جمہوری ثقافت میں جنسی آزادی کا کردار (2)


صرف چند دہائیاں پہلے تک انسان دماغی امراض کے وجود سے بھی ناآشنا تھے۔ دماغی خلل یا عوارض کو شیطان کی کارستانی قرار دیتے تھے۔ 1974 تک خود لذتی کو طب کی کتابوں میں ایک مرض کے طور پہ پیش کیا جاتا تھا۔ ان گنت زندگیاں ہم نے احساس گناہ میں مبتلا کر دیں۔ انسانی تاریخ میں عقلمند لوگوں نے کبھی جنسی امور پر غور و فکر کو غلط نہیں سمجھا۔ زیادہ دور نہ جائیے، لاکھوں اور کروڑوں برس کی تاریخ ہماری نظروں سے اوجھل ہے۔ صرف اڑھائی ہزار برس پہلے کا یونان دیکھ لیجیے۔ یونان کے ادب، فلسفے اور تاریخ پر ایک نظر ڈال لیجیے۔ قدیم عربی شاعری پر ایک طائرانہ نظر ڈالنا مفید ہو گا۔ ہندوستان کی تہذیب میں ایلورا اور اجنتا کے شاہ پاروں پر توجہ دیجیے۔ مولانا رومی کی مثنوی پڑھ لیجیے، شیخ سعدی کی تصانیف پڑھ لیجیے، افریقہ کے رقص، موسیقی اور رسم و رواج پر غور کیجیے، چین کی تاریخ پر ایک نظر ڈالیے۔ کیا انسانی تاریخ کا کوئی حصہ ایسا ہے جس میں انسانوں نے جنسی تلذز میں گہری دلچسپی نہ لی ہو۔ جنسی سرگرمی کو طاقت، اختیار اور اجارے کے زاویوں سے نہ دیکھا ہو؟ کیا قدیم ترین انسانی تاریخ میں جنسی تلذذ کو طبی تحقیق کا مرکز نہیں بنایا گیا؟ کیا جائیداد کی نسل در نسل منتقلی کے عمل سے جنسی اقدار کشید نہیں کی گئیں۔ کیا جنسی لذت پر کچھ گروہوں کا اجارہ قائم نہیں کیا گیا۔ مشرق بعید کے وسیع منطقوں میں عورتوں کے پاؤں زبردستی چھوٹے کرنے کی رسم کیا جنس کی بنیاد پر غلامی کی ایک شکل نہیں تھی۔ کیا ستی کی رسم معاشی بالادستی کا شاخسانہ نہیں تھی؟ کیا انسانوں کو زبردستی جنسی خصوصیات سے محروم کرنا اور آختہ کرنا جنسی خوشی پر اجارے کی ایک صورت نہیں تھا۔ کیا افریقا کے وسیع علاقوں میں عورتوں کے جنسی اعضا زبردستی کاٹنے کی رسم جنسی خوشی کو کچھ انسانوں تک محدود کرنے کی سازش نہیں تھی۔ جنس انسانی زندگی میں ہمشہ سے موجود رہی ہے۔ عصمت فروشی جنسی لذت پر اجارے کی ایک صورت ہے۔ جموری خطوط پر تمام انسانوں کے لئے صنف اور معاشی حیثیت کی تفریق کے بغیر جنسی آزادی کا مطالبہ انسانی مساوات کی طرف ایک اہم قدم ہے۔

انسانی تاریخ میں سیاسی اور معاشرتی اختیار جسمانی قوت کے اصول پر قائم رہا ہے۔ جنگ میں بھاری بھر کم ہتھیار اور زراعت میں جسمانی طاقت کی ضرورت نے عورتوں کو فیصلہ سازی سے بے دخل کیا۔ مشین کی آمد سے جسمانی قوت کا سوال ختم ہو گیا ہے۔ اب معاشی صلاحیت جسمانی قوت پر انحصار نہیں کرتی۔ اسی طرح جنسی فعل کا حمل اور جائیداد کی آئندہ نسلوں کو منتقلی کے معاملات سے گہرا تعلق رہا ہے۔ علاج معالجے کی بہتر سہولتوں کے باعث انسانی آبادی صرف 75 برس کی مدت میں دو ارب سے ساڑھے سات ارب تک جا پہنچی ہے۔ جنسی سرگرمی اور نسل انسانی کی بقا  میں رشتہ غیر اہم ہو چکا ہے۔ اب جنسی فعل کا تولیدی عمل سے تعلق ناگزیر مجبوری کی بجائے انفرادی اختیار کے منطقے میں داخل ہو چکا ہے۔ جنسی فعل اور تولید میں لازم و ملزوم کا رشتہ معاشی اور معاشرتی اسباب کی بنا پر تبدیل ہو رہا ہے۔ ہمیں جنسی سرگرمی کو ایک بنیادی، لاینفک اور قابل احترام انفرادی انسانی آزادی کے طور پر تسلیم کرنا ہو گا۔

