اگست 1947 اور ماموں رفیق کی کہانی

بچپن میں یاد نہیں کہ کب ماموں رفیق سے پہلی ملاقات ہوئی تھی۔ وہ میری والدہ اور والد دونوں کے رشتے کے بھائی تھے۔ شاید وہ ہمارے گھر آئے تھے یا ہم اُن کے گھر گئے تھے۔ اُن کے گھر جانے کی ملاقات کے علاوہ بھی وجہ ہوتی، سو اماں ابا عید تہوار سے قبل…

Read more

ایم ایم عالم سے ایک ملاقات

یہ 2005 کی بات ہے کہ کراچی جانا ہوا پتہ لگا کہ فیصل بیس میں وہ شخص رہتا ہے جس سے مل کر قرون اولی کے مجاہدوں کی یاد تازہ ہوجاتی ہے۔ نمبر معلوم کر کے فون کیا اور حاضر ہونے کی اجازت طلب کی، اگلے دن کا وقت ملا۔ دو کمروں کے اپارٹمنٹ میں…

Read more

اکیسویں صدی کے طالبعلم کو کن صلاحیتوں پر عبور حاصل کرنا ہوگا؟

پچھلی چند دہائیوں میں ٹیکنالوجی کی ترقی نے انسانی معاشرے پر گہرا اثر ڈالا ہے۔ انٹرنیٹ کی بدولت معلومات کا ایک بے پایاں بہاؤ ہے جو کہ انسانی نسل کو بہا لے جارہا ہے۔ ٹیکنالوجی کے زیرِ اثر معاشروں میں نمایاں تبدیلیاں نظر آرہی ہیں، رہن سہن، لباس، زبان، سماجی تعلقات، سیاست غرض ہر شعبے…

Read more

فلامینکو رقص : اندلس کا نوحہ

جولائی 2018، اندلس سپین سے واپسی کے سفر میں لکھا سٹیج دھندلا تھا، روشنی کم تھی، جان بوجھ کر کم کی گئی روشنی۔ سٹیج کے پیچھے ایک رقاص کی تصویر تھی، قد آور تصویر۔ سیاہ سوٹ کے نیچے سفید قمیص پہنے، بائیں ٹانگ پر کھڑا، دائیں ٹانگ مڑ کر بائیں ٹانگ کے گھٹنے پر آئی…

Read more

ایک  مستعفی فوجی کی یاد میں

2004 کی بات ہے کہ میں اسلام آباد میں رہتا تھا۔ کبھی کبھی قریبی گالف کورس کے ساتھ کی بیرونی سڑک پر دو  بوڑھے میاں بیوی  آہستہ آہستہ چلتے نظر آتے تھے۔ خاتون کوئی یورپی خاتون تھیں۔ میں سمجھا کہ کسی کے والدین ہیں ۔ پھر اکثروہ خاتون اکیلی واک کرتی نظر آنے لگیں ،…

Read more

محبت کے مارے طالبعلم، انٹیگریشن پڑھاتا پیر اور اشفاق احمد

انجیئنرنگ کی پڑھائی کا آخری سال تھا کہ ہمارا ایک ہم جماعت ایک لڑکی کے عشق میں مبتلا ہو گیا۔ وہ تو عشق میں مبتلا ہوا ہی ہم بھی ایک ابتلا میں مبتلا ہو گئے۔ یہ طالبعلمی کا دور ویسے بھی عجب ہوتا ہے، دوستوں کے ساتھ کا۔ اپنے سامان کے ساتھ ساتھ دوسروں کا…

Read more

زرد پھولوں میں ایک پرندہ، رزان اشرف النجار

غزہ 25 میل لمبا اور 4 سے 8 میل چوڑا دنیا کا سب سے کھلا قید خانہ ہے جہاں 18 سے 19 لاکھ فلسطینی قید ہیں، 50 سال سے قید، 10 سال سے ناکہ بند؛خوراک، ادویات سب ناکہ بندی کا شکار۔   اور  ابھی سزا باقی ہے، سزا  و امتحاں ابھی باقی ہے، وقت کے شمار سے ماورا…

Read more

ہجرت اور گھونسلے کے درمیان عمر گزارنے والی ماں

اماں کے ہاتھ میں سلائیاں ہوتیں، مختلف رنگوں کے اون کے گولوں کے ساتھ،  جن کے نرم دھاگے وہ مہارت سےاُن سلائیوں کی مدد سے ایک دوسرے سےجوڑ دیتیں، اُلجھی ہوئی ڈوریں سیدھی کر دیتیں ۔ مختلف رنگ دھاگے ایک دوسرے سے ریشے، طوالت اور ملائمت میں فرق رکھتے -مگر وہ ایک سلائی سے ایک دھاگے…

Read more

موچی دروازہ اور پانی اردو زبان میں

آج پتہ لگا کہ موچی دروازے لاہور میں ایک جلسہ کو پانی سے فیضیاب کیا گیا ہے، مقصد کچھ بھی ہو میدان بھی خوش ہوگا کہ پیاسے کو پانی تو ملا۔ اور اس موقع پر تو پانی خود چل کر پیاسے کےپاس آیا اور شاید فائر بریگیڈ کے سرخ رنگ کی گاڑیوں پر لد کر آیا۔…

Read more

پنسل تراش، ایک علامتی افسانہ

اُس کی نوکری پنسل گھڑتے ہی گزری۔ پنسل گھڑنا اس کی عادت بن گئی تھی۔ ایک ہابی، ایک ایسا ساتھ جس کے بغیر جیا نہ جائے۔ اُس کی دفتری میز کی دراز میں رنگ برنگے پنسل تراش تھے۔ مختلف سائز کے، مختلف تراش خراش کے، اپنے تیز نوکیلے بلیڈوں کے ساتھ۔ اُس سے کوئی بھی…

Read more