سازشوں کے جال میں پھنسی ’’معصوم قوم

خوش قسمتی سے ہم ہوش سنبھالنے سے قبل ہی اس اہم قومی مسئلے سے مکمل طور پر بہرہ ور ہو چکے ہوتے ہیں کہ ’’اس وقت ہماری ریاست ایک انتہائی نازک دور سے گزر رہی ہے، اس لیے ہمیں پوری دنیا میں چار سو پھیلے اپنے دشمنوں کی سازشوں کے خلاف ایک سیسہ پلائی دیوار…

Read more

حرم ِپاک ہی میں خودکشی کیوں؟

پچھلے دس دنوں کے دوران بیت اللہ شریف میں دو افراد نے حرم شریف کی بالائی منزل سے چھلانگ لگا کر خود کشی کرلی۔ ان خود کشیوں سے قریباً ایک سال قبل ایک شخص نے خانہ کعبہ کے قریب خود کو آگ لگا کر خود سوزی کی کوشش بھی کی تھی۔ مذہبی طبقے نے ایسے…

Read more

میری عید کہانی، میرے پاپا کی زبانی

میرا نام عبد اللہ شاہد ہے، تاہم میں اپنا مکمل تعارف اپنی کہانی کی پہلی قسط ’’میری کہانی، میرے پاپا کی زبانی‘‘ میں کروا چکا ہوں، اس لئے اس کو دہرانے کی ضرورت نہیں کیوں کہ بار بار تعارف میرے لئے اذیت کا باعث بنتا ہے۔ آج میں اپنے شب و روز کے چند مزید…

Read more

ظالم یورپ والے ہمیں ویزہ کیوں نہیں دیتے؟

میرے چند قریبی احباب اس غلط فہمی میں مبتلا ہو چکے ہیں کہ دوچار ممالک کی سیاحت کے بعد اب میرے لیے کسی ملک کا ویزہ حاصل کرنا کوئی مسئلہ نہیں رہا جبکہ درحقیقت میں خود بھی برطانیہ کا ایک دفعہ ویزہ حاصل کرنے کے بعد دوسری دفعہ ناکام رہ چکا ہوں۔ میرے دوست اکثر…

Read more

رمضان کے یہ روح پرور نظارے

  کسی بھی معاشرے میں معاشی عدم مساوات ہی سرمایہ دار کے سرمائے میں بے انتہا اضافے کی ضامن ہوتی ہے اس لیے غریب عوام کی معاشی آزادی کسی صورت میں بھی سرمایہ دار کے لیے قابل قبول نہیں ہو سکتی۔ سرمایہ ہر طرح کی اخلاقیات، مذہب یا سرحدوں کی قید سے ماورا ہوتے ہوئے…

Read more

کچھ تو رحم کریں!

اگر ریاست عوام کے تحفظ کی بنیادی ذمہ داری پوری نہیں کر سکتی تو پھر عوام کو باقی بنیادی سہولتوں سے کیا سروکار رہ جائے گا۔ حکمرانوں کے ظالمانہ طرز حکومت کے تسلسل نے عوام کو اس چیز پر مجبور کر دیا ہے کہ عوام کو اپنا کسی بھی قسم کا بنیادی حق دھرنا دیئے…

Read more

ایک مزدور باپ کا اپنے بچے سے مکالمہ

ابا تم آج کام پر کیوں نہیں گئے؟ مجھے بہت زور کی بھوک لگی ہے، مجھے فوراً کھانا چاہیے، اماں نے کہا ہے کہ گھر پر کھانے کے لیے کچھ نہیں ہے۔ بیٹا آج یکم مئی ہے اور اس دن تمام دفاتر اور مارکیٹیں بند ہوتی ہیں میں آج مزدوری کے لیے کہاں جاتا۔ ابا…

Read more

اوئے خبردار! روٹ لگا ہوا ہے

ہوش سنبھالتے ہی تم یہ سنہرے خواب دیکھنا شروع کردیتے ہو کہ تمہاری ریاست فوری طور پر ایک جدید فلاحی ریاست میں بدل جائے جہاں مفت رہائش، تعلیم، علاج اور پھر ریٹائرمنٹ کے بعد آسودہ زندگی تمہارا مقدر ہو۔ ساتھ ہی ساتھ تمہارے بچوں کے روشن مستقبل کی حقیقی ذمہ داری بھی ریاست پر ہو…

Read more

کتاب کی آپ بیتی

23 اپریل کو اقوام متحدہ نے کتاب کا دن مقرر کیا ہے۔ اس کے حوالے آج میں کتاب کی آپ بیتی آپ کے گوش گزار کرنا چاہتا ہوں۔ میں ایک کتاب ہوں۔ ایک محتاط اندازے کے مطابق پہلی دفعہ مجھے تقریباً تین ہزار سال قبل بنایا گیا تھا۔ پہلے میں کئی ہزار سال تک جیتی…

Read more

میری کہانی، میرے پاپا کی زبانی

میرا نام عبداللہ شاہد ہے۔ جسمانی لحاظ سے میری عمر گیارہ سال ہے لیکن ذہنی اعتبار سے میرا دماغ تین سے پانچ سال کی درمیانی عمر کا ہے اور شاید تمام عمر ایسا ہی رہے گا۔ میں پیدائشی طور پر اپنے پیروں پر کھڑا نہیں ہو سکتا، چل نہیں سکتا اور بول بھی نہیں سکتا…

Read more