مرزا اعجاز بیگ

مرزا اعجاز بیگ ہمارے دفتری ساتھی ہیں، نوکری میں ہم نے اُن کے جوہر خوب دیکھے۔ فرماتے کہ نوکری کو اخلاقیات سے الگ رکھو کہ نوکری میں قول و فعل کا تضاد خامی نہیں بلکہ خوبی ہے۔ مزید فرماتے کہ نوکری میں انسان پھول کی مانند ہونا چاہیے، مگر ہر ایرے غیرے پھول کی مانند نہیں بلکہ سورج مکھی کے پھول کی مانند کہ ہر وقت چہرہ سورج کی جانب ہونا چاہیے۔ ہمیں اِن افکار پر سوچ میں پا کر مزیدرہنمائی کی خاطر کہنے لگے کہ دفتر میں اُس مر غی کی مانند ہو جو انڈا دے نہ دے کُڑکُڑ کی مسلسل آوازیں نکال کر سب کو اپنے جانب متوجہ رکھتی ہے۔ سو اسی بنا پر دفتر میں کردار نہیں بلکہ گفتار کے غازی کی شہرت رکھتے تھے۔ زبان کا استعمال مرزا کے مقابل ہم نے کسی کا نہ پایا۔

Read more

علامہ اقبال کو پتلا کر دو

عاصم ایک بدتمیز آدمی تھا اور میں اُ س کا سٹاف افسر۔ دفاتر میں ایسے لوگ آپ کو ملتے ہیں جو اپنے آپ کو عقلِ کلُ سمجھتے ہیں۔ آپ اِن سے معقول بات کرنے سے بھی اجتناب کرتے ہیں کہ نہ جانے مزاج پر کیا گراں گذرے اور بے نقط سننے کو مل جائے- معقولیت…

Read more

بنکاک کی فلائٹ اور آرٹسٹ لوگوں کا پیمانہ

تھائی ایر لائنز کے جہاز نے لاہور سے اڑان بھری ۔ یہ جہاز بنکاک جارہا تھا اور پوری طرح بھرا تھا۔ زیادہ مسافر پاکستانی تھے، کچھ ہی غیر ملکی ہونگے۔ یورپ اور دوسری دور کی منازل کے لیے تھائی ایر لائنز کی پروازیں بنکاک کے راستے سے جاتی ہیں سو اس مسافر کی طرح کئی…

Read more

کتابی افسر، کمانڈو سنتری اور آٹھ سو میٹر کی دوڑ سے سیکھا سبق

وہ فضائیہ کی اکیڈمی سے انجینئرنگ کر کے پاس آوٹ ہوا تو کراچی ملیر پوسٹنگ ہوئی۔ اکیڈمی میں اتھلیٹیکس میں حصہ لیتا تھا، 400 میٹر کی دوڑ خصوصی پسند تھی اور بنیادی طور پر اسی دوڑ کے تعلق سے جانا جاتا تھا۔ 400 میٹر کی دوڑ کوئین آف دی ریسز کہلاتی ہے، اس میں سٹیمنا…

Read more

مامی کے مقدر میں رونا لکھ دیا گیا ہے

آج مامی فرحت پھر رو رہی ہے۔ اب تو یہ معمول ہی بن گیا ہے۔ پتا نہیں کیوں اس کا نام ماں باپ نے فرحت رکھا تھا۔ نام بعض اوقات الٹ اثر رکھتے ہیں۔ مگر کیا نام میں کچھ ہوتا ہے، یا نصیب ہی سب کچھ ہوتا ہے۔ مامی کا نام کچھ بھی ہوتا، اب…

Read more

کان ہیں کہ پرندوں کی چہچہاہٹ کو ترس گئے ہیں۔

آج صبح پودوں کو پانی لگاتے ایک مینڈک کو دیکھا کہ اونچے مقام پر جا پہنچا تھا۔ اُسے دیکھا تو کئی اور منظر نگاہ میں اورخیال سوچ میں آگئے۔ سب سے پہلا خیال یہ تھا کہ کیا یہ مینڈک ہے کہ مینڈکی۔ آج کے فیمینزم کے دور میں مردانہ صیغہ کا واحد استعمال خصوصاً ترقی…

Read more

حلال ذہن میں ہوتا ہے

وہ یونیورسٹی کے آڈیٹوریم سے ماسٹرز کورس کے تین منتخب شرکاء کی تقریریں سن کر ساتھ والے ہال میں داخل ہورہے تھے۔ ارشد کو پہلی تقریر پسند آئی تھی، لیسی کی تقریر۔ اس کورس میں اس کو ویسے بھی لیسی سے گپ شپ کا مزہ رہا تھا۔ اچھی ملنسار سی لڑکی تھی، قدرے بھاری جسم کی…

Read more

ایک فوجی اکیڈمی میں پڑھانے کا تجربہ

قسمت کا لکھا تھا سو ہمیں نسٹ یونیورسٹی کے کالج آف ایروناٹیکل انجینرنگ میں پڑھانے کے لیے تعینات کر دیا گیا۔ یہ کالج پی اے ایف اکیڈمی میں ہے، سو ہمارے تجربے میں اضافہ ہوا۔ اکیڈمی میں استادی در اصل استادوں کا کام ہے، سو اس بنا پر ہم اپنے آپ کو شاگردوں میں شمار…

Read more

غرناطہ کا مدرسہ اور دکھ کے گھاو

چودھویں صدی کے آغازمیں غرناطہ کےحکمران یوسف اول نےغرناطہ کی جامع مسجد کے ساتھ ایک تعلیمی ادارے کی تعمیرکا حکم دیا جسے مدرسہ کے نام سے آج بھی جانا جاتا ہے، گوغرناطہ کی جامع مسجد کومسمارکرکے وہاں چرچ بنادیا گیا ہے۔ موجودہ تصور سے برعکس یہ مدرسہ مذہبی اور دنیاوی دونوں تعلیم دیتا تھا، یہاں…

Read more

اگست 1947 اور ماموں رفیق کی کہانی

بچپن میں یاد نہیں کہ کب ماموں رفیق سے پہلی ملاقات ہوئی تھی۔ وہ میری والدہ اور والد دونوں کے رشتے کے بھائی تھے۔ شاید وہ ہمارے گھر آئے تھے یا ہم اُن کے گھر گئے تھے۔ اُن کے گھر جانے کی ملاقات کے علاوہ بھی وجہ ہوتی، سو اماں ابا عید تہوار سے قبل…

Read more