سعودی عرب میں خواتین گاڑی کے علاوہ موٹر سائیکل اور ٹرک بھی چلا سکیں گی


سعودی خواتین

Reuters

سعودی عرب میں ٹریفک قوانین میں ترمیم کا اعلان کیا گیا ہے جس کے تحت خواتین کو گاڑی کے ساتھ اب موٹر سائیکل اور ٹرک تک چلانے کی اجازت ہو گی۔

فرانسیسی خبر رساں ایجنسی اے ایف پی کے مطابق سعودی حکام کا کہنا ہے کہ خواتین کو گاڑیوں کے علاوہ ٹرک اور موٹر سائیکل چلانے کی اجازت بھی ہو گئی۔

سعودی عرب کے ڈائریکٹوریٹ آف ٹریفک نے سرکاری خبر رساں ایجنسی ایس پی اے پر نئے قواعد و ضوابط جاری کیے ہیں جو خواتین پر ڈرائیونگ کی پابندی ختم ہونے پر نافذ ہوں گے یا ان پر عمل درآمد کیا جائے گا۔

سعودی عرب میں خواتین پر لاگو سختیاں آہستہ آہستہ کم

’شوٹنگ کرتے تھے تو لوگ حرام حرام کہتے تھے‘

سعودی عرب اور تایا صبغت اللہ

سعودی عرب میں ’ایک ناقابلِ فراموش رات‘

کیا صوفیہ کو سعودی خواتین سے زیادہ حقوق حاصل ہیں؟

سرکاری خبر رساں ایجنسی کے مطابق ڈائریکٹوریٹ آف ٹریفک کا کہنا ہے کہ’ ہم خواتین کو موٹر سائیکل کے ساتھ ساتھ ٹرک چلانے کی اجازت دے رہے ہیں اور شاہی فرمان میں صاف صاف کہا گیا تھا کہ ڈرائیونگ سے متعلق قوانین مردوں اور خواتین کے لیے برابری کی سطح پر ہوں گے۔‘

ڈائریکٹوریٹ آف ٹریفک کا مزید کہا ہے کہ خواتین ڈرائیورز کے لیے خصوصی نمبر پلیٹس جاری نہیں کی جائیں گی تاہم حادثات یا دیگر ٹریفک خلاف ورزی میں ملوث پائی جانے والی خواتین کے لیے خصوصی سینٹرز بنائے جائیں گے جن کا عملہ بھی خواتین پر ہی مشتمل ہو گا اور ٹریفک خلاف ورزیوں کو دیکھے گا۔

خیال رہے کہ رواں برس ستمبر میں سعودی عرب کے بادشاہ شاہ سلمان نے شاہی فرمان جاری کیا تھا جس میں خواتین کو ملک میں پہلی بار گاڑی چلانے کی اجازت دی گئی ہے۔

شاہی فرمان کے مطابق پابندی ہٹائے جانے سے متعلق یہ حکم 24 جون 2018 تک ہر صورت میں نافذالعمل ہو جائے گا اور اس کے ساتھ شاہی فرمان میں ٹریفک قوانین میں ترمیم کی ہدایت دی گئی تھی۔

سعودی خواتین

Getty Images

اب تک سعودی عرب میں صرف مردوں کو ہی گاڑی چلانے کے لائسنس ملتے تھے اور جو خواتین عوامی مقامات پر گاڑی چلاتی تھیں انھیں گرفتاری اور جرمانے کا خطرہ رہتا تھا۔

سعودی عرب میں خواتین پر لاگو سختیاں آہستہ آہستہ کم ہو رہی ہیں۔

سعودی عرب کے بارے میں مزید پڑھیے

شاہ سلمان کے تین سال میں کیا کچھ بدلا؟

کیا محمد سلمان سعودی عرب کی سب سے طاقتور شخصیت بن چکے ہیں؟

’ڈرائیو کریں گی تو کنواری نہیں رہیں گی‘

ملک کے نظام کے تحت خاندان کے مرد جو کہ عمومی طور پر باپ، بھائی یا شوہر ہی صرف خواتین کو اجازت دے سکتے ہیں اگر وہ پڑھائی کرنا چاہیں یا سفر کرنا چاہیں یا کوئی اور کام کرنا شروع کریں۔

لیکن سعودی عرب میں آنے والی تبدیلیوں کے بعد خواتین کو اگلے سال جون تک گاڑی چلانے کی اجازت مل جائے گی اور اگلے سال سے ہی خواتین کو کھیلوں کے میدان میں جانے کی بھی اجازت مل جائے گی۔

image_pdfimage_print
Comments - User is solely responsible for his/her words


اگر آپ یہ سمجھتے ہیں کہ ”ہم سب“ ایک مثبت سوچ کو فروغ دے کر ایک بہتر پاکستان کی تشکیل میں مدد دے رہا ہے تو ہمارا ساتھ دیں۔ سپورٹ کے لئے اس لنک پر کلک کریں

بی بی سی

بی بی سی اور 'ہم سب' کے درمیان باہمی اشتراک کے معاہدے کے تحت بی بی سی کے مضامین 'ہم سب' پر شائع کیے جاتے ہیں۔

british-broadcasting-corp has 5338 posts and counting.See all posts by british-broadcasting-corp