’’ازخود‘‘ مسیحا اور منگو کوچوان

کافی اشتیاق سے میرے کئی دوست جیبوں میں پتھر جمع کرتے ہوئے 17جنوری 2018کا انتظار کررہے تھے۔ اس دن جو ’’تبدیلی‘‘ رونما ہوئی ہے مجھے اس کی وضاحت کی ضرورت نہیں۔اس ’’تبدیلی‘‘ کے بعد مگر ذرا سکون وقرار کی توقع باندھی جارہی ہے۔ میرا حال مگر اس ضمن میں سعادت حسن منٹو کے شہرئہ آفاق…

Read more

یہ تو بس رونق لگانے کی تیاری

1977ء کی انتخابی مہم کے دوران ایئرمارشل اصغر خان مرحوم نو سیاسی جماعتوں پر مشتمل اتحاد کے اہم ترین رہ نمائوں میں سے ایک تھے۔ اپنی تقاریر میں وہ ذوالفقار علی بھٹو کو ’’کوہالہ کے پل‘‘ پر پھانسی پر لٹکانے کا وعدہ کرتے رہے۔ انتخابی نتائج آجانے کے بعد پاکستان قومی اتحاد کو مگر اقتدار…

Read more

پی ٹی آئی حکومت کی ’’وکھری راہ‘‘

صبح اُٹھ کر اخبار کے لئے لکھے کالم پوسٹ کرنے کے لئے انٹرنیٹ کھولا تو وزیر اعظم عمران خان صاحب کی جانب سے آئے ایک ٹویٹ پر نظر پڑگئی۔ اس ٹویٹ کے ذریعے انہوں نے یاد دلایا کہ قومی اسمبلی کا اجلاس منعقد کرنے کے لئے عوام کے دئیے ٹیکسوں سے بے تحاشہ رقوم خرچ…

Read more

عمران خاں کے چاہنے والے بھی ان سے مایوس کیوں ہیں

نام کیا لینے۔ ریگولر اور سوشل میڈیا کی بھرمار کی وجہ سے لوگ خوب جانتے ہیں کہ کوئی صحافی درحقیقت کیا سوچتاہے۔ ویسے بھی جدید دور کی صحافت میں کتابوں میں بیان ہوئی ’’غیر جانب داری‘‘ برقراررکھنا ممکن نہیں رہا۔ اندھی نفرت وعقیدت میں تقسیم ہوئے معاشرے میں ’’حقائق کا تجزیہ‘‘کسی ایک فریق کی حمایت…

Read more

IMF کی معاونت کے بغیر بھی رہ سکتے ہیں مگر…

اکتوبر1996کا غالباََ تیسرا ہفتہ تھا۔ محترمہ بے نظیر بھٹو کی دوسری حکومت کا تیسرا سال تھا۔اس حکومت کے بار ے میں ’’سب اچھا‘‘ کا ماحول چل رہا تھا۔ ان دنوں کے آئین کے آرٹیکل58-2(B)کے تحت قومی اسمبلی کو توڑنے کا اختیار رکھنے والے صدر محترمہ کے ’’فاروق بھائی‘‘ تھے اور آرمی کے سربراہ جنرل جہانگیر…

Read more

کہیں سے ’’پیلی جیکٹوں‘‘ والے نمودار نہ ہو جائیں

تحریک انصاف کے چند وفاقی اور صوبائی وزراء نے اپنے سیاسی مخالفین کو خوب لتاڑنے کے بعد اب صحافیوں کو راہِ راست پرلانے کے لئے جو زبان اختیار کررکھی ہے، میں اس کے بارے میں ہرگز حیران و پریشان نہیں ہوں۔ امریکی صدر ٹرمپ کا رویہ بھی ایسا ہی ہے۔ وہ اپنے میڈیا کو مسلسلFake…

Read more

سوال ہی سوال ہیں۔ جواب ندارد

سچ تو یہ ہے کہ سیاست ہماری اس وقت شدید جمود کا شکار ہے اور یہ حقیقت اتنی حیران کن بھی نہیں۔2014ء کے دھرنے کی بدولت ہمارے ہاں تاج اچھالنے اور تخت گرانے کا ہنگامہ شروع ہوا۔ اس کے بعد پانامہ ہوگیا۔ ان سب ہنگاموں کی بدولت حقیقی نقصان سیاسی عمل اور جماعتوں کو ہوا…

Read more

سندھ حکومت تحریک ا نصاف کا ’’سومنات‘‘

جعلی بینک اکائونٹس کی تحقیقات کے لئے سپریم کورٹ کے حکم سے قائم ہوئی JIT کے حوالے سے ہمارے ہاں کئی مہینوں سے جو ’’داستانِ امیر حمزہ‘‘ چل رہی ہے،اس میں پیر کے روز ایک نیا موڑ آیا ہے۔ معزز بنچ کی جانب سے آئے چند ریمارکس کی وجہ سے نظر بظاہر بلاول بھٹو زرداری…

Read more

’’انکل سام کے خطوط‘‘ والا منٹو

سیاست پر لکھنے کو ان دنوں جی نہیں چاہتا۔محدودے چند موضوعات ہیں۔ ان پربھی لیکن کوئی ٹھوس پیش رفت نہیں ہوتی۔ ٹی وی اور سوشل میڈیا پر انحصار رہے تو ’’حرکت تیز تر…‘‘ والا معاملہ ضرور نظر آتا ہے مگر سفر آہستہ آہستہ والے تاثر کے ساتھ۔سوشل میڈیا کی وجہ سے ان دنوں باقاعدہ کالم…

Read more

ملک حاکمین: وفاداری بشرط استواری کی مثال

کئی برس وطن سے دور رہنے کے بعد محترمہ بے نظیر بھٹو اپریل 1986 میں وطن لوٹیں تو میں ان دنوں اسلام آباد سے شائع ہونے والے انگریزی روزنامے ’’دی مسلم‘‘ کا ایک مشقتی رپورٹر تھا۔ معقول TA/DAکے بغیر میں محترمہ کی لاہور آمد کے بعد سے پنجاب کے ہر شہر اور قصبے میں جانے…

Read more