پیمرا کے چیئرمین ابصار عالم کی تعیناتی کالعدم قرار


Absar Alam, Chairman PEMRA

BBC
درخواست گزار کے مطابق ابصار عالم کو چیئرمین پیمرا تعینات کرنے کے لیے دو مرتبہ اخبار اشتہار ‎جاری کیے گئے تھے

پاکستان کے صوبہ پنجاب میں لاہور ہائی کورٹ نے پاکستان الیکٹرانک میڈیا ریگولیٹری اتھارٹی (پیمرا) کے چیئرمین ابصار عالم کی تعیناتی کالعدم قرار دے دی ہے۔

پیر کو لاہور ہائی کورٹ نے ابصار عالم کی تقرری غیرقانونی قرار دیتے ہوئے 30 روز میں نیا چیئرمین تعینات کرنے کا حکم دیا ہے۔

‎جسٹس شاہد کریم  نے منیر احمد کی درخواست پر محفوظ فیصلہ سناتے ہوئے چیئرمین پیمرا کی تعیناتی کا نوٹیفیکیشن کالعدم قرار دے دیا۔

‏دوسری جانب پیمرا کی جانب سے جاری کردہ ایک مختصر بیان میں بتایا گیا ہے کہ عدالتی فیصلے کے بعد ابصار عالم نے چیئرمین پیمرا کا عہدہ چھوڑ دیا ہے۔

خیال رہے کہ ‎جسٹس شاہد کریم نے 29 نومبر کو دلائل مکمل ہونے کے بعد فیصلہ محفوظ کیا تھا۔

درخواست گزار کے مطابق ابصار عالم کو چیئرمین پیمرا تعینات کرنے کے لیے دو مرتبہ اخبار اشتہار ‎جاری کیے گئے تھے، ‎پہلے اشتہار کے مطابق ابصار عالم چیئرمین پیمرا کے عہدے کے لیے تعلیمی معیار پر پورا نہیں اترتے تھے جبکہ ‎ابصار عالم کو تعینات کرنے کے لیے دوبارہ کم تعلیم قابلیت کا اشتہار جاری کیا گیا۔

درخواست گزار نے عدالت سے استدعا کی تھی کہ چیئرمین پیمرا کی تعیناتی کالعدم قرار دی جائے۔

https://twitter.com/reportpemra/status/942648250443628549

چیرمین پیمرا کی تعیناتی سے متعلق کیس ڈیرھ سال سے زائد عرصہ تک زیر سماعت رہا۔

‎وفاقی حکومت کے وکیل نے درخواست گزار کے الزامات کو مسترد کردیا تھا اور اس دوران پیمرا کے وکیل علی گیلانی نے ابصار عالم کی تعیناتی کا ریکارڈ پیش کرنے کے لیے مہلت طلب کی تھی۔

عدالت نے پیمرا کے وکیل کو ریکارڈ پیش کرنے کے حوالے سے مہلت کی درخواست مسترد کر دی تھی۔

ڈیڑھ سال کیس چلنے کے باوجود چیئرمین پیمرا کی تقرری کا ریکارڈ پیش نہیں کیا گیا جس پر عدالت نے برہمی کا اظہار کرتے ہوئے فیصلہ محفوظ کر لیا تھا۔

image_pdfimage_print

Comments - User is solely responsible for his/her words

اگر آپ یہ سمجھتے ہیں کہ ”ہم سب“ ایک مثبت سوچ کو فروغ دے کر ایک بہتر پاکستان کی تشکیل میں مدد دے رہا ہے تو ہمارا ساتھ دیں۔ سپورٹ کے لئے اس لنک پر کلک کریں

بی بی سی

بی بی سی اور 'ہم سب' کے درمیان باہمی اشتراک کے معاہدے کے تحت بی بی سی کے مضامین 'ہم سب' پر شائع کیے جاتے ہیں۔

british-broadcasting-corp has 4205 posts and counting.See all posts by british-broadcasting-corp