تو نعمت ہے۔ لیکن مجموعی طور پر ہم سمجھنے سے قاصر ہیں کہ اختلاف ہماری زندگیوں میں کیسے تبدیلی لا سکتا ہے۔ اختلاف کیسے کیا جائے۔ تنقید کو کیوں کر برداشت کیا جائے۔ تنقید اور تذلیل میں کیا فرق ہے ۔ اس لیے کہ یہ تمام چیزیں ہماری تربیت اور معیار کا حصہ ہی نہیں ہیں۔ ہمارے ہاں تخلیق و تنقید میں جمود ہے اس لیے کہ علمی موضوعات ہوں یا دوسرے معاملات ہم اس پر اختلاف رائے کرتے ہیں اور پھر کرتے ہی چلے جاتے جس کا مقصد دوسرے کو زچ کرنے کے سوا کچھ بھی نہیں ہوتا۔ تعمیری اختلاف کا حُسن یہ ہے کہ اس کا انجام کسی ایک نقطے پر اتفاق پر ہوتا ہے۔ اگر اتفاق نہیں بھی ہوتا تو وہ سوچ کے کئی نئے اُفق سامنے لے کر آتا ہے۔ لیکن ہمارے ہاں تنقید کو برداشت نہیں کیا جاتا۔ خود تو اختلاف کے حق کو استعمال کرتے ہوئے لطف اٹھایا جاتا ہے لیکن دوسرے کو یہ حق نہیں دیا جاتا۔ ہمارے ہاں ایک اور طریقہ بھی رائج ہے۔ ہم اختلاف کر کے پھر اس کو دوسرے پر مسلط بھی کرنے لگتے ہیں۔

ہماری اجتماعی نفسیات میں  اختلافات نظریات کی حیثیت رکھتے ہیں۔ اس کی بنیادی وجہ مقلدانہ ذہنیت بھی ہے۔ جو جس نقطے پر کھڑا ہے وہ اس پر ڈٹ جاتا ہے۔ عموماً شخصیت پرستی بھی اس کی وجہ ہے۔ اکثر دوست احباب کے درمیان کسی موضوع پر اختلاف ہو جاتا ہے۔ وہ اس اختلاف کو شخصیات سے منسوب کر کے اس کے تمام دوسرے پہلوؤں پر سوچ کے دروازے بند کر دیتے ہیں۔ اس کے بعد کوئی دلیل کوئی معنی نہیں رکھتی۔ لیکن ایک صاحب علم کے لیے سب سے اہم چیز تبادلہ خیال ہوتی ہے۔ شخصیات کے اثر اور اپنے مخصوص نظریات سے باہر نکل کر دیکھا جائے تو انسان کتنا آزاد ہے۔ وہ آزادانہ غور و فکر کر سکتا ہے۔ اور اس فکر سے ترقی کے تمام راستے کھلتے ہیں۔ یہ آزادانہ فکر تنقید مانگتی ہے۔ یہ چاہتی ہے اس کے ساتھ ہر کوئی اختلاف کرے۔ اور پھر یہ سوچ ایک رہنما سوچ بن جاتی ہے۔ بصورت دیگر انسان وہی سوچتا ہے جو اس پر مسلط ایک شخصیت سوچتی ہے اور وہ تمام عمر وہی سوچتا چلا جاتا ہے۔ وہ کسی دلیل اور اختلاف کو نہیں مانتا۔ اس کی بنیاد پر وہ خوامخواہ کے اختلافات سے نہ صرف اپنا وقت برباد کرتا ہے بلکہ دوسروں کو بھی اس سے کوئی فائدہ حاصل نہیں ہوتا۔ تنقید اور اختلاف کو ایک اصول کی نظر سے دیکھنا چاہیے نہ کہ اس کو ذاتی یا شخصی سمجھنا چاہیئے۔۔

