پرنس ہیری اور اوباما؛ ایک شہزادہ سابق جمہوری صدر کا انٹرویو لیتے ہوئے نروس


 برطانوی نشریاتی ادارے بی بی سی ریڈیو کے لیے شہزادہ ہیری ریڈیو میزبان بنے اور انہوں نے سابق امریکی صدر باراک اوباما کا انٹرویو کیا۔ انٹرویو سے قبل دونوں میں ہلکی پھلکی گفتگو ہوئی اور نوک جھونک بھی ہوئی۔

سی این این کی ایک رپورٹ کے مطابق رواں برس ستمبر میں انوکٹس گیمز کے دوران کینیڈا کے شہر ٹورنٹو میں ریکارڈ کیا گیا۔یہ انٹرویو رواں ماہ 27 دسمبر کو نشر کیا جائے گا۔گذشتہ روز اس کا ٹیزر جاری کیا گیا، جس میں سابق امریکی صدر کا انٹرویو لیتے وقت باراک اوباما تو پر اعتماد نظر آئے لیکن شہزادہ ہیری کچھ نروس معلوم ہوئے۔

پرنس ہیری نے اوباما کو مخاطب کرکے اعتراف کیا کہ ‘آپ اس انٹرویو کے حوالے سے پرجوش ہیں اور میں نروس ہوں اور یہ بہت دلچسپ بات ہے’۔جس پر اوباما نے کہا، ‘اگر آپ چاہیں تو میں آپ کا انٹرویو لے لوں گا’۔انٹرویو سے قبل ہلکی پھلکی گفتگو ہوئی اور چھیڑ چھاڑ بھی ہوئی، جب شہزادہ ہیری نے سابق امریکی صدر سے کہا کہ ‘اگر جواب دینے میں تاخیر کی تو ان کا لٹکا ہوا منہ دیکھنا پڑے گا’۔جس پر باراک اوباما نے کہا کہ ‘میں شہزادہ ہیری کی روتی بسورتی صورت ہرگز نہیں دیکھنا چاہتا’۔

شاہی محل کنسنگٹن پیلس نے بھی اس حوالے سے ٹوئیٹ کی اور لکھا کہ یہ انٹرویو سابق صدر کے دفتر میں آخری دن اور صدارت سے ہٹ کر زندگی سے متعلق ان کے منصوبوں خاص کر اوباما فانڈیشن کے گرد گھومتا ہے۔

شہزادہ ہیری اور باراک اوباما میں کافی اچھی دوستی ہے، حال ہی میں کینیڈا میں ہونے والے انوکٹس گیمز کے دوران دونوں بہت خوشگوار موڈ میں نظر آئے تھے۔باراک اوباما 2009 سے 2017 تک امریکا کے 44ویں صدر کے عہدے پر فائز رہے۔ رواں برس جنوری میں عہدہ چھوڑنے کے بعد اب وہ سماجی کاموں میں مصروف ہیں۔رواں برس اکتوبر میں رپورٹس سامنے آئی تھی کہ باراک اوباما اب امریکا کی ریاستالینوائے کی ایک عدالت میں جیوری کے فرائض انجام دیں گے۔

دوسری جانب شہزادہ ہیری آنجہانی برطانوی شہزادی لیڈی ڈیانا کے چھوٹے صاحبزادے ہیں، جنہوں نے حال ہی میں امریکی اداکارہ میگھن مارکلے سے منگنی کی اور دونوں اگلے برس مئی میں رشتہ ازدواج میں منسلک ہوں گے۔

image_pdfimage_print

Comments - User is solely responsible for his/her words

اگر آپ یہ سمجھتے ہیں کہ ”ہم سب“ ایک مثبت سوچ کو فروغ دے کر ایک بہتر پاکستان کی تشکیل میں مدد دے رہا ہے تو ہمارا ساتھ دیں۔ سپورٹ کے لئے اس لنک پر کلک کریں