انسانی تاریخ میں مطلق العنان بادشاہت اور لامحدود جنسی تلذذ میں کیا تعلق رہا ہے؟ بادشاہ سلامت ہماری بہو بیٹیوں کی عزت کے درپے کیوں رہتے تھے؟ ہمیں کیا تکلیف تھی کہ جاگیر دار، منصب دار، سرمایہ دار اور حاکم وقت ہماری بہنوں اور بیٹیوں کے ساتھ بلا روک ٹوک جنسی تعلق قائم کرنا چاہتا ہے۔ ہمیں کیا مسئلہ تھا کہ ہم جنسی فعل پر اجازت نامے کی شرط عائد کرتے تھے۔ اس میں سادہ اصول یہ ہے کہ جوابدہی سے بالا اختیار کی موجودگی میں فرد کی رضامندی بے معنی تھی۔ ایسی رضامندی کے بغیر دو طرفہ خوشی ممکن نہیں۔ ایسا جنسی تعلق انسانی احترام سے متصادم ہے۔ حاکم اپنی خواہش اور جسمانی ضروریات کو دوسرے انسانوں کی ذات خواہش ضروریات اور حقوق سے ماورا سمجھتا تھا۔ یہ تقسیم ماننے میں ہماری توہین تھی۔ ہمیں جنسی تعلق کے حقیقی اور ناگزیز ہونے سے انکار نہیں تھا لیکن ہم اپنی جھونپڑی میں اپنی مرضی سے جو تعلق قائم کرتے تھے اس میں ہماری خوشی کا سامان تھا۔ اس میں دو طرفہ مساوات کا امکان تھا۔ اس میں ہم بے اختیار نہیں تھے۔ ہم کسی کی دھمکی، جبر اور دھونس کے ماتحت نہیں تھے۔ جنسی سرگرمی کو جبر، دھونس، خوف اور مجبوری سے آزاد کئے بغیر جنسی فعل میں مسرت کا امکان پیدا نہیں ہوتا۔