تنقید کا موضوع اتنا دلچسپ ہے کہ اسے نصاب کا حصہ بھی بنایا جا سکتا ہے۔ جو لوگ تنقید برداشت نہیں کرتے وہ اپنے اندر چھپی صلاحیتیوں سے کبھی آشنا نہیں ہو سکتے۔ تنقید اجتہاد کے راستوں کو بھی کھولتی ہے۔ جہاں اجتہاد رُک جاتا ہے وہاں ترقی رُک جاتی ہے۔ لیکن اس کے لیے تنقید کا تنقید ہونا ضروری ہے نہ کہ تنقیص۔ تنقید علمی اور منطقی تجزیہ ہے۔ جب کہ تنقیص، جسے خوامخواہ کا اختلاف بھی کہا جا سکتا ہے، کا سارا انحصار عیب جوئی اور الزام تراشی اور دوسرے کی تذلیل پر ہوتا ہے جس کا حاصل باہمی بغض و عناد اور منافرت ہے اور جس سے معاشرے میں فتنہ و فساد اور انارکی کا راستہ کھلتا ہے۔ ہماری تربیت جو خوامخواہ اختلافات پر مبنی ہے اس کو آنے والی نسلوں میں منتقل نہیں ہونا چاہیے۔ اس وقت ہمارے معاشرے کو ایک دوسرے کی رائے کا احترام سکھانے کی ضرورت ہے۔ اختلاف کے لیے بلند کی جانے والی آواز دلیل ہو نہ کہ گالی۔ تنقید کا مسکرا کر خیر مقدم کرنے سے ہمارے اندر برداشت کے رویوں کو بھی فروغ دیا جا سکتا ہے۔ اختلافات کے ساتھ دوسروں کو قبول کرنا سیکھنے اور سکھانے کی ضرورت ہے۔ یہ سب تب ہی ممکن ہے جب ہم اپنے اپنے خول سے باہر نکلیں گے۔ یہ خول مخصوص نظریات اور شخصیات کا خول ہے جو ہم پر قابض ہو چکا ہے۔ یہ خول اترنے کے بعد جو اختلافات اٹھیں گے وہ ملک و قوم کو ترقی کی راہ پر گامزن کریں گے۔ ورنہ خوامخواہ کی تنقید اور اختلافات تخریب کو جنم دیتے رہیں گے۔


Comments

FB Login Required - comments

6 thoughts on “آئیے اختلاف کریں!

  • 09-03-2016 at 10:10 am
    Permalink

    تو پھر کریں اختلاف؟ 🙂
    پہلا اختلاف تو یہ ہے کہ آپ اختلاف کیوں کرتی ہیں 🙂 🙂

    • 09-03-2016 at 3:08 pm
      Permalink

      میں اس لیے اختلاف کرتی ہوں کیونکہ مجھے اختلاف کی بیماری ہے 🙂

      • 10-03-2016 at 6:10 am
        Permalink

        یہ تو بڑی خطرناک بیماری ہے، عینی! اختلاف بامقصد ہو اور ایک حد میں رہے تو فائدہ مند۔ حد سے بڑھ جائے اور عادت بن جائے تو ضرر رساں ہوتا ہے۔ ویسے ہمارے ہاں یہ بیماری عام ہے۔ 🙂 🙂

      • 11-03-2016 at 1:20 pm
        Permalink

        عادت نہیں بیماری کہا ہے اور قابل علاج بیماری 🙂

  • 09-03-2016 at 1:08 pm
    Permalink

    “تنقید کا موضوع اتنا دلچسپ ہے کہ اسے نصاب کا حصہ بھی بنایا جا سکتا ہے۔ جو لوگ تنقید برداشت نہیں کرتے وہ اپنے اندر چھپی صلاحیتیوں سے کبھی آشنا نہیں ہو سکتے۔ تنقید اجتہاد کے راستوں کو بھی کھولتی ہے۔ جہاں اجتہاد رُک جاتا ہے وہاں ترقی رُک جاتی ہے۔ لیکن اس کے لیے تنقید کا تنقید ہونا ضروری ہے نہ کہ تنقیص۔ تنقید علمی اور منطقی تجزیہ ہے” ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ یہ حصہ اس تحریر کا نچوڑ ہے۔ تنقید دراصل ایک مثبت ادبی اصطلاح ہے۔ جس کے لغوی معنی ہیں پرکھنا یا کھرے کھوٹے میں تمیز کرنا۔ لفظ تنقید انگریزی اصطلاح Criticism کا مترادف ہے۔ نقد اور انتقاد کے الفاظ بھی اسی مفہوم میں استعمال ہوتے ہیں، بلکہ عربی گرامر کی رو سے یہی درست ہیں لیکن اردو میں اب لفظ تنقید ہی رائج ہے۔ تنقید میں تعریف و توصیف بھی آ جاتی ہے اور تجزیہ و تشریح بھی۔ اختلاف بھی تنقید کا حصہ ہے۔ لیکن “اختلاف برائے اختلاف” تنقید کے زمرہ میں نہیں آتا۔ ادبی تنقید اگرچہ نصاب کا حصہ ہے۔ لیکن روزمرہ کی سماجی، معاشرتی اور سیاسی زندگی کے حوالے سے مثبت اختلاف رائے اور مکالمے کی بنیادی اخلاقیات کو اسکول اور کالج کی سطح پر بھی سلیبس میں شامل کیا جائے تو اس سے نہ صرف تحریر و تقریر بلکہ عام معاشرتی رویوں میں بھی شدت پسندی کم ہو سکتی ہے۔ یہ بڑی عمدہ تجویز ہے جس سے سوسائٹی میں بالخصوص نوجوان نسل میں باہمی ڈسکورس اور مکالمے کی اعلیٰ قدریں فروغ پا سکتی ہیں جو ہر نوع کی ترقی کے لیے ضروری ہیں۔ مثبت تنقید اور اختلاف سے سماجی ہم آہنگی اور اتفاق کا راستہ نکلتا ہے۔

  • 10-03-2016 at 2:51 pm
    Permalink

    Good one

Comments are closed.