حجلہ عروسی میں لب بستہ دلہن اور محاذ جنگ پر کامرانی کی لب ریز دعا

ہم فوج میں کپتان ہوئے تو گھر والوں نے ہماری شادی کی ٹھان لی، مگر بڑے بھائیوں نے عجب ظلم ڈھائے، کہ ایک نے شادی کا رِسک ہم پہ لینے کے بعد، اپنی شادی کا فیصلہ کرنے کا ارادہ ظاہر کیا اور دوسرے نے شادی نہ کرنے کا اعلانِ عام سنا دیا۔ ہم چھوٹے تھے…

Read more

حور اور لنگور کی تصویر

چھوٹی سی بیٹی کھیل رہی تھی۔ شوہر نے بیوی سے کہا دیکھو ایک دن کو ئی لنگور دولہا بن کے آئے گا اور اسے بیاہ کر لے جائے گا۔ بیوی نے بہت پیار سے کہا ”آپ کو یاد ہے ایک دن آپ بھی یونہی دولہابن کے آئے تھے“ لیکن جب یہ لمحہ آتا ہے۔ رشتے…

Read more

پری پیڈ میٹر۔۔۔۔۔۔نان ڈیجیٹل عوام

’’ ابے یار بس تو دیکھ تیرا جگر تیرے لئے کیا کرتا ہے ۔ایک بار اپنے بھائی کو حکومت میں آلینے دے پھر دیکھنا گنے کے کھیت میں چنے بھی اْگنے لگیں گے،چاولو ں کی فصل بغیر پانی کے لہلہائے گی،، یہ بات اس نے نجانے کس بے اعتمادی سے کہی تھی ۔ مگر کوئی…

Read more

حکومت کی بْو ہوتی ہے

’’حکومت کی بْو ہوتی ہے۔ جو پھیلتی رہتی ہے۔ مشامِ جاں میں سوئیوں کی طرح چبھتی ہے۔ شریانیں اڈھیر دیتی ہے۔ نسلیں پھاڑتی ہے۔ سوچ مفلوج کرتی ہے۔ ضمیر کا گلا گھونٹتی ہے۔ قوی مضحمل کرتی ہے۔ حکومت مردار جسم کی طرح ملک کے تمام شہروں، گاؤں قصبو ں، کھلیانو ں، صحراؤں، پہاڑوں، ندیو ں،…

Read more

میرے پاپا سُپر ہیرو ہیں

 ”میرے پاپا سُپر ہیرو ہیں“ میری پانچ سالہ بھتیجی نے جب یہ بات مجھے کہی تو میری نس نس تک جیسے مٹھاس اتر گئی۔ آس پاس جیسے مہک پھیل گئی ۔ کتنا جادو ہو تا ہے ناں محبت کے لفظوں میں۔ میں نے مسکرا کر اسے کہا کہ "آپ کو پتا ہے آپ کے پاپا…

Read more

کْتے سو رہے تھے

بارش مسلسل ہو رہی تھی ۔اور مزار پہ کتوں نے پناہ لے رکھی تھی ۔ رات کا وقت تھا اس لئے زیادہ تر کْتے سورہے تھے۔ سن اور پڑھ رکھا تھا کہ انسا ن کی موت کا وقت اس کی زندگی کا آئنہ ہو تا ہے۔ سمجھنا بہت مشکل تھا ۔ لیکن وقت نے سمجھا…

Read more

انور مسعود اور صدیقہ انور ۔۔۔ کھلے دریچے میں بلبل کہانی

  ساون کا مہینہ تھا۔ راولپنڈی اسلام آباد میں خوب بارش ہو رہی تھی۔ ٹھنڈی ہوائیں ہر سو رقصاں تھیں، بادل گرج چمک رہے تھے۔ وقت مسافروں کی طرح سب کچھ خامشی سے دیکھ رہا تھا۔  میں نے مقررہ وقت پہ محترمہ صدیقہ انور کو فو ن کیا۔ وہ محبت بھرے لہجے میں بولیں ”مجھے…

Read more