اسی بارے میں: ۔  کنول جیسے ایدھی اور کاغذ کے پھول

جنسی فعل کو شرمناک قرار دینے سے انسان اپنے جسم اور اس کی ضروریات پر شرمندگی، خجالت اور اور احساس گناہ میں مبتلا ہو جاتے ہیں۔ انسان ناگزیر تقاضے کے تحت جنسی فعل ادا کرتے ہیں لیکن اس فعل کو شعوری طور پر برا تصور کرتے ہیں۔ نتیجہ یہ کہ انہیں اپنے آپ سے گھن آنے لگتی ہے۔ اپنی ذات پر سے ان کا اعتماد اٹھ جاتا ہے۔ وہ دوہری شخصیت کا شکار ہو جاتے ہیں۔ انسان جانتے ہیں کہ دوسرے افراد بھی انہی کی طرح جنسی افعال میں شریک ہوتے ہیں لیکن اس پر بات نہیں کرتے۔ یوں معاشرے پر اخفا، اندھیرے اور منافقت کی چادر تن جاتی ہے۔ اپنی انفرادی اور انتہائی نجی زندگی کا راز اٹھائے پھرنے سے تمام انسانی تعلقات میں دورخی کا زہر گھل جاتا ہے۔ معاشرے میں اچھائی کا معیار یہ قرار پاتا ہے کہ اچھے انسان کو جنس سے لینا دینا نہیں۔ چنانچہ مذہب، سیاست، ثقافت اور فنون سے جنس کو خارج کرنے کی مہم چلائی جاتی ہے۔ یہ ایک ناکام اور لاحاصل مہم ہے کیونکہ انسانی تاریخ میں دربار، فنون اور معبد کبھی جنسی امور سے خالی نہیں رہے۔ جہاں دربار کی بنیاد رکھی گئی، وہیں حرم سرا کا بندوبست بھی کیا گیا۔ جہاں فنون کی سرپرستی کی گئی، وہاں جنس ایک زیریں رو کی طرح موجود رہی۔ جہاں عبادت گاہیں استوار کی گئیں، وہاں جنس ایک سائے کی طرح رینگتی رہی۔ انسانی تاریخ میں جنگ پیداواری عمل کی طرح سے معیشت کا ذریعہ رہی ہے۔ جنگ کے ساتھ ریپ کا تصور بندھا ہے۔ جنگ ہارنے والوں کی ماؤں بہنوں اور بیٹیوں کو مال غینمت بنا لیا جاتا تھا۔ کسی کی دل آزاری مقصود نہیں۔ اپنے ارد گرد نظر ڈال کر مشاہدہ کر لیں۔ قلعے کی فصیل کے عین بالمقابل ایک عبادت گاہ ایستادہ ہے۔ اور چند قدم کے فاصلے پر عصمت فروشی کے آثار بھی مل جائیں گے۔ اس میں قابل غور نکتہ یہ ہے کہ کہ دربار، مذہبی پیشواؤں اور جنگ کے دیوتاؤں نے جنس کو کبھی شفاف طور پر تسلیم نہیں کیا۔ فنون میں البتہ یہ بحث ہمیشہ موجود رہی ہے۔ جنس کو تسلیم جائے تو اس پر سب انسانوں کے لئے مساوی حق کی دلیل پیدا ہوتی ہے۔ اقتدار، طاقت اور اختیار کی آڑ میں کچھ افراد کے لئے لامحدود جنسی لذت کا اہتمام کیا جاتا ہے۔ ایسی جنسی سرگرمی بذات خود معنویت سے خالی ہوتی ہے۔ معنویت تو دو چراغ جلنے سے پیدا ہوتی ہے۔ بھیتر کی روشنی چھینی نہیں جاتی۔ اجارے کا فلسفہ یہی ہے کہ انسانوں کی ایک بڑی تعداد کو خوشی اور مسرت سے محروم کر دیا جائے۔

جمہوریت انسانوں میں رتبے کی مساوات اور حقوق کی برابری کی جدوجہد ہے۔ انسانوں کی آزادی ان کے دائرہ اختیار کی حد بندی بیان کرنا ہے۔ آزادی کے ان دائروں میں کسی کو مداخلت کا حق نہیں۔ خارجی مداخلت سے تحفظ ہی انسان کے احترام کی ضمانت ہے۔ یہ احترام انسانوں کی عزت نفس سے بھی تعلق رکھتا ہے اور ان کے جسم پر ناجائز اختیار کی ممانعت بھی کرتا ہے۔ انسان کی ذات کا احترام اس کے جسم سے منفک نہیں کیا جا سکتا۔ یہاں سے عریانی اور فحاشی میں فرق کی بحث شروع ہوتی ہے۔ یہ بحث آئندہ نشست میں کریں گے۔ سردست پندرہویں صدی کے ایک اطالوی مصور کا ذکر کرتے ہیں۔

فلی پینو لیپی (Filippino Lippi ) 1406ء میں فلورنس شہر میں پیدا ہوا۔ چھوٹی سی عمر میں یتیم ہو گیا۔ بھوکے پیاسے لپی کو چرچ میں داخل کر لیا گیا۔ یہان اسے لاطینی پڑھائی جاتی تھی۔ روح کی اہمیت بیان کی جاتی تھی۔ آخرت سے ڈرایا جاتا تھا۔ گناہ سے نفرت سکھائی جاتی تھی۔ نیکی کا درس دیا جاتا تھا۔ لپی نے محرومی اور بے کسی کے دنوں میں دنیا کا گہرا مشاہدہ کیا تھا۔ وہ تقدس مآب لبادوں میں لپٹی منافقت دیکھ چکا تھا۔ اس نے امرا کے کاشانوں میں موجود حرص، ناانصافی اور استحصال کا مشاہدہ کر رکھا تھا۔ وہ جسم سے بے گانگی کا قائل نہیں تھا۔ اسے دیوی دیوتاؤں اور نیک لوگوں کی شبیہیں مصور کرنے کا کام سونپا جاتا تھا تو وہ انسانی جسم کی خوصورتی سے لگاوٹ کو لکیروں اور رنگوں میں ڈھال دیاتھا۔ اس پر کلیسا کے پیشوا پیر پٹختے تھے کہ تم انسانوں کا جسم دکھا رہے ہو۔ خوبصورتی کیوں دکھاتے ہو؟ ایسا کرنے سے دنیا کی محبت پیدا ہوتی ہے۔ لوگوں کی توجہ آخرت کے امتحان کی طرف دلاؤ۔

اسی بارے میں: ۔  اقبال سے ناراض ایک دیسی دانشور سے انٹرویو

ایک روز پادری فلی پینو لیپی نے رہبانیت ترک کر دی۔ وہ اپنے موقلم کے راستے جسم کے فلسفے تک پہنچ گیا تھا۔ اس نے انسانی محبت میں احترام کا زاویہ دریافت کر لیا تھا۔ فلی پینو لیپی کا انتقال 1469ء میں ہوا۔ گویا فلی پینو لیپی انگریزی کے اولین شاعر جیفری چاسر سے ایک صدی بعد گزرا۔ چاسر کی کتاب کینٹر بری ٹیلز (Canterbury Tales) میں وائف آف باتھ (Wife of Bath) کی کہانی پڑھیے گا۔ باتھ قصبے کی اس بیگم صاحبہ نے پانچ شادیاں تو چرچ میں کی تھیں۔ زندگی سے لطف اٹھانے کے دیگر دروازے بھی کھلے رکھے تھے۔ یہ کہانی مقدس مقامات کے زیارت کے لئے جاتے ہوئے بیگم صاحبہ نے اپنے ہم سفروں کو سنائی تھی۔ یہ کہانی آپ خود سے پڑھ لیجئے گا۔ میرے قلم کو ایسی تاب کہاں۔۔۔۔ جیفری چاسر سے ٹھیک پانچ سو برس بعد رابرٹ براؤننگ (Robert Browning) نے وکٹورین عہد کی منافقت بیان کرنے کے لئے فلی پینو لیپی کا استعارہ استعمال کیا تھا۔  Fra Lippo Lippi کے عنوان سے یہ نظم فن، حسن اور محبت کے بارے میں پادریوں اور مصور کی بحث کا احاطہ کرتی ہے۔ اس نظم میں کچھ ٹکڑے پادری کے ہدایت نامے سے سن لیجئے۔

Faces, arms, legs, and bodies like the true

As much as pea and pea! it’s devil’s-game!

٭٭٭   ٭٭٭

Give us no more of body than shows soul!

٭٭٭   ٭٭٭

Paint the soul, never mind the legs and arms!

٭٭٭   ٭٭٭

Oh, that white smallish female with the breasts,

She’s just my niece . . .

اور اب سنیئے کہ مصور فلی پینو لپی اپنے فن کا دفاع کیسے کرتا ہے۔

Suppose I’ve made her eyes all right and blue,

Can’t I take breath and try to add life’s flash,

And then add soul and heighten them three-fold?

Or say there’s beauty with no soul at all—

٭٭٭   ٭٭٭

If you get simple beauty and nought else,

You get about the best thing God invents:

٭٭٭   ٭٭٭

As it is,

You tell too many lies and hurt yourself:

You don’t like what you only like too much,

You do like what, if given you at your word,

You find abundantly detestable.

٭٭٭   ٭٭٭

I always see the garden and God there

A-making man’s wife: and, my lesson learned,

The value and significance of flesh,

I can’t unlearn ten minutes afterwards.

٭٭٭   ٭٭٭

—The beauty and the wonder and the power,

The shapes of things, their colours, lights and shades,

Changes, surprises,— and God made it all!

٭٭٭   ٭٭٭

This world’s no blot for us,

Nor blank; it means intensely, and means good:

To find its meaning is my meat and drink.

اس مضمون کا پہلا حصہ پڑھنے کے لئے یہاں کلک کیجئے


Comments

'ہم سب' کا کمنٹس سے متفق ہونا ضروری نہیں ہے۔ کمنٹ کرنے والا فرد اپنے الفاظ کا مکمل طور پر ذمہ دار ہے اور اس کے کمنٹس کا 'ہم سب' کی انتظامیہ سے کوئی تعلق نہیں ہے